ڈھونگی بابا کے چنگل میں پھنسی ایک لڑکی کا وہ خط جس نے گرمیت رام رحیم کی پول کھولی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 27th August 2017, 11:44 AM | اسپیشل رپورٹس | ملکی خبریں |

(یہ خط اس ڈھونگی بابا کے چنگل میں پھنسی ایک لڑکی نے اس وقت کے وزیراعظم اٹل بہاری واجپئی کو لکھا تھا۔ اسی خط کی بنیاد پر سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے رام رحیم کو زانی قرار دیا۔) 

بخدمت :

محترم وزیر اعظم جناب اٹل بہاری واجپئی، حکومت ہند

موضوع: ڈیرے کے مہاراج کے ذریعے سینکڑوں لڑکیوں کی عصمت دری کی جانچ پڑتال کرنے کی درخواست 

جناب عالی! 

عرض یہ ہے کہ میں پنجاب کی رہنے والی ہوں اور اب پانچ سال سے ڈیرہ سچا سودا سرسا، ہریانہ (دھن دھن ست گرو تیرا ہی آسرا) میں سادھوی کے طور پر خدمت کر رہی ہوں۔  میرے ساتھ یہاں سینکڑوں لڑکیاں ڈیرے میں 18، 18 گھنٹے  خدمت کرتی ہیں۔  ہمارا یہاں جسمانی طور پر استحصال کیا جا رہا ہے۔ ساتھ ہی ڈیرے کے مہاراج گرمیت سنگھ کے ذریعے جنسی استحصال (عصمت دری) کیا جا رہا ہے۔ میں بی اے پاس لڑکی ہوں۔  میرے خاندان کے لوگ مہاراج کے اندھے عقیدت مند ہیں، جن کے ایما پر میں ڈیرے میں سادھوی بنی تھی۔

سادھوی بننے کے دو سال بعد ایک دن مہاراج گرمیت کی شاگردہ سادھوی گرجوت نے رات 10 بجے مجھے بتایا کہ آپ کو پتا جی نے غار (مہاراج کے رہنے کا مقام) میں بلایا ہے۔ کیونکہ میں پہلی بار وہاں جا رہی تھی، میں بہت خوش تھی۔  یہ سوچ کر کہ  آج خدا نے مجھے بلایا ہے۔  جب میں غار میں پہنچی تو دیکھا کہ مہاراج بستر پر بیٹھے ہیں۔  ہاتھ میں ایک ریموٹ ہے، سامنے بلو فلم ٹی وی پر چل رہی ہے۔  بستر کے سرہانے ایک ریوالور رکھا ہوا ہے۔  میں یہ سب دیکھ کر حیران رہ گئی۔  مجھے چکر آنے لگے، میرے پیر کے نیچے کی زمین کھسک گئی۔ یہ کیا ہو رہا ہے؟ مہاراج ایسے ہوں گے میں نے خواب میں بھی نہیں سوچا تھا۔  مہاراج نے ٹی وی کو بند کیا اور مجھے ساتھ بٹھاکر پانی پلایا اور کہا کہ میں نے تمہیں اپنی خاص پیاری سمجھ کر بلایا ہے۔  یہ میرا پہلا دن تھا۔

مہاراج نے مجھے باہوں میں لیتے ہوئے کہا ہم تجھے دل سے چاہتے ہیں۔  تمہارے ساتھ محبت کرنا چاہتے ہیں، کیونکہ تم نے ہمارے ساتھ سادھوی بنتے وقت تن من دھن سب ست گرو کے لیے قربان کرنے کو کہا تھا۔  تو اب یہ تن من ہمارا ہے۔  میرے مخالفت کرنے پر انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ ہم ہی خدا ہیں۔

جب میں نے پوچھا کہ کیا یہ خدا کا کام ہے تو انہوں نے کہا - شری کرشن بھگوان تھے، ان کے یہاں 360 گوپياں تھیں جن سے وہ ہر روز پیار محبت کرتے تھے۔ پھربھی لوگ ان کو پرماتما مانتے  ہیں، یہ کوئی نئی چیز نہیں ہے۔  اگر ہم چاہیں تو تمہاری زندگی اس ریوالور سے ختم کر سکتے ہیں۔  تمہارے خاندان والے ہم  پر ایسا یقین رکھتے ہیں کہ وہ ہمارے غلام ہیں۔ وہ ہمارے دائرے سے باہر نہیں جا سکتے یہ تم اچھی طرح جانتی ہو۔  حکومت میں ہماری بہت چلتی ہے۔

