بابری مسجد کی شہادت کے 25سال : بابری مسجد کی تعمیر نو کے مطالبے کو لیکر ایس ڈی پی آئی کرناٹک کی جانب سے ریاست گیر احتجاجی مظاہروں کا انعقاد

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 7th December 2017, 11:36 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

ہمیں ملک کی عدلیہ پر بھرپوریقین ہے اور قومی امید ہے کہ عدالت کا فیصلہ بابری مسجد کے حق میں ہی آئے گا: عبدالحنان 
بنگلورو،6؍ دسمبر (ایس او نیوز؍ پریس ریلیز) سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا کرناٹک کی جانب سے بابری مسجد کی تعمیر نو کو مطالبے کو لیکر ریاست بھر میں ایس ڈی پی آئی کارکنان نے احتجاجی مظاہرہ درج کیا۔ ان احتجاجی مظاہروں میں ہزاروں کی تعداد میں پارٹی کارکنان اور عوام شریک ہے۔ بابری مسجد کی شہادت کے 25سال بعد بھی انصاف نہ ملنے پر اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ایس ڈی پی آئی کرناٹک کے ریاستی صدر عبد الحنان نے اپنے پیغام میں کہا ہے کہ 6دسمبر1992 کو صرف بابری مسجد نہیں ٹوٹی ہے بلکہ ہندوستان کی جمہوری اقدار ،عدلیہ ، انتظامیہ اور مقننہ کے اصول بھی ٹوٹے ہیں۔ بابری مسجد کے شہادت کے بعد کانگریس کے وزیر اعظم نرسمہا راؤ نے وعدہ کیا تھا بابری مسجد کو اس جگہ تعمیر کیا جائے لیکن یہ وعدہ آج تک پورا نہیں ہوا۔ بابری مسجد معاملے میں جواہر لعل نہرو، راجیو گاندھی اور نر سمہا راؤ کی بابری مسجد کی شہادت میں جو خاموش رول تھی اس کو ہم بھلا نہیں سکتے ۔ وی ایچ پی ، آر ایس ایس اور بجرنگ دل نے تو بابری مسجدکو مسمار کرنے کے لیے علی الاعلان سازش کی تھی لیکن کانگریسی قائدین کی خاموش سیاست بھی تاریخ کا ایک حصہ ہے۔ ہاشم انصاری نے بابری مسجد کے لیے تقریبا 60سال تک قانونی لڑائی لڑتے لڑتے اس دارفانی سے کوچ کرگئے۔ فیض آباد کی کورٹ سے لیکر الہ آ باد لکھنو بنچ تک اور پھر سپریم کورٹ میں آج بھی بابری مسجد مقدمہ میں ہم انصاف کے منتظر ہیں۔ اس دوران کئی جج ریٹائر ہوئے ، کئی جج کے تبادلے ہوئے ، کئی مجرمین کا انتقال ہوا اور مجرمین اورقاتل اپنے سزا کے انتظار میں ہیں۔ بابری مسجد کے شہادت کے 10دن بعد جسٹس لبرہان کمیشن کو بٹھایاگیا اور مطالبہ کیا گیا کہ صرف تین مہینوں کے اندر وہ اپنی رپورٹ پیش کرے لیکن رپورٹ دنیا کی سب طویل انکوائری ثابت ہوئی اور لبرہان کمیشن نے 17سال بعد اپنی رپورٹ پارلیمنٹ کو پیش کیا ۔ ریاستی صدر عبدالحنان نے کہا کہ مسجد کی تعمیر نو سے ہی ملک کی تعمیر ممکن ہے۔ عدالت کے باہر بابری مسجد کا مسئلہ حل ہو نہیں سکتا یہ مسلمانوں کے خلاف ایک سازش ہے۔ انہوں نے قوی امید ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ 8فروری 2018 کو بابری مسجد کے حق میں فیصلہ آئے گا۔ سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا بابری مسجد کی تاریخ کو نسل در نسل منتقل کرتے رہے گی اور انصاف ملنے تک اپنی جدجہد جاری رکھے گی۔ 

ایک نظر اس پر بھی

جی ایس ٹی انٹیلی جنس کے ڈائریکٹوریٹ جنرل کے گروگرام زونل یونٹ دو تاجروں کو گرفتار کیا

جی ایس ٹی انیٹلی جنس کے ڈائریکٹوریٹ جنرل کے گروگرام زونل یونٹ نے سامان کی حقیقی سپلائی کے بغیر ان پٹ ٹیکس کریڈٹ( آئی ٹی سی) انوائسیز دھوکہ دہی سے جاری کرنے کے معاملے میں دو تاجروں وکاس گوئل اور راجوسنگھ کو گرفتار کیا ہے۔

بھساول ۔ناسک ٹاڈا مقدمہ: سرکاری گواہ نے پولس کی جانب سے لالچ دیئے جانے کا اعتراف کیا

۲۴؍ سال پرانے بھساول۔ناسک ٹاڈا مقدمہ میں گذشتہ کل تیسر ے سرکاری گواہ کی گواہی عمل میں آئی جس کے دوران اس نے جمعیۃ علماء مہاراشٹر (ارشد مدنی) کی جانب سے مقرر کردہ دفاعی وکیل شریف شیخ کی جرح کی دوران اعتراف کیا

کئی مہینوں تک 5 ویں کلاس کی طالبہ کی عصمت دری؛ پرنسپل اور ٹیچر کررہے تھے ریپ، حاملہ ہونے پر ہوا انکشاف؛ پولس کے بھی اُڑ گئے ہوش

پٹنہ پولس نے ایک نجی اسکول کے پرنسپل اور ایک ٹیچر کو ایک گیارہ سالہ لڑکی کی کئی مہینوں سے عصمت دری کرنے کے الزام میں گرفتار کرلیا ہے جن کے تعلق سے بتایا گیا ہے کہ پرنسپل اور ٹیچر پانچویں کلاس کی طالبہ کو  بلیک میل کرتے ہوئے بار بار اُس کا ریپ کررہے تھے۔

تین طلاق پر حکومت کی آرڈیننس قابل مذمت مسلمانوں کو محکوم بنانے کی کوشش ۔ ایس ڈی پی آئی

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI)نے مرکزی کابینہ کی جانب سے تین طلاق پر آر ڈیننس کومنظوری دیئے جانے کی سخت مذمت کرتے ہوئے اسے ملک کے مسلمانوں کو محکوم بنانے کی ناکام کوشش قرار دیا ہے۔آرڈیننس کے نفاذ سے تین طلاق ایک غیر ضمانتی جرم مانا جائے گا اور کم از کم تین سال کی جیل کی سزا ...

رافیل جنگی طیارہ سودے کو لے کر راہول گاندھی نے کیا وزیر دفاع سے استعفیٰ کا مطالبہ

کانگریس صدر راہل گاندھی نے وزیر دفاع نرملا سیتا رمن پر رافیل جنگی طیارہ سودے کو لے کر لگا تار جھو ٹ بولنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے جھوٹ کی پول کھلتی جا رہی ہے اس لئے اب وہ اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیں۔