بھٹکل میں حضرت ٹیپو سلطان ؒ جینتی : ٹیپو سے دشمنی  ملک سے دشمنی کے مترادف ہے: مولانااقبال نائطے ندوی

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 10th November 2018, 7:39 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بھٹکل:10؍نومبر (ایس او نیوز) 17-18صدیوں کی جاہلیت ، مظلومی ،لاچاری اور بے بسی کو دور کرتےہوئے میسور اور اس کی ریاست کے عوام کو خود مختار، بہادر اورخود کفیل بنانے والے شیر میسور حضرت ٹیپو سلطان ؒ اس ملک کے مایہ ناز فخریہ سپوت ہیں۔ آج ان کی جینتی منائی جارہی ہے تو وہ کسی حکومت یا پارٹی کا دیا ہوا حق نہیں ہے بلکہ ٹیپو ایک زندہ شخصیت ہے  ٹیپو کی جینتی منانا صرف ایک قوم یا صوبے کے لئے نہیں بلکہ پورے ملک کے لئے فخریہ مقام ہے۔ جامعہ اسلامیہ بھٹکل کے استاذ المحترم مولانا محمد اقبال نائطے ندوی نے ان خیالات کا اظہارکیا۔

وہ یہاں 10نومبر 2018بروز سنیچر کو نوائط کالونی کے خوشحال شادی ہال میں تعلقہ انتظامیہ ، تعلقہ پنچایت، بلدیہ اور پٹن پنچایت جالی کے زیرا ہتمام مشترکہ طورپر منعقدہ حضرت ٹیپو سلطان ؒ یوم ِ پیدا ئش پروگرام میں مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے پُرمغز و اثر انگیز خطاب فرما رہے تھے۔ مولانا نے اپنے مختصر خطاب میں قرآن و احادیث کے حوالوں سے کہاکہ جو اپنی سرزمین ، اپنی جان، اپنے مال اور اپنے خاندان کی حفاظت کے لئے جان قربان کرتاہے وہ شہید کہلاتاہے اور شہید ہمیشہ زندہ رہتاہے، اس معنی میں  ٹیپو نے اپنی جان، مال، سلطنت کے ساتھ ساتھ اپنی اولاد کو بھی اس ملک کے لئے قربان کیا ہے وہ ہمیشہ زندہ رہے گا۔

مولانا نے کہاکہ حضرت ٹیپو سلطان ؒ  کا بھٹکل سے بھی ایک خاص تعلق رہاہے اس معاملےمیں کوئی جینتی منائے یا نہ منائے بھٹکل والوں کو ضرور منانا چاہئے۔ تاریخ کے پنوں کو پلٹتے ہوئے مولانا نے کہاکہ انگریزوں نے کسی مسلمان ، ہندو کو نہیں لوٹا بلکہ پورے  ملک کو لوٹا ہے انہی انگریزوں کے خلاف سینہ تان کے کھڑے ہوکر دانت کھٹے کرنے والا ٹیپو ایک سچا محب وطن ہے۔اور اگر  کوئی ٹیپو سے دشمنی رکھتا ہے وہ ملک کا دشمن ہوگااور ملک کے لئے  ہندو ہویا مسلم جس  کسی نے بھی  قربانی دی ہے  ملک سے وفاداری کی ہے ہم ان تمام سے محبت کرتے ہیں۔ مولانا نے گاندھی جی کی تحریر کا حوالہ دیتے ہوئے کہا  ٹیپو سلطان  ایک روادار مسلمان تھا، شرنگیری مٹھ اور ہندو برادری کےساتھ جو رویہ ٹیپو کا ہے وہ تاریخ کا ایک سنہر ا باب ہے۔ مولانا نے کہاکہ ٹیپو صرف مسلمانوں کا نہیں تھا بلکہ ہرایک ہندو، عیسائی ، بے کس،  بے بس ،مظلوم اور ہر ہر انسان کا تھا وہ  متعصب نہیں عدل پرور بادشاہ تھا۔ ٹیپو کے دورمیں یہاں مسلمانوں سے زیادہ ہندوآبادی تھی ان کے ساتھ بہتر برتاؤ کرتے ہوئے وہ  وقت  کا مثالی حکمران   تھا۔ مولانا نے زور دے کر کہاکہ ٹیپو نے  کسی ہندو یا مسلم  کو قتل نہیں کیا بلکہ ملک کے  باغیوں کو قتل کیا جن میں ہندو بھی تھے مسلمان بھی ، غرض  جو بھی ملک کی سلامتی ، حفاظت اور ترقی کے لئے روڑہ بنا اس کو قتل کیاکیونکہ وہ ایک سچا محب وطن تھا۔اس کے ساتھ ٹیپو نے سماجی ، صنعتی ، فوجی ،زرعی سمیت کئی ایک میدانوں میں ایسے کارنامے انجام دئیے ہیں جن سے آج بھی استفادہ کیا جارہاہےمولانا نے کہاکہ ٹیپو کی جینتی کو سیاسی مسئلہ نہ بنائیں دراصل اس وقت ملک سپر پاور کی حیثیت رکھتاہے اس کو کمزور کرنے اور توڑنے اور ترقی کی راہوں میں خلل پیدا کرنے  کے لئے  ہندو مسلم میں دشمنی پیدا کرنےکی کوشش کی جارہی ہے ہم تمام متحد رہتے ہوئے اس ملک کی ترقی میں لگے رہیں گے تو ہی ملک ترقی کرنےکاخیال ظاہر کیا۔