ہریانہ اور پنجاب کے وزیر اعلی، پنجاب کے مرکزی وزیر ہمارے پیر چھوتے ہیں۔  سیاستداں ہم سے اپنی تائید کرواتے ہیں، پیسہ کماتے ہیں اور ہمارے خلاف کبھی نہیں جائیں گے۔ ہم تمہارے خاندان کے نوکری یافتہ تمام افراد کو برخاست کروا دیں گے، سبھی افراد کو اپنے خدمت گاروں (غنڈوں)  سے مروا دیں گے۔ ثبوت بھی نہیں چھوڑیں گے۔یہ تمہیں اچھی طرح معلوم ہے کہ ہم نے غنڈوں سے پہلے بھی ڈیرے کے انتظام کار فقیر چند کو ختم کروا دیا تھا جن کا اتہ پتہ تک نہیں ہے۔  اور کوئی ثبوت نہیں ہے۔ پیسے کی بدولت ہم سیاست دانوں، پولیس اور قانون کو خرید لیں گے۔  اس طرح میرا منہ کالا کیا اور گزشتہ تین ماہ میں 20-30 دن کے وقفے سے مسلسل کیا جا رہا ہے۔

آج مجھے پتہ چلا کہ مجھ سے پہلے جو لڑکیاں رہتی تھیں، ان سب کے ساتھ منہ کالا کیا گیا ہے۔  ڈیرے میں موجود 35-40 سادھوی لڑکیاں 35-40 سال کی عمر سے زیادہ ہیں جو شادی کی عمر سے آگے نکل چکی ہیں۔ جنہوں نے حالات سے سمجھوتہ کر لیا ہے۔  ان میں زیادہ تر لڑکیاں بی اے، ایم اے، بی ایڈ، ایم۔ فل پاس ہیں، مگر گھر والوں کی اندھی عقیدت کی وجہ سے جہنم کی زندگی گزار رہی ہیں۔

ہمیں سفید لباس پہننے ، سر پر چنّی رکھنے، کسی آدمی کی طرف آنکھ اٹھا کر نہ دیکھنے ، آدمی سے 5-10 فٹ دور رہنے کے مہاراج کی جانب سے احکامات ہیں ، دکھاوے کے طور پر ہم دیوی ہیں، لیکن ہماری حالت طوائفوں کی طرح ہے۔

میں نے ایک دفعہ اپنے گھر والوں کو بتایا کہ ڈیرے میں سب کچھ ٹھیک نہیں ہے، میرے گھر والے ناراض ہو گئے اور غصے میں کہنے لگے کہ اگر بھگوان کے ساتھ رہتے ہوئے ٹھیک نہیں ہے تو پھر ٹھیک کہاں ہے؟ تمہارے دماغ میں غلط خیالات آنے شروع ہو گئے ہیں، ست گورو کو  یاد کیا کر۔ میںمجبور ہوں۔ یہاں ست گرو کا حکم ماننا پڑتا ہے۔  یہاں دو لڑکیاں ایک دوسرے سے بات بھی نہیں کرسکتی ہیں۔  گھر والوں کو ٹیلی فون ملا کر گفتگو نہیں کرسکتیں، گھر والوں کا ہمارے نام فون آئے تو مہاراج کے حکم کے مطابق ہمیں بات کرنے کی اجازت نہیں ہے۔   اگر لڑکی ڈیرے کی اس حقیقت کے بارے میں بات کرتی ہے تو پھر مہاراج کا حکم ہے کہ اس کا منہ بند کروا دو۔

پچھلے دنوں جب بٹھنڈا  کی ایک سادھو لڑکی نے تمام لڑکیوں کے سامنے  مہاراج کی کالی کرتوتوں کو بے نقاب کیا تو کئی سادھو لڑکیوں نے اسے مل کر پیٹا، جو آج بھی اس پٹائی کے باعث بستر پر پڑی ہے۔ جس کے باپ نے رضاکاروں سے نام کٹوا کر چپ چاپ گھر بٹھا دیا ہے، جو چاہتے ہوئے بھی بدنامی اور مہاراج کے ڈر سے کسی کو کچھ نہیں بتا رہی ہے۔

