ترنمول نے نوٹ بند ی پر صدر سے مداخلت کی اپیل کی

Source: S.O. News Service | Published on 11th January 2017, 11:31 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 11 /جنوری(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)نوٹ بند ی کو لے کر ترنمول کانگریس کے وفد نے بدھ کو صدر پرنب مکھرجی سے ملاقات کی۔انہوں نے صدر مکھرجی سے اس معاملہ میں مداخلت کرنے کی اپیل کی ہے۔صدر سے ملاقات کے بعد ڈیریک او برائن نے کہا کہ ہم نے صدر سے ملاقات  کرکے ان سے نوٹ بند ی کی ’سپر ایمر جنسی‘کو روکنے کی اپیل کی ہیں۔گزشتہ کئی دنوں سے ترنمول کانگریس کے 34ممبران پارلیمنٹ سمیت تمام لیڈران نوٹ بند ی کے فیصلے کے خلاف دہلی میں دھرنا دے رہے ہیں۔ٹی ایم سی لیڈران اسی طرح کا احتجاج بنگال، اڑیسہ، پنجاب، منی پور، تریپورہ، آسام اور جھارکھنڈ میں بھی کررہے ہیں۔پارٹی نے اپنے بیان میں کہا کہ نوٹ بند ی سے لوگوں کو جو پریشانی ہو رہی ہے، اس کی مخالفت یہ احتجاج کئے جا رہے ہیں۔سی بی آئی کی طرف سے مبینہ روزویلی چٹ فنڈ گھوٹالے میں پارٹی کے ایم پی تاپس پال اور سدیپ بندوپادھیائے کی گرفتاری کے بعد ترنمول کانگریس نے مودی حکومت کی نوٹ بند ی مہم کے خلاف اپنا احتجاج مزید تیز کر دیاہے۔
 

ایک نظر اس پر بھی

گؤ کشی کے نام پر ایک اور مسلمان کا قتل: خوفناک ویڈیووائرل،65سالہ معمر شخص کو بے رحمی سے پیٹتے ہوئے نظر آرہے ہیں گؤ اتنگی، 5دن میں صرف 2/افراد گرفتار 

ہاپوڑ میں مبینہ گؤ کشی کے الزام میں قاسم نامی شخص کا پیٹ پیٹ کر قتل کردیاگیا تھا جبکہ ایک دوسرا شخص سمیع الدین اس واقعہ میں زخمی ہوگیاتھا۔ اب اس واقعہ سے ملتا ہوا ایک اور ویڈیو وائرل ہورہاہے۔ اس ویڈیو میں بھیڑ کا خوفناک چہرہ دیکھا جاسکتا ہے۔ وائرل ہورہے اس ویڈیو میں 65سالہ معمر ...

پہلی بار دورۂ جموں پر امیت شاہ کے بڑے بڑے بول ، علیحدگی کا ٹھیکرا کانگریس کے سر پھوڑا،حلیف حکومت کے باوجودمفتی سرکار کو ناکام کہا 

آج جن سنگھ کے بانی ڈاکٹر شیاما پرساد مکھرجی کی برسی پر بی جے پی نے جموں میں بڑی ریلی کی جسے امت شاہ نے خطاب کیا۔ امت شاہ نے کہا کہ کانگریس بتائے کہ ان کی پارٹی اور لشکر میں کیا تعلق ہے کیونکہ کانگریس لیڈر غلام نبی آزاد کا بیان آتے ہی لشکر نے اس کی حمایت کی تھی ۔

سری نگر میں انٹرنیٹ خدمات بحال، اننت ناگ، پلوامہ میں پابندی برقرار 

سری نگر میں آج موبائل انٹرنیٹ سروس بحال کر دی گئی۔ اگرچہ اننت ناگ اور پلوامہ اضلاع میں اس پر لگی پابندی ابھی جاری رہے گی اس سے پہلے کل قانون اور نظام برقرار رکھنے کے لئے احتیاط کے طور پر ان کی خدمات کو معطل کر دی گئی تھی۔