کنڑا کے مشہور ادیب اور موظف پروفیسر شری پاد شٹی نے کنڑا میں ٹیپو سلطان کی سیرت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہاکہ ٹیپو سلطان  اپنے ضمیر کو گواہ بناتے ہوئے انصاف کی بنیاد پر حکومت کی ہے۔ موت سے خوف نہ کھاتے ہوئے اپنے بچوں کو تک رہن میں رکھنے کے بعد بھی غم کی پرواہ نہ کی اور ہمت و حوصلہ سے انگریزوں کا سامنا کیا۔ اپنی حکمرانی کو بچانے کے لئے دوسرے راجاؤں کی طرح ٹیپو نے بھی پالیسی اپنائی ہوگی مگر ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ وہ کسی دھرم، نسل یا ذات کے خلاف نہیں تھی۔ ٹیکس کے متعلق نئی پالیسی، نئے سکوں کا چلن کرتےہوئے اپنی حکمرانی کو بہتر سے بہتر منظم کرنے کا سہرا ٹیپو کا ہے۔ وہ ایک ماہر زبان تھا جس کو قریب 16زبانوں پر عبور تھا۔

 ضلع پنچایت کی صدر جئے شری موگیر نےٹیپو جینتی پروگرام کا دیا سلائی کے ذریعے افتتاح کرنےکے بعد اپنے خیالات کااظہار کیا۔ ڈائس پر بھٹکل کے اسسٹنٹ کمشنر ساجد ملا، تحصیلدار وی این باڈکر، ڈی وائی ایس پی ویلنٹائن ڈیسوزا، بھٹکل بلدیہ صدر محمد صادق مٹا، جالی پنچایت صدر آدم پنمبور، ضلع پنچایت ممبر سندھو بھاسکرنائک، تعلقہ پنچایت آفیسر جی ایم مرگوڈ، بلدیہ چیف آفیسر وینکٹیش ناؤڈا، جالی پنچایت چیف آفیسر وینوگوپال شاستری ، مجلس اصلاح وتنظیم کے نائب عنایت اللہ شاہ بندری ، جنرل سکریٹری محی الطاف کھروری ، محمد میراں  صدیق، عبدالعظیم ، محمد شفیع وغیرہ موجود تھے۔ تعلیمی وسائل آفیسر یلما نے استقبال کیاتو اقلیتی محکمہ کے آفیسر شمس الدین شیخ نے شکریہ اداکیا۔ استاد سریش آچاریہ اور پرمیشور نائک نے نظامت کی۔ پروگرام میں اسکولی طلبا کے علاوہ کثیر لوگ شریک تھے۔

 

ایک نظر اس پر بھی

لوک سبھا انتخابات؛ اُترکنڑا میں کیا آنند، آننت کو پچھاڑ پائیں گے ؟ نامدھاری، اقلیت، مراٹھا اور پچھڑی ذات کے ووٹ نہایت فیصلہ کن

اُترکنڑا میں لوک سبھا انتخابات  کے دن جیسے جیسے قریب آتے جارہے ہیں   نامدھاری، مراٹھا، پچھڑی ذات  اور اقلیت ایک دوسرے کے قریب تر آنے کے آثار نظر آرہے ہیں،  اگر ایسا ہوا تو  اس بار کے انتخابات  نہایت فیصلہ کن ثابت ہوسکتےہیں بشرطیکہ اقلیتی ووٹرس  پورے جوش و خروش کے ساتھ  ...

