سدارامیا ہی دوبارہ وزیر اعلیٰ ہوں گے، کانگریس لیجسلیٹرس کا دعویٰ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 8th February 2018, 12:10 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،7؍فروری(ایس او نیوز) بھارتیہ جنتا پارٹی نے اب ایک نیا معاملہ اٹھایا ہے کہ کرناٹک میں اسمبلی انتخابات قریب ہیں اس کے باوجود کانگریس نے ابھی تک وزیر اعلیٰ کے امیدواروں کا اعلان نہیں کیا ہے ۔ اس کا دو ٹوک جواب دیتے ہوئے ریاستی اسمبلی میں حکمران کانگریس کے چندارکین اسمبلی نے کہا کہ اگلے انتخابات میں پارٹی اقتدار پر لوٹ آئے گی اور وزیر اعلیٰ سدارامیا اس کرسی پر بحال رہیں گے۔ایوان میںیہ معاملہ اس وقت پیش آیا جب کانگریس رکن کے این راجنا نے اپنی تقریر کے دوران یہ دعویٰ کیا کہ بی جے پی کی ریاستی یونٹ کے صدر بی ایس ایڈی یورپا کو اسمبلی انتخابات کے بعد نظر انداز کردیاجائے گا۔راجنا نے کہا کہ ریاست کے تین لیڈروں کے درمیان ایڈی یورپا بھی ایک ہیں جو ووٹوں کو منتقل کرنے کی طاقت رکھتے ہیں دیگر دو سدارامیا اور سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڈا ،لیکن ایڈی یورپا کوایل کے اڈوانی کی طرح نظر انداز کردیا جائے گا۔اس پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈر جگدیش شٹر نے کہاکہ ایڈی یورپا بی جے پی سے وزیر اعلیٰ کے امیدوار ہیں لیکن سوال یہ ہے کہ کانگریس نے ابھی تک اپنے امیدوار کے نام کا اعلان ہی نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ یہ قبول کرلیا گیا ہیکہ ایڈی یو رپا ہی ہمارے لیڈر ہیں ۔ ہم نے یہ بھی اعلان کردیا ہے کہ وہی ہمارے وزیر اعلیٰ کے امیدوار ہیں ۔ لیکن آپ کا امیدوار کون ہے؟ انہوں نے سوال کیا۔ شٹر نے دعویٰ کیا کہ کانگریس نے ابھی تک اپنے وزیر اعلیٰ کے امیدوار وں کااعلان اس لئے نہیں کیا کہ ڈر ہے کہ پارٹی میں مخالفت شروع نہ ہوجائے ۔ اگر کانگریس نے سدارامیا کے نام کااعلان کیا ،پارٹی پھوٹ کاشکار ہوجائے گی۔انہوں نے مزید کہا کہ کانگریس کے ریاستی صدر ڈاکٹر جی پرمیشور نے حال ہی میں کہا تھا کہ کوئی بھی ایک وزیر اعلیٰ بن سکتا ہے۔ اس پر جواب دیتے ہوئے راجنا نے کہا کہ میں یہ کہتا ہوں کہ سدارامیا ہی اگلے وزیراعلیٰ ہوں گے۔ راجنا کے اس بیان کی کانگریس کے ایک دیگر ایم ایل اے نریندر ا سوامی نے بھی تائید کی اور چند دیگر اراکین اسمبلی نے بھی اپنے ڈیسک تھپ تھپاتے ہوئے حمایت کی۔ اس کے بعد شٹر نے دوبارہ کہا کہ کانگریس کویہ خوف ہے کہ سدارامیا کے نام کااعلان کیا گیاتو پارٹی پھوٹ کاشکار ہوجائے گی اور دعویٰ کیا کہ مجوزہ انتخابات میں بی جے پی ہی اقتدار پر آئے گی۔راجنا نے دوبارہ شدت سے کہا کہ کانگریس ہی اقتدار پر لوٹ آئے گی اور سدارامیا ہی اگلے وزیراعلیٰ ہوں گے۔حالانکہ گجرات انتخابات کے دوران بی جے پی نے بھی وزیر اعلیٰ کے امیدوار کااعلان نہیں کیا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

ہمیں اپنی چھٹیوں سے لطف اندوزہونے دیجئے : جسٹس سیکری

کرناٹک میں اقتدار کو لے کر تنازعہ پر سماعت مکمل کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے آج کہا کہ اب ہمیں اپنی چھٹیوں سے لطف اندوز ہونے دیجئے۔ عدالت عظمیٰ میں تین ججوں کے ایک بنچ کی صدارت کر رہے جسٹس اے کے سیکری نے جب عجیب انداز میں یہ تبصرہ کیا اس وقت عدالتی کمرہ قہقہوں سے گونج اٹھا۔

کرناٹک سیاسی بحران: یہ آئین اور دستور کی جیت ہے :ملی کونسل

کرناٹک میں جاری سیاسی ہنگامہ آرائی پر آج پہلی مرتبہ ملک کی معروف تنظیم آل انڈیا ملی کونسل کے جنرل سکریٹری ڈاکٹر محمد منظور عالم نے اپنے ردعمل کا اظہا رکرتے ہوئے کہاکہ مرکز میں برسر اقتدار بی جے پی حکومت نے وہاں دستور کی دھجیاں اڑانے کی کوشش کی تھی

کرناٹک کے عوام نے تینوں پارٹیوں کو خوش کردیا

تمام ہنگامی حالات کا سامنا کرنے کے بعد کرناٹک کی سیاست ایک اطمینان بخش مرحلہ تک پہنچ گئی ہے ۔ ایڈی یورپا نے استعفیٰ دے دیا ، جے ڈی ایس اور کانگریس کی مخلوط حکومت کا بننا تقریباًطے ہے۔

بی جے پی کی حکومت گرنے کے بعد اب کمارا سوامی ہوں گے نئے وزیراعلیٰ، چہارشنبہ کو لیں گے حلف

بی جے پی رہنما بی ایس ایڈی یورپا کے استعفیٰ کے ساتھ ہی جے ڈی ایس کے ریاستی سربراہ ایچ ڈی کمارسوامی کی قیادت میں کرناٹک میں تین دن پرانی بی ایس ایڈی یورپا حکومت بلاخر آج ختم ہوگئی جب چیف منسٹر ایڈی یورپا نے اعلان کیا کہ وہ ایوان میں اکثریت کے امتحان میں سامنا نہیں کرگے بلکہ اس سے ...

ہندوستانی سیاست کے لئے تاریخی دن: سدارمیا، چندرابابو نائیڈو، ممتابنرجی اوردیگر لیڈروں نے جمہوریت کی جیت قرار دیا

کرناٹک اسمبلی میں اکثریت ثابت کرنے سے پہلے بی جے پی لیڈر یدی یورپا نے وزیراعلیٰ عہدہ سے استعفیٰ دے دیا۔ یدی یورپا کے استعفیٰ پر تمام لیڈروں نے ردعمل ظاہر کیا۔