طلاق: مسلمانوں کا ایجنڈ ا کیا ہو؟ کنڑا ہفتہ وار’’ سنمارگہ‘‘ میں ایڈیٹر عبدالقادر کوکیلا کی تحریر

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 4th May 2017, 8:21 PM | ملکی خبریں | اسپیشل رپورٹس | مہمان اداریہ |

ملک بھر میں جاری طلاق کی بحث کا سدباب دوطریقوں سےکرسکتےہیں۔ پہلا یہ ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی مرکزی حکومت پر پورا الزام دھر کر خاموش ہوجائیں۔ دوسرا انہی موضوعات کو بنیاد مان کر مسلم ملت کی داخلی ترقی کے لئے حکمت عملی ترتیب دیں ۔ طلاق کے گرد گھومنے والی ٹی وی چینلس کی بحث میں ہوسکتاہے اشتعال انگیزی ہو اور اخبارات میں شائع ہونے والے مضامین میں بھی مبالغہ آرائی ہو۔لیکن اس کامطلب ایسا نہیں ہے کہ مسلمانوں میں طلاق کی شرح بالکل صفر ہے، ہے نا! تو پھر مسلمانوں کے موجودہ حالات کیسے ہیں؟

کیا وہ بہترہیں، بہترین ہیں، خراب ہیں یا بہت ہی سنگین ہیں؟ سچر اور رنگناتھ مشرا کمیشنوں نے مسلمانوں کے حالات کا مطالعہ کیا ہے، اتنا ہی نہیں،بلکہ کہا ہے کہ مسلمان بدترین حالات  میں زندگی گزاررہے ہیں۔ حالات جب ایسے ہیں تو بار بار ، ہرمرتبہ حکومتوں پر الزام عائد کرنے سے کیا مسلمانوں کی ترقی ممکن ہے ؟دراصل مسلمانوں کو غورکرنا ہے کہ وہ الزامات سے بالا تر ہوکر کس طرح اور کس طریقے سے متحر ک اور سرگرم ہوسکتےہیں ۔ مسلمانوں کے پاس دو بڑی نعمتیں ہیں۔ ایک مسجد ہے تو دوسری ملت ۔ سانحہ یہ ہے کہ دیگر طبقات کے ساتھ موازنہ کریں تو مسلمان ان دونوں قیمتی خزانوں سے استفادہ کرنے میں بار بار ناکام ہورہےہیں۔ ایسا بھی نہیں ہے کہ مسلمانوں کے پاس مساجد کی کمی ہو، ہاں ! جہاں تک مساجدسے خاطرخواہ فائدہ اٹھانے کا معاملہ ہے ہم اس معاملے میں بہت ہی کمزور ہیں۔ مسجد کی ایک انتظامیہ ہوتی ہے، صدر ہوتے ہیں، مجلس عاملہ بھی ہوتی ہے، امام وخطیب ہوتےہیں ، صرف اتنا ہی نہیں ، مسجد کے دائرۂ اختیار میں مسجد سےمنسلک کچھ مکانات بھی ہوتے ہیں، جہاں تک مساجد کوماہانہ اعانتیں نہیں دینے کی بات ہے وہ نہیں کے برابر ہونگے۔اتنے اچھے اور بہترین سسٹم سے مساجد کی تمام خدمت کو انجام دیتے ہوئے ملی ترقی کے لئے عملی منصوبہ تشکیل دینا ناممکن تو نہیں ہے۔ مسجد کو ماہانہ اعانت دینے والوں کی فہرست سے پتہ چل جاتاہے کہ مسجد کے احاطے میں کتنے گھر ہیں۔ اب مسجد انتظامیہ کو ایک بہت ہی چھوٹا سا کام کرنا ہے وہ یہ کہ فوری طورپرصرف ’’ملی ترقی ‘‘کے ون پوائنٹ ایجنڈے پر ایک نشست منعقد کرکے مسجد کے نواح میں جتنی ملی تنظیمیں ، ادارے ، اسوسی ایشن ہیں ان سب کے عہدیداروں کو مدعو کریں،جہاں صرف ملی ترقی کی مختلف جہتوں پر گفتگو کرکے کچھ فیصلے لیں۔ میٹنگ کامیابی کی ضمانت یہ ہے کہ اپنے تمام اختلافات، اعتراضات کو دل کے وسیع قبرستان میں ایسا دفن کردیں کہ وہ دوبارہ زندہ نہ ہوں۔ اگر مسجد کے زیر اہتمام اتنا ہوجاتاہے تو پھر سمجھ لیجئے کہ جو لوگ طلاق کی بحث چھیڑ کر واویلا مچار ہے ہیں ہم اپنی عملی سرگرمیوں کے ذریعے جواب دینا شروع کرچکے ہیں۔