بھٹکل میں بی کے ہری پرساد کا بی جے پی اور مودی پر راست حملہ، کہا؛ پسماندہ طبقات کومزید کمزور کرنے کی سازش رچی جارہی ہے

بی جے پی بھلے ہی اپنے آپ کو اقلیت مخالف پارٹی کے طور پر پیش کرتی ہو، مگر  دیکھا جائے تو یہ پارٹی حقیقتاً پسماندہ طبقات، دلت اور ادیواسیوں کو  مزید  کمزور کرنے کی سازش میں لگی ہوئی ہے اور صرف ایک طبقہ کو برسراقتدار پر لانے میں کوشاں ہے۔ یہ بات  آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی ...

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو آننت کمار ہیگڈے کو ہرگز ووٹ نہ دیں؛ بھٹکل میں ماہی گیروں سے پرمود مدھوراج کی اپیل

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو  آپ کو چاہئے کہ  ماہی گیروں کی پرواہ نہ کرنے والے بی جے پی اُمیدوار آننت کمار ہیگڈے  کو ہرگز ووٹ  نہ دیں۔ ملپے سے نکلی سات ماہی گیروں پر مشتمل بوٹ لاپتہ ہوکر  پانچ ماہ ہوچکے ہیں مگر مرکزی وزیر آننت کمار ہیگڈے کو ماہی گیروں کی پرواہ ہی نہیں ہے۔ ...

منگلورو میں ایک عجیب سانحہ۔بوتھ کے آخری ووٹر نے ووٹ دینے کے بعد لی آخری سانس

پاجیرو گاؤں کے پانیلا میں ایک شخص نے پولنگ بوتھ میں اپنا ووٹ ڈالنے کے بعد گھر لوٹتے ہی دم توڑ دیا۔پانیلا کے رہنے والے والٹر ڈیسوزا(۴۰سال) گردے کی بیماری میں مبتلا تھاجس کے لئے وہ بہت عرصے سے زیرعلاج تھا۔

لوک سبھا انتخابات: اُترکنڑا ڈپٹی کمشنر نے کمٹہ اوربھٹکل میں پارلیمانی انتخابات کی تیاریوں کا لیا جائزہ

ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے ضلع شمالی کینرا کے حلقے میں واقع کمٹہ اور بھٹکل شہروں میں پارلیمانی الیکشن کے لئے انتظامیہ کی طرف سے کی گئی حتمی تیاریوں کا معائنہ کیا۔

دو مراحل میں ایس پی۔بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘: یوگی

اتر پردیش کے وزیر یوگی آدتیہ ناتھ نے جمعہ کو کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے لئے ووٹنگ کے اختتام پذیر ہو چکے دو مراحل میں ایس پی، بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘ رہی ہیں۔ یوگی نے سنبھل میں ایک جلسہ عام میں کہا کہ ووٹنگ کے دو مرحلے ہو چکے ہیں۔ بی جے پی کو سب سے زیادہ ووٹ ملے ہیں۔ انہوں نے ...

لوک سبھا انتخابات: کیا اُترکنڑا میں انکم ٹیکس کے مزید چھاپے پڑنے والے ہیں؟

پارلیمانی الیکشن کے پس منظر میں محکمہ انکم ٹیکس اور انتخابی نگراں اسکواڈ کی طرف سے مختلف ٹھکانوں پر جو چھاپے مارے جارہے ہیں، اس تعلق سے خبر ملی ہے کہ ضلع شمالی کینرا میں مزیدکئی سیاسی لیڈروں اورتاجروں کے ٹھکانوں پر چھاپے پڑنے والے ہیں۔