 کرکشیتر ضلع کی ایک سادھو لڑکی جو گھر آ گئی ہے , اُسنےاپنے گھر والوں کو سب کچھ سچ بتا دیا ہے۔ اُسکا بھائی بڑا رضاکار تھا، جو کہ خدمت چھوڑکر ڈیرے سے ناطہ توڑ چکا ہے۔سنگرور ضلع کی ایک لڑکی جس نے گھر آکر پڑوسیوں کو ڈیرے کی کالی کرتوتوں کے بارے میں بتایا تو ڈیرے کے رضاکار / غنڈے بندوقوں سے لیس لڑکی کے گھر آ گئے۔  گھر کےاندر سے کنڈی لگا کر جان سےمارنےکی دھمکی دی اور مستقبل میں کسی سےکچھ بھی نہیں بتانے کو کہا۔ اسی طرح کئی لڑکیاں جیسےکہ ضلع مانسا (پنجاب) , فیروز پور , پٹیالا , لدھیانہ کی ہیں . جو گھر جاکر بھی چپ ہیں کیونکہ اُنہیں جان کا خطرہ ہے۔ اسی طرح ضلع سرسا , حسار , فتح آباد , ھنمان گڑہ , میرٹھ کی کئی لڑکیاں جو کہ ڈیرے کی غنڈہ گردی کےآگے کچھ نہیں بول رہیں۔

 لہذا آپ سے گزارش ہے کہ ان سب لڑکیوں کےساتھ ساتھ مجھے بھی میرےخاندان کےساتھ جان سےمار دیا جائیگا اگر میں یہاں اپنا نام پتہ لکھونگی۔ کیونکہ میں چپ نہیں رہ سکتی اور نا ہی مرنا چاہتی ہوں۔  عوام کے سامنے سچائی لانا چاہتی ہوں۔  اگر آپ پریس کے ذریعے کسی بھی ایجینسی سےجانچ کروائیں تو ڈیرے میں موجود 40 - 45 لڑکیاں جو کہ دہشت زدہ اور ڈری ہوئی ہیں پورا یقین دلانے کے بعد سچائی بتانےکو تیار ہیں۔ ہمارا ڈاکٹری معاینہ کیا جائے تاکہ ہمارے سرپرستوں کو اور آپکو پتہ چل جائیگا کہ ہم کنواری دیوی سادھو ہیں یا نہیں۔  اگر نہیں تو کس کے ذریعے برباد ہوئی ہیں۔  یہ بتا دیں گے کہ مہاراج گرمیت رام رحیم سنگھ جی،سنت ڈیرا سچا سودا کے ذریعے تباہ کی گئی ہیں ۔

 درخواست کنندہ : ایک بے قصور ذلت کی زندگی جینےکو مجبور

 (ڈیرا سچا سودا، سِرسا) 

ایک نظر اس پر بھی

سہراب الدین انکاؤنٹر معاملہ : تین سال پہلے ہوئی جج کی موت پر اب اُٹھے سوال ؛ کیا ان کا قتل ہوا تھا ؟

سہراب الدین کے مبینہ فرضی انکاؤنٹر کی شنوائی کر رہے سی بی آئی جج برج گوپال ہرکشن لویا ، جن کی یکم دسمبر 2014 میں موت واقع ہوئی تھی، اب تین سال بعد اُن کی موت پر سوالات اُٹھ کھڑے ہوگئے ہیں۔  انگریزی ماہنامہ کاروان نے ایک رپورٹ شائع کرتے ہوئے اس بات کا دعویٰ کیا ہے کہ  سی بی آئی جج ...

بھٹکل اسمبلی حلقے میں کھیلا جارہا ہے ایک نیا سیاسی کھیل! کون بنے گا کانگریسی اُمیدوار ؟

یہ کوئی ہنسی مذاق کی بات ہرگز نہیں ہے۔بھٹکل کی موجودہ جو صورتحال ہے اس میں ایک بڑا سیاسی گیم دکھائی دے رہاہے۔ کیونکہ 2018کے اسمبلی انتخابات کی تیاریوں میں لگی ہوئی سیاسی پارٹیاں اپنا امیدوار کون ہوگا اس پر توجہ دینے کے ساتھ ساتھ مخالف پارٹیوں سے کون امیدوار بننے پر ان کی جیت کے ...

سعودی عربیہ میں شہزادوں کی گرفتاریاں؛ کرپشن کے خلاف کریک ڈاؤن یا خاندانی دشمنیاں ؟

سعودی عربیہ میں حال ہی میں جو واقعات رونما ہوئے ہیں اور شہزادوں سمیت  وزراء اور اہم  سرکاری عہدیداروں کی گرفتاریاں ہوئی ہیں، اُس سے نہ صرف سعودی عربیہ  بلکہ پوری اسلامی دنیا پر گہرا  پڑا ہے اور مسلمان سعودی عربیہ میں ہونے والے واقعات پر تشویش میں مبتلا ہوگئے ہیں۔