اگر کسی گھر سے مسجد کے لئے عطیہ یا اعانت دی جارہی ہے تو اس کے یہی معنی ہیں کہ اس گھر اور مسجد کے درمیان ایک تعلق ہے ۔ہو سکتا ہے یہ تعلق بہت ہی کمزورہو، مگر ہے توصحیح۔ جب ایک مسجد اعانت تولیتی ہے لیکن بدلےمیں ایمانداری سے اس کی بہتری کے لئے کچھ بھی نہیں دیتی ۔ ذرا سوچیں!یہ تو ایک طرفہ خدمت ہوئی۔ آج تک بغیر کسی رکاوٹ کے یہ خدمت انجام دی جارہی ہے تو صرف اورصرف مساجد کے احترام کی وجہ سے ہی ۔ تو مساجد کی بھی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اس ایک طرفہ خدمت کو دوطرفہ بنائیں۔ اس کی عملی صورت یہی ہے کہ مسجد کی معاونت کرنے والوں (جو دینے کی بساط نہیں رکھتے انہیں بھی معاوین کی فہرست میں شمار کریں )کی بہتری کے لئے منصوبہ تشکیل دیں۔ مسجد کے دائرۂ اختیار میں آنے والے تمام گھروں کا سروے کریں، ایک گھرمیں بسنے والوں کی تعداد، گھر کی کیفیت، مرد، عورت، تعلیمی لیاقت، مزدوری ، بے روزگار،شادی شدہ ، غیر شادی شدہ، اپاہج، مریض، تعلیم حاصل کرنے والے۔۔۔۔جیسی مکمل تفصیلی جانکاری درج کرلیں۔ راشن کارڈ، شناختی کارڈ، آدھارکارڈ، صحت کارڈ، ٹائلیٹ، گھر کی کل آمدنی، بیوائیں، یتیم، مطلقہ اگرہوں تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب کچھ نوٹ کرلیں۔سچائی یہ ہے کہ موجودہ حالت میں کسی ایک طبقے کی ترقی کے نقطہ نظر سےاس طرح کا ایک تفصیلی سروے بہت ہی ضروری اور لازمی ہے۔ اس سروے کا سب سے بڑا اور بہتر فائدہ یہ ہوگا کہ جو بھی سرکاری سہولیات ہیں وہ مستحقین تک پہنچانا آسان ہوگا۔ اپنی مسجد سے جڑے ہوئے تمام گھروں تک سرکاری سہولیات کو بہم پہنچانے کے لئے جزو وقتی ہوکہ کل وقتی(Part time /Full time)ایک ملازم کا تقرر بہت بہتر قدم ہوگا۔ یا ایسا بھی ہوسکتاہے کہ خود مسجد کے امام ، خطیب یا کوئی اور ذمہ دار از خود اس خدمت کو انجام دیں۔البتہ جب کسی مسجد کے امام سرکاری سہولیات کو عوام تک پہنچانے کے لئے کسی سرکاری افسر یا رکن اسمبلی (ایم ایل اے ) ،عوامی نمائندے سے ملاقات کرتے ہیں تو وہاں ایک احترام کی کیفیت ہوتی ہےاور فوری طورپر اس کو منظوری ملنے کا امکان بھی ہوتاہے۔ اسی طرح مسجدسے منسلک علاقہ میں بیرونی ممالک میں برسرِ روزگارافراد سبھی ہوسکتےہیں،امام صاحب کے لئے انہیں اس ترقی کے ایجنڈے میں شامل کرناممکنات میں سے ہے۔ اس کے علاوہ مسلمانوں میں زکوٰۃ کا ایک خصوصی نظام بھی ہے، اس کے ساتھ کئی این جی اؤز ہیں، عطیہ کنندگان ہیں، ان تمام سے ملی ترقی کے لئے تعاون لیاجاسکتاہے۔ اگر ہر مسجد کے دائرۂ اختیار، نواحی علاقوں کے مکانوں کا تفصیلی سروے انجام دے کر اس کی بنیاد پر ملی ترقی کے لئے بہتراور ضروری عملی منصوبہ تشکیل دیاجائے تو اس کوقابل ذکر کارنامہ کہہ سکتے ہیں اور ملت کی موجودہ صورت حال لازماً تبدیلی دیکھی جاسکتی ہے۔ صرف اتنا ہی نہیں ،بلکہ طلاق، یکساں سول کوڈ، تعدد ازدواج ، دہشت گردی ۔۔۔۔وغیرہ کو انتخابی ایشوز بنانے والوں کو اپنا ایجنڈابدلنے کی اہم وجہ بھی ہوسکتی ہے۔

