آبپاشی پراجکٹوں پر ریاستی حکومت کی توجہ نہ ہونے کے برابر: جگدیش شٹر

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 7th December 2018, 1:19 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو:6/دسمبر (ایس او نیوز)سابق وزیراعلیٰ اور بی جے پی لیڈر جگدیش شٹر نے ریاستی حکومت کی طرف سے آبپاشی پراجکٹوں کو نظر انداز کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہاکہ کلسا بنڈوری معاملے میں ٹریبونل کا فیصلہ آنے کے بعد بھی حکومت نے کل جماعتی میٹنگ طلب نہیں کی ۔ کرشنا طاس پر آبپاشی پراجکٹوں کی تکمیل کے بارے میں حکومت کو کوئی فکر نہیں ہے۔ آج وزیر اعلیٰ کی صدارت میں طلب کی گئی میٹنگ میں اپنے خیالات ظاہر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کلسا بنڈوری ، کاویری اور کرشنا پراجکٹوں پر کوئی تبادلۂ خیال کئے بغیر حکومت فیصلے لے رہی ہے۔ کرشنا پراجکٹ بی اسکیم کے متعلق انہوں نے بارہا نمائندگی کی اور آبی ذخیرے کی اونچائی 526 میٹر تک بڑھانے کا مشورہ دیا اور یہ خدشہ ظاہر کیا کہ اگر اونچائی میں اضافہ نہیں کیا گیا تو 233 دیہات ڈوب جائیں گے۔ انہوں نے کوپل لفٹ آبپاشی پراجکٹ پر کوئی کام نہیں ہوا ہے۔گدگ ضلع کے زون علاقے میں پانی کی قلت سے عوام کافی پریشان ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں چند ماہ قبل سیلاب کے سبب جو تباہی مچی اس کے متعلق ریاستی حکومت سے بارہا نمائندگی کے باوجود راحت کاری کی طرف کوئی توجہ نہیں دی جارہی ہے۔ خشک سالی کے سبب ریاست کے سینکڑوں دیہات پانی کی قلت سے پریشان ہیں۔ ان میں زیادہ تر حیدرآباد ۔کرناٹک کے علاقے آتے ہیں لیکن ان علاقوں کی طرف ضلع انچارج وزراء بھی کوئی توجہ نہیں دے رہے ہیں۔ وزیراعلیٰ کمار سوامی کی طرف سے کسانوں کے قرضے معاف کرنے کے اعلان پر انہوں نے کہاکہ اب تک 43لاکھ رعیتوں کا قرضوں کامعافی نامہ جاری نہیں کیاگیا ہے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بنگلور میں 23/ مئی کو ووٹوں کی گنتی کے دوران امتناعی احکامات نافذ

23 مئی کو لوک سبھاانتخابات کے نتائج کا اعلان ہورہا ہے۔ انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے مرحلے میں کوئی ناخوشگوار صورتحال پیدا نہ ہونے پائے اس کے لئے شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے 23مئی کی صبح چھ بجے سے شہر بھر میں امتناعی احکامات نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کرناٹک کے کندگول اور چنچولی حلقوں میں آج ہوگی پولنگ؛ 85 پولنگ بوتھوں کو قرار دیا گیا ہے حساس

ریاست کرناٹک  کے دو اسمبلی حلقوں کندگول اور چنچولی کے لئے آج اتوار کو  ووٹ ڈالے جائیں گے۔ دونوں حلقوں پر کامیابی درج  کرنے کے لئے کانگریس جے ڈی ایس اتحاد اور بی جے پی نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ہے۔

محمد محسن کی فرض شناسی کو پھر نشانہ بنانے کی کوشش، الیکشن کمیشن تادیبی کارروائی کے لئے ہائی کورٹ سے رجوع

اڈیشہ میں انتخابی مشاہد کے طور پر متعین کرناٹک کیڈر کے آئی اے ایس افسر محمد محسن نے وزیراعظم مودی کے ہیلی کاپٹر کی تلاشی لے کر جس فرض شناسی کا ثبوت پیش کیا اسے فرض شکنی قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن نے نہ صرف انہیں معطل کردیا بلکہ اب ایسا لگتا ہے کہ الیکشن کمیشن نے انہیں نشانہ ...