اتر پردیش کے وزیراعلیٰ اور وزیرصحت کے استعفیٰ سے کچھ کم منظورنہیں، کانگریس نے دباؤبنا یا، غلام نبی آزاد سمیت کانگریسی لیڈروں نے اسپتال کا دورہ کیا

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 13th August 2017, 1:32 AM | ملکی خبریں |

گورکھپور:12/اگست(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)گورکھپور میڈیکل کالج میں حادثے کے بعد سینئر لیڈر غلام نبی آزاد کی قیادت میں کانگریس کے وفد نے موقع پر پہنچ کر حالات کا جائزہ لیا۔ اس موقع پر غلام نبی آزاد نے کہا کہ یوپی حکومت کی لاپرواہی سے یہ حادثہ ہوا. ہسپتال میں آکسیجن کی کمی تھی۔ اس وفد میں آزاد کے علاوہ، آر پی این سنگھ، راج ببر اور پرمود تیواری موجود تھے۔ قابل ذکر ہے کہ گورکھپور میں گزشتہ پانچ دنوں میں 60 بچوں کی دردناک موت نے کئی سوال کھڑے کر دیے ہیں۔ جان گنوانے والے بچوں میں 5 نوزائیدہ بھی تھے۔جبکہ یوپی حکومت کا کہنا ہے کہ آکسیجن کی کمی سے موت نہیں ہوئی۔ 9 تاریخ کی آدھی رات سے لے کر 10 تاریخ کی آدھی رات کو 23 اموات ہوئیں جن میں سے14 اموات نو نیٹل وارڈ یعنی نومولود بچے کو رکھنے کے وارڈ میں ہوئی۔ہسپتال کے ذرائع کہتے ہیں کہ آکسیجن کی سپلائی میں رکاوٹ ہونے سے بچوں کی موت ہوئی ہے۔ یہ ہسپتال پردیش کے وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کے آبائی ضلع میں آتاہے۔ پچھلی 9۔10 تاریخ کوخودوزیراعلیٰ نے اس ہسپتال کادورہ کیاتھا۔ اس کے بعدبھی اس طرح کی لاپرواہی سامنے آئی ہے۔ اس واقعہ پراپوزیشن جماعتوں نے سخت ردعمل کااظہارکیاہے۔سماجوادی پارٹی اورکانگریس نے اتر پردیش کے وزیرصحت کے استعفیٰ کامطالبہ کیاہے۔

ایک نظر اس پر بھی

وزیر اعلیٰ نتیش کمارکا کشن گنج کے سیلاب زدہ علاقوں کا دورہ;ایم پی مولانااسرارالحق قاسمی نے میمورنڈم سونپ کر سیلاب متاثرین کی فوری بازآبادکاری کامطالبہ کیا

بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے آج کشن گنج کے سیلاب زدہ علاقوں کا دورہ کرکے سیلاب متاثرین سے ملاقات کی اورراحت وامداد کے کاموں کا جائزہ لیا۔اس موقع پر علاقے کے ایم مولانا اسرارالحق

حادثات سے دکھی پربھونے کہا;ریلوے کے لئے خون اور پسینہ ایک کیا، استعفی پرمودی نے انتظارکرنے کوکہا

گزشتہ پانچ دنوں میں اتر پردیش میں دو ٹرینوں کے حادثات کی اخلاقی ذمہ داری لے کر ریلوے وزیر سریش پربھو استعفی دینے کی پیشکش کی ہے،اگرچہ ان کا استعفی ابھی تک قبول نہیں ہوا تھا۔

حکومت ہماری خاموشی کو بزدلی نہ سمجھے: سید عالمگیر اشرف;رائے پور میں بورڈ کی ہنگامی میٹنگ طلب، ملک بھر میں جاری کیا پیغام،مذہب میں دخل اندازی نا قابل برداشت

مرکزی حکومت کی مسلسل مذہب میں غیر قانونی دخل اندازی حکومت کے لئے اچھا نہیں ہے۔ اپنی ناکامیوں اورمجرموں کو شہ دینے کی مجراانہ سازشوں پر پردہ ڈالنے کے لئے ملک کے