ترجمہ : عبدالرؤوف سونور، لکچرر، انجمن پی یو کالج ، بھٹکل          9448776206

ایک نظر اس پر بھی

کاغذات نامزدگی بھرنے کے بعد رام ناتھ کووندنے کہا،جب سے گورنر بنایاتب سے میری کوئی پارٹی نہیں

صدارتی انتخابات کے لئے این ڈی اے کے امیدوار رام ناتھ کووند نے نامزدگی بھر دی ہے۔اس دوران ان کے ساتھ پی ایم مودی، سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی اور بی جے پی صدر امت شاہ بھی موجود تھے۔

کرناٹک کا دیرینہ خواب شرمندۂ تعبیر بنگلور شہر اسمارٹ سٹی کی فہرست میں شامل

بشمول راجدھانی بنگلور ملک کے 30؍شہروں کو مرکزی حکومت نے اسمارٹ سٹی کے طورپر ترقی دینے کے لئے منتخب کرلیاہے۔ مرکزی وزیر برائے شہری ترقیات وینکیا نائیڈونے آج اس کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ مرکزی اسمارٹ سٹی اسکیم کے تحت ان 30؍شہروں کو ترقی دی جائے گی۔

سری نگر میں ڈی ایس پی محمد ایوب کا قتل، ہنس راج اہیر بولے قصورواروں کو چھوڑا نہیں جائے گا

 سری نگر میں بھیڑ کی طرف سے ڈی ایس پی کو پیٹ پیٹ کر بغیر وجہ قتل کئے جانے پر سرینگر سے دہلی تک غصہ ہے۔وزیر داخلہ ہنس راج اہیر نے بھی اس واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے مجرم لوگوں کے خلاف سخت کارروائی کی بات کی ہے۔ہنس راج اہیر کا کہنا ہے کہ جمعرات کاواقعہ بہت افسوسناک ہے

میراکی امیدواری پربوکھلایابی جے پی خیمہ ! یوگی نے کہا، لوگوں کو لڑوانے کے لئے بنایا میرا کمار کو امیدوار؛ کانگریس کاجوابی حملہ،دلت کوامیدواربنانے سے بی جے پی کے گناہ نہیں دھلیں گے

این ڈی اے کے صدارتی امیدوار رام ناتھ کووند نے اپنا نامزدگی بھر دیا ہے۔نامزدگی کے دوران این ڈی اے نے اپنی پوری طاقت دکھائی۔اس دوران کووند کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی، بی جے پی صدر امت شاہ، بی جے پی کے قدآور لیڈر لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی بھی موجود رہے،

نئی دہلی قادری مسجدمیں ہزاروں لوگوں نے لگائے بھارت۔فلسطین زندہ باد کے نعرے

شاستری پارک کی سب سے بڑی قادری مسجد میں یوں تو جمعہ کی نماز کے لئے عام طور پر ہزاروں نمازی آتے ہیں لیکن رمضان کے آخری جمعہ کی نماز میں یہ تعداد چار گنا ہو جاتی ہے. نماز کے بعد فلسطین کے حق میں ہوئے احتجاج میں تقریبا دس ہزار لوگ جمع ہو گئے اور بھارت اور فلسطین زندہ باد کے نعرے لگانے ...

دوخبریں،دو کہانیاں اورالیکٹرانک مفکرین کی گل افشانیاں ....... آز: نایاب حسن

9؍مئی کوجمعیت علماے ہند(م)کی نمایندگی میں ایک وفد نے پی ایم مودی سے ملاقات کی،مودی وزیر اعظم ہیں تو ان سے ملناملانا کوئی انوکھامعاملہ نہیں ہونا چاہیے تھا،مگر بعض اسباب ایسے تھے کہ جن کی وجہ سے اس ملاقات پر سوالات اٹھنایقینی تھا۔ویسے سوالات کرناکوئی قابلِ اعتراض بات نہیں ہونا ...

