ٹیپو سلطان کا کَنّڑا حکم نامہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 12th November 2017, 11:11 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،11/نومبر(ایس او نیوز)ٹیپو جینتی تقریبات کو لے کر بعض حلقوں کی طرف سے ٹیپو سلطان پر یہ الزام بار بار عائد کیا جاتا رہا ہے کہ وہ کنَّڑا دشمن تھے۔تاریخوں میں یوں تو ذکر آتا رہا ہے کہ ٹیپوسلطان کَنّڑا سے خوب اچھی طرح واقف تھے لیکن اس دعوے کی تائید میں کوئی ثبوت ابھی تک پیش نہیں کیا گیا تھا۔اس سلسلے میں پروفیسر م ن سعید صاحب نے اپنی تحقیق کے ذریعے یہ معلوم کر لیا ہے کہ ٹیپو سلطان نہ صرف یہ کہ کَنّڑا سے واقف تھے بلکہ انہوں نے کَنّڑا زبان میں سلطانی احکامات و فرامین بھی جاری کئے تھے۔ ٹیپو سلطان کے دربار سے اس طرح کا ایک حکم نامہ کَنّڑا زبان میں دریافت ہوا ہے جو سلطانی عہد میں قائم کئے ہوئے ذخیرہ گھروں کے اہلکاروں کی تنخواہوں کی تفصیل پیش کرتا ہے۔ اس کَنّڑاحکم نامے کا عنوان ہے۔حکم نامہ بنامِ داروغہ و متصدیانِ حال و ااسقبال تعلقہ اُگرانا۔یعنی یہ حکم نامہ تعلقہ ذخیرہ گھروں کے داروغان و متصدیان کے نام جاری کیا جاتا ہے۔یہ حکم نامہ قدیم کَنّڑا میں تحریر کیا گیا ہے جسے موڈی کَنّڑا کہا جاتا ہے اور تین صفحات پر مشتمل ہے۔پروفیسر م ن سعید نے مو؛ی کنّڑا کے ماہرین سے مل کر اسے جدید کنّڑا میں منتقل کیا اور ٹیپو جینتی کے موقع پر وزیرِ اعلیٰ سدّرامیّا کو پیش کیا۔اس موقع پر وزیرِ انفرا اسٹرکچر و حج جناب روشن بیگ صاحب اور جناب وزیر جناب ایچ کے پاٹل موجود تھے۔وزیرِ اعلیٰ نے اس کی بڑی ستائش کی اور کہا کہ یہ ثبوت ہے اس حقیقت کا کہ ٹیپو کنّڑا جانتے بھی تھے اور سرکاری امور میں اس کا استعمال بھی کرتے تھے۔اس کے ہوتے بی جے پی کے سارے پروپیگنڈے کا جھوٹ ظاہر ہو گیا ہے۔ٹیپو جینتی کی تقریب کے دوران پروفیسر م ن سعید نے یہ حکم نامہوزیرِ اعلیٰ کو فریم کرواکر پیش کیا۔مذکورہ حکم نامہ ایشیاٹک سوسائٹی، کولکاتا کے ذخیرۂ مخطوطات میں موجود ہے اور اس کا نمبر PSC 1686ہے۔پروفیسر سعید کا کہنا ہے کہ عہدِ ٹیپو میں کنّڑا کے سرکاری استعمال کی مزید شہادتوں کے بارے میں ان کی تحقیق جاری ہے اور ان سب کو یکجا کرکے شائع کیا جائے گا۔

ایک نظر اس پر بھی

ضمنی انتخابات کے لئے انتخابی مہم زوروں پر

پانچ حلقوں کے ضمنی انتخابات کے لئے انتخابی مہم دن بہ دن شدت اختیار کرتی جارہی ہے۔ شیموگہ منڈیا اور بلاری لوک سبھا حلقوں اور رام نگرم اور جمکھنڈی اسمبلی حلقوں کے لئے کانگریس جے ڈی ایس اور بی جے پی اپنے اپنے امیدواروں کی کامیابی کے لئے ایڑی چوٹی کا زور لگارہے ہیں۔

کوئلے کی فراہمی نہ ہونے کے سبب بیشتر پاور پلانٹوں میں کام بند، دیوالی تہوار سے ریاست میں لوڈ شیڈنگ کا امکان

روشنیوں کا تہوار کہلانے والے دیوالی کااہتمام کرناٹک میں اندھیروں کے ساتھ کرنے کے خدشات پیدا ہوچکے ہیں، کیونکہ ریاست میں بجلی کے ترسیل کے اہم ترین ذرائع سمجھے جانے والے تھرمل پاور پلانٹس میں بجلی کی پیداوار کے لئے درکار کوئلہ نہیں ہے۔

کابینہ میں ردوبدل کا موضوع پھر ابھرنے لگا، 6؍ نومبر کوراہل گاندھی کے ساتھ ریاستی قائدین کی میٹنگ

ضمنی انتخابات کے بعد ریاستی کابینہ میں ردوبدل اور سرکاری بورڈز اور کارپوریشنوں کے لئے چیرمینوں کے تقرر کے واضح اشاروں کے درمیان کانگریس اعلیٰ کمان کی طرف سے ریاستی قائدین کو پولنگ کے فوراً بعد دہلی آنے کی ہدایت دی گئی ہے۔