بھٹکل میں موسلادھار بارش؛ شرالی سے الوے کوڈی کو جوڑنے والی عارضی سڑک پانی میں بہہ گئی

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 8th June 2018, 6:58 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 8/جون (ایس او نیوز) تعلقہ بھر میں کل جمعرات صبح سے جاری موسلادھار بارش آج شام تک مسلسل جاری ہے۔  ایک طرف  ندی نالے پانی سے بھر کر لبریز ہوگئے ہیں تو وہیں تعلقہ کے شرالی میں شرالی سے الوے کوڈی کو جوڑنے والی عارضی سڑک  کو بارش کے پانی نے بہادیا ہے، جس کے ساتھ ہی الوے کوڈی کی طرف جانے والوں کے لئے سخت دشوای پیش آرہی ہے۔

بتایا گیا ہے کہ رات قریب تین بجے  زبردست بارش کے نتیجے میں پوری سڑک پلّی نالے میں بہہ گئی، جس کے ساتھ ہی الوے کوڈی کا شرالی اور بھٹکل سے بری رابطہ ٹوٹ گیا۔

خیال رہے کہ شرالی کے  پلّی نالے پر واقع بریج بے حد خستہ حال ہونے کی وجہ سے قریب دو ماہ قبل اُس بریج کو نکال کر وہاں نئی بریج کا کام شروع کیا تھا، ایسے میں   عوام کو ایک جگہ سے دوسری جگہ پہنچنے کے لئے   عارضی طور پر ایک عارضی سڑک تعمیر کرکے دی گئی تھی اور ندی سے پانی کے اخراج کے لئے  بڑے بڑے پائپ بچھائے گئے تھے، مگر رات کو زبردست بارش سے ندی کے اندر بچھائے گئے موٹے پائپ کو ہی ندی کے تیز بہائو کی نظر ہوگئے ، اور پائپوں کو پانی اپنے ساتھ بہا لے گیا، جس کے ساتھ ہی پائپ  پوری سڑک زمین بوس ہوگئی۔

سڑک کا رابطہ ٹوٹتے ہی اب بھٹکل اور شرالی سے پلّی، تٹّی ہکّل، منہونڈا، کلسیکیری، الوے کوڈی اور سنبھاوی جیسے دیہات الگ تھلگ ہوگئے، واقعے کی اطلاع ملتے ہی  پی ڈبلیو کے اہلکار اور  شرالی پنچایت کے اہلکار سمیت بھٹکل رکن اسمبلی سنیل نائک نے فوری جائے وقوع پر پہنچ کر جائزہ لیا، جس کے بعد سڑک کی تعمیر کرنے والی کنٹریکٹ کمپنی  کے ذریعے ہی  عوام کو ایک جگہ سے دوسری جگہ لانے اور لے جانے کے لئے عارضی طور پر کشتی کا انتظام کیا گیا ہے۔ ساتھ ساتھ پرانے اور خستہ حال   پیدل بریج کو فوری طور پر درست کرکے چلنے  لائق بنایا گیا ہے۔

عارضی سڑک پانی میں بہہ جانے سے  سواریوں کو  اب بینگرے ،ماون کٹے کے راستے سے الوی کوڈا جانا ہوگا جو کافی لمبا راستہ ہے۔

مقامی لوگوں نے ساحل آن لائن سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ پلّی ہالّا  بریج کی پوری  سڑک پانی میں بہہ جانے سے عوام کے ساتھ ساتھ   اسکول اور کالج جانے والے بچے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں، جو بریج کے اُس پار والے  درو دراز کے دیہاتوں سے بھٹکل کے اسکولوں اور کالجوں کے لئے جاتے ہیں۔

 