بھٹکل کے سی سی ٹی وی کیمرے کیا صرف دکھاوے کےلئے ہیں ؟

شہر بھٹکل پرامن ، شانتی کا مرکز ہونے کے باوجود اس کو شدید حساس شہروں کی فہرست میں شمار کرتے ہوئے یہاں سخت حفاظتی اقدامات کی مانگ کی جاتی رہی ہے۔مندرنما ’’ناگ بنا ‘‘میں گوشت پھینکنا، شرپسندوں کے ہنگامے ، چوروں کی لوٹ مار جیسے جرائم میں اضافہ ہونے کے باوجود شہری عوام حفاظتی ...

بھٹکل شہر کے کامیاب تاجر محمد ابوبکر قمری کے جانشینوں کے خوابوں کی تعبیر ’’قمری ٹاور‘‘کا شاندار افتتاح

انسان کڑی محنت ،مخلصانہ کوششوں کے ذریعے اپنی بہتری اور ترقی کی طرف گامزن ہوتاہے تو فطرت بھی اس کا استقبال کرتی ہے اور وہ سب کچھ نوازتی جاتی ہے جس کی وہ تمنا کرتاہے۔ ایسی ہی ایک مثال بھٹکل کے مثالی تاجر محترم ابوبکر قمری ہیں۔ خلیج میں اپنی بہترین کمائی کو الوداع کہہ کرسال 1982میں ...

بھٹکل میں آرام دہ اورجدید سہولیات سے آراستہ اپارٹمنٹس کا شاندار منصوبہ "اوشیانک"؛ پہلے 25 اپارٹمنٹس بُک کرنے والوں کو لکی ڈراء کے ذریعے انعامات

بھٹکل جالی روڈ پر آرام دہ اور جدید سہولیات سے آراستہ67 اپارٹمنٹس کا شانداررہائشی منصوبہ "اوشیانک Oceanic" لانچ کیا گیا ہے۔ جو کہ خاص کر بزنس مین، این آر آئیز اور ایکزیکٹیو کلاس کے افراد کے لئے نہایت ہی موزوں سمجھا جارہا ہے ۔یہ اپارٹمنٹس ان لوگوں کے لئے کشش کا سبب بنے گاجو اعلیٰ ...

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس کے بعد مرکزی حکومت کو دھمکی ۔۔۔۔۔ اعتماد کا اداریہ

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس میں مرکزی حکومت کو دھمکی دی گئی ہے کہ اگر وہ 2023تک ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر نہیں کروائے گی تو ہندو تنظیمیں خود وہاں مندر تعمیر کرلیں گے کوئی قانون یا عدالت کا پاس و لحاظ نہیں رکھا جائے گا

جانوروں کی فروخت پر پابندی کے نام پر تنازعہ کھڑاکرنے کی ضرورت نہیں تھی (پرجا وانی کا اداریہ۔۔۔کنڑا سے ترجمہ)

ذبح کرنے کے مقصد سے گائے، بیل، سانڈ، بھینس ، چھوٹے بچھڑے اور اونٹوں کو جانوروں کے میلے اور مارکیٹ میں بیچنے پرمرکزی حکومت کی طرف سے لگائی گئی  پابندی سے ایک بڑا تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے۔یہ پابندی اصل میں کوئی مناسب تدبیر ہی نہیں ہے۔ بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کو گؤ ...

ہوشیار، خبردار۔۔۔۔۔۔۔از قلم : مدثر احمد

جب ہندوستان کی سرزمین پر مغل ، نواب اور نظام حکومت کررہے تھے اس وقت انکے پاس جو مال و دولت اور خزانے تھے انہیں اگر وہ صحیح طریقے سے استعمال کرتے تو آج کے مسلمان کسی کی مدد کے طلبگار نہ ہوتے اور مسلمان قوم ایک عزت دار قوم بن کر اس ملک میں دوسروں پر حکومت کرتی یا کم از کم حکومتیں ...

جاسوسی اپنے ملک کے لئے؟ .... از : ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

پاکستان کی فوجی عدالت نے ہندوستان کے سابق نیوی کمانڈر کلبھوشن سدھیر یادو کو سزائے موت سنائی ہے۔ جس پر ہندوستان کا شدید ردعمل فطری ہے۔ خود پاکستانی میڈیا نے فوجی عدالت کے اس فیصلے کو بعید از قیاس اور ہند۔پاک کشیدگی میں مزید اضافے کا سبب قرار دیا۔ کلبھوشن کی سزا پر عمل آوری کب ...