سپریم کورٹ کی مودی حکومت کوپھٹکار، لوک پال سرچ کمیٹی کے لیے اٹھائے گئے اقدامات کی معلوما ت مانگیں

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 5th January 2019, 12:39 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،5جنوری (ایس او نیوز ؍آئی این ایس انڈیا)سپریم کورٹ نے جمعہ کو مرکزی حکومت کو ہدایت دی کہ وہ ستمبر 2018سے ابھی تک لوک پال سرچ کمیٹی کے سلسلے میں اٹھائے گئے اقدامات پر ایک حلف نامہ سونپے۔

عدالت نے اٹارنی جنرل کے کے وینوگوپال کو بتایا کہ انہیں اس سلسلے میں 17جنوری تک حلف نامہ دائرکریں۔چیف جسٹس رنجن گگوئی اور جسٹس سنجے کشن کول کی بنچ نے کہا کہ حلف نامے میں آپ کولوک پال سرچ کمیٹی قائم کرنے کے لئے اٹھائے گئے اقدامات کی معلومات یقینی بنانی ہوگی۔

اٹارنی جنرل نے جب کہا کہ ستمبر، 2018سے اب تک کئی اقدامات کئے گئے ہیں، پھر بنچ نے ان سے پوچھاکہ ابھی تک آپ نے کیا کیا ہے؟،اس میں بہت زیادہ وقت لگ رہا ہے۔وینوگوپال نے دہرایاکہ کئی اقدامات کئے ہیں،پھر بنچ ناراض ہوگئی اور کہا کہ ستمبر 2018سے لے کرکئے گئے تمام اقدامات کو ریکارڈ پر لے کرآئیں۔

غیر سرکاری تنظیم کامن کاج کی جانب سے پیش ہوئے وکیل پرشانت بھوشن نے کہا کہ حکومت نے سرچ کمیٹی کے ارکان کے نام تک اپنی ویب سائٹ پر اپ لوڈ نہیں کئے ہیں۔عدالت عظمی نے لوک پال کے لئے سرچ کمیٹی کی تشکیل پر مرکزی حکومت کی دلیلوں کو 24جولائی، 2018کو پورا غیر اطمینان بخش بتاتے ہوئے اس پر چار ہفتوں کے اندر اندر بہتر حلف نامہ دائر کرنے کی ہدایت دی تھی۔

اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا تھا کہ وزیر اعظم نریندر مودی، سپریم کورٹ کے اس وقت کے چیف جسٹس دیپک مشرا، لوک سبھا کی اسپیکر سمترا مہاجن اور مکل روہتگی والی سلیکشن کمیٹی کی میٹنگ 19جولائی، 2018کو ہوئی تھی جس میں سرچ کمیٹی کے لئے نام پر بحث ہوئی ۔وینو گوپال نے کہا تھا کہ سلیکشن کمیٹی نے زور دیا کہ سرچ کمیٹی میں صدر سمت کم از کم سات رکن ہونے ہیں جنہیں انسداد بدعنوانی پالیسی، پالیسی انتظامیہ، ویجلنس، پالیسی ساز، فنانس، انشورنس اور بینکاری، قانون اور انتظام وغیرہ کے علاقے میں تجربہ ہو۔اس کے علاوہ کمیٹی کے 50فیصد اراکین ایس سی، ایس ٹی،اوبی سی، اقلیتی اور خواتین ہونے چاہئے۔

ایک نظر اس پر بھی

 گجرات:  ٹھاکر کمیونٹی کادقیانوسی قانون،لڑکیوں کے موبائل کے استعما ل پر مکمل پابندی، بھاگ کر شادی کرنے پر اہل خانہ کو بھرنا ہوگا جرمانہ 

گجرات کے بناس کا ٹھا میں ٹھا کر کمیونٹی کی طرف سے 12 دیہات میں عجیب و غریب اور دقیانوسی قوانین بنائے گئے ہیں۔ اس میں ایک اصول ایسا ہے کہ لڑکیاں اپنے پاس موبائل نہیں رکھ پائیں گی۔

 اب تمام علاقائی زبانوں میں ہون گے ڈاک محکمہ کے امتحانات، راجیہ سبھا میں ہنگامہ کے بعد حکومت نے منسوخ کیا پیپر 

ڈاک محکمہ کی گزشتہ ہفتے ہوئے ایک امتحان کا ذریعہ صرف ہندی اور انگریزی رکھنے کی مخالفت میں منگل کو راجیہ سبھا میں کئی جماعتوں کے ارکان کے ہنگامے کی وجہ سے کاروائی کئی بار روکنا پڑی۔

پاکستانی جیل میں قید سابق ہندوستانی افسر کلبھوشن پر بین الاقوامی عدالت کا فیصلہ آج

پاکستان کی جیل میں بند ہندوستانی بحریہ کے سابق فوجی افسر کلبھوشن جادھو کے معاملے میں بدھ کو ہیگ واقع بین الاقوامی عدالت (آئی سی جے) اپنا فیصلہ سنائے گی۔ ’دی ہیگ‘ کے پیس پیلس میں 17 جولائی کو ہندوستانی وقت کے مطابق شام ساڑھے چھ بجے کھلی سماعت ہوگی جس کے بعد چیف جسٹس عبدالقوی ...