زندہ قومیں شکایت نہیں کرتی ہیں، بلکہ پہاڑ کھود کر راستے بنا لیتی ہیں ..... آز: ڈاکٹر ظفر الاسلام خان

بہت عرصہ قبل میں نے ایک انگریز مفکر کا مقولہ پڑھا تھا کہ جب تک میری قوم میں ایسے سر پھرے موجود ہیں جو کسی نظریے کو ثابت کرنے کے لئے اپنا گھر بار داؤ پر لگاکر اس کی تحقیق کرتے رہیں، کسی چیز کی تلاش میں صحراؤں میں گھومتے رہیں اور پہاڑوں کی اونچی چوٹیوں کو سر کرنے کی جد وجہد کرتے ...

612بچوں کے قاتلوں کو پھانسی کب؟۔۔۔۔۔۔تحریر :ڈاکٹر میاں احسان باری

تھر اور چولستان موت کے کنوئیں اور ایسی گہری کھائی ہیں جہاں آج تک ہزاروں نو مولود کم سن اور کم عمر بچے صرف غذائوں کی قلت اور پانی کی کمی کی وجہ سے ہلاک ہو کرمدفون ہیں ان علاقوں میں کوئی باقاعدہ قبرستان نہ ہیں لوگ دور دراز پانی کی تلاش میں گھومتے پھرتے اور ذاتی طور پر بنائی گئی ...

اترکنڑا ضلع میں بندوق برداروں کی تعداد صرف ایک فی صد: لائسنس کی تجدید کو لے کر اکثر بے فکر

اترکنڑا ضلع جغرافیائی وسعت، جنگلات سے گھراہواہے اس کی آبادی میں خاصی ہے لیکن ضلع میں صرف ایک فی صد لوگ ہی بندوق رکھتے ہیں،ضلع میں فصل کی حفاظت کے لئے 8163اور خود کی حفاظت کے لئے 930سمیت کل 9093لوگ ہی لائسنس والی بندوقیں رکھتے ہیں۔

سہراب الدین انکاؤنٹر معاملہ : تین سال پہلے ہوئی جج کی موت پر اب اُٹھے سوال ؛ کیا ان کا قتل ہوا تھا ؟

سہراب الدین کے مبینہ فرضی انکاؤنٹر کی شنوائی کر رہے سی بی آئی جج برج گوپال ہرکشن لویا ، جن کی یکم دسمبر 2014 میں موت واقع ہوئی تھی، اب تین سال بعد اُن کی موت پر سوالات اُٹھ کھڑے ہوگئے ہیں۔  انگریزی ماہنامہ کاروان نے ایک رپورٹ شائع کرتے ہوئے اس بات کا دعویٰ کیا ہے کہ  سی بی آئی جج ...

’پدماوتی‘بیرون ملک میں ریلیز ہوگی یا نہیں، 28نومبر کو سپریم کورٹ کرے گا سماعت

سپریم کورٹ میں وکیل سری لنکن شرما نے عرضی داخل کر کے کہا ہے کہ فلم پدماوتی بنانے والے پر عدالت کو گمراہ کرنے کا الزام لگایا ہے۔ہندی فلم پدماوتی ایک دسمبر کو ملک سے باہر ریلیز کرنے کا مطالبہ کر رہی نئی درخواست پر کورٹ 28نومبر کو سماعت کرے گی۔

گجرات بی جے پی کی جاگیر نہیں ہے، راہل گاندھی کے ساتھ کوئی ریلی نہیں کروں گا:ہاردک پٹیل

گجرات کے نوجوان لیڈر ہاردک پٹیل نے گرچہ اگلے ماہ ہونے جا رہے اسمبلی انتخابات میں کانگریس کا موقف لینے کی خواہش بنا لی ہو لیکن یہ بھی صاف ہے کہ وہ کانگریس نائب صدر راہل گاندھی کے ساتھ نظرنہیں آئیں گے۔

یوگی کے اُترپردیش میں لاء اینڈآرڈر کی تشویشناک صورتحال، اب ٹرین میں تین مسلم اساتذہ کی ہوئی پٹائی، رومال بہانہ مسلم نشانہ

یوپی میں لاء اینڈرآرڈرکس قدربدحال ہے۔اوراقلیتوں کے متعلق کس قدرنفرت کاماحول ہے اس کااندازہ اس سے لگایاجاسکتاہے کہ اتر پردیش کے باغپت ضلع میں چلتی ٹرین میں 6سے 7دبنگوں پر تین مسلم ٹیچروں کے ساتھ مارپیٹ کا الزام لگا ہے۔