بھٹکل میں 75.4 ملی میٹر بارش:   7/جون سے آج 8/جون صبح آٹھ بجے  تک بھٹکل میں 75.4 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی ہے۔ اسی طرح بھٹکل تعلقہ میں اب تک ہوئی جملہ بارش 440.9 ملی میٹر  ریکارڈ کی گئی ہے۔ خیال رہے کہ گذشتہ سال کے  مانسون کے مقابلے میں اس بار  8/ جون صبح آٹھ بجے تک 127.3 ملی میٹر بارش زائد ریکارڈ کی گئی ہے۔ بارش کی  شروعات کےساتھ ہی بھٹکل میں  کھتی باڑی کا کام بھی شروع ہوگیا ہے اور کسان کھیتوں میں بیج بونے کی تیاری  میں ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کے بیلنی علاقے میں قربانی روکنے کا مطالبہ ۔پولس کو سونپا گیا میمورنڈم

بیلنی علاقے کے کچھ ہندوؤں نے بھٹکل ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ آف پولیس کو ایک میمورنڈم دیتے ہوئے مطالبہ کیاہے ہندوؤں کے مندروں اور مقدس مقامات سے گھرے ہوئے اس علاقے میں جانوروں کی قربانی کرنے پر روک لگائی جائے۔

منگلورو: بھاری برسات کا سلسلہ جاری۔ کئی مقامات پر چٹانیں کھسکنے کے واقعات۔ ڈی سی نے عوام کودی تعلقہ لیول کنٹرول روم سے رابطہ رکھنے کی ہدایت

ساحلی علاقوں میں تیز اورموسلا دھار برسات کا سلسلہ ابھی جاری ہے۔ خاص کر منگلورو اور اڈپی کے بعض علاقوں میں لگاتار بارش برسنے کی خبریں موصول ہورہی ہیں۔

بھٹکل   تعلقہ میں مسلسل بارش سے ندی کنارے پر خطرہ :163ملی میٹر بارش

بھٹکل تعلقہ میں پچھلے دو تین دنوں سے مسلسل برستی بارش سے ندی نالے  پوری تاب سے بہنے کے نتیجےمیں عام زندگی مفلوج ہوگئی ہےاور نشیبی علاقوں میں پانی بھر جانے سے عوام پریشانی میں مبتلا ہونےکی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

بھاری بارش کے بعد لنگن مکّی ڈیم سے کیا گیا پانی کا اخراج؛ ہوناور کے شراوتی بیلٹ پرکئی دیہاتوں میں داخل ہوا پانی؛ عوام نہایت چوکس

  گذشتہ تین چار دنوں سے جاری بھاری بارش کے بعدپڑوسی تعلقہ ہوناور کے شراوتی بیلٹ سے بہنے والی شراوتی ندی میں طغیانی آگئی ہے اور ندی خطرے کے نشان سے اوپر  بہہ رہی ہے، ایسے میں اُدھر لنگن مکّی ڈیم سے 21,223کیوسک پانی کو بھی باہر چھوڑا جارہا ہے، اگر بارش پھر اپنی رفتار سے شروع ہوتی ...

منگلورو : مسلسل بارش سے کافی جانی ومالی نقصان : حالات سے نمٹنے ضلع انتظامیہ تیار : ڈپٹی کمشنر سینتھل کی پریس کانفرنس

کیرلا سمیت کرناٹکا کے ساحلی علاقوں  میں طوفانی ہواؤں اور موسلا دھار بارش جاری رہنے سے دکشن کنڑا اور اُڈپی اضلاع زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔ لگاتار بارش برسنے سے منگلورو اور بنگلورو قومی شاہراہ  پر پہاڑ کھسک گیا ہے ، جس کی  وجہ سے سواریوں کی  نقل وحمل روک دئیے جانے کے علاوہ بعض ...

کاروار میں مسلسل بارش کے نتیجےمیں ماہی گیری ٹھپ : ماہی گیر بری طرح متاثر

ہرسال اگست کے مہینےمیں ماہی گیر سمندر میں مچھلی شکار کے لئے نکلتےہیں، لیکن امسال اگست کے دوسرے ہفتےسے جاری طوفانی ہواؤں کے ساتھ موسلا دھار بارش  نےجہاں رہائشی علاقوں ، زراعت وغیرہ کو متاثر کیا ہے وہیں ماہی گیر پر بھی اس کے کافی اثرات نظر آرہے ہیں۔ دوتین کی بارش کو دیکھتے ہوئے ...