ٹیکسٹائل اور دستکاری کے فروغ کے لیے اسکیمیں اوراقدامات جاری:حکومت 

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 10th August 2018, 3:29 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی:9/ اگست (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)حکومت ٹیکسٹائل اور دستی مصنوعات خاص طور پرٹیکنالوجی کا درجہ بڑھانے ، بنیادی ڈھانچہ کی تشکیل، صلاحیت سازی جس میں ترمیم شدہ ٹکنالوجی کا درجہ بڑھانے کے فنڈ کی اسکیم (اے ٹی یوایف ایس) پاور ٹیکس انڈیا اسکیم بھی شامل ہیں۔ ٹیکسٹائل پارکوں کی یکجہتی کی اسکیم ، سمرتھ -ٹیکسٹائل سیکٹر میں صلاحیت سازی کی اسکیم ، سلک سماگرا یعنی ریشم کو ترقی دینے کی اسکیم، شمال مشرقی خطے کی ٹیکسٹائل کو فروغ دینے کی اسکیم (این ای آر ٹی پی ایس ) نیشنل ہنڈی کرافٹ ڈیولپمنٹ پروگرام (این ایچ ڈی پی) اور کمپریہنسیو ہنڈی کرافٹس کلسٹر ڈیولپمنٹ اسکیم (سی ایچ سی ڈی ایس) پر بھی عمل کیا جارہا ہے۔حکومت نے کپڑا سازی اور اس سے متعلق شعبے میں سرمایہ کاری ، روزگار اور برآمدات کو بڑھاوا دینے کے لئے ایک خصوصی پیکج شروع کیا ہے۔ ا س خصوصی پیکج کا مقصد روزگار کے ایک کروڑ تک مواقع پیدا کرنا اور امریکہ کی طرف سے برآمدات کو 31 ارب ڈالر تک بڑھانا اور تین سال میں 80 ہزار کروڑ کا سرمایہ راغب کرنا تھا۔ اب تک اس پیکج کے ذریعہ 5728 کروڑ روپے کی فاضل برآمدات ہوچکی ہیں اور 25345 کروڑ روپے کی فاضل سرمایہ کاری حاصل کی جاسکی ہے۔اے ٹی یو ایف ایس کے تحت 7 سال کے لئے یعنی 16-2015 سے 22-2021 تک مجاز مشینری کے لئے ایک بار کا سرمایہ فراہم کرنے کے لئے 17822 کروڑ روپے منظور کئے گئے ہیں۔حکومت نے این ای آر ٹی پی ایس کے تحت 18.18 کروڑ روپے کی لاگت سے بودھ جونگ نگر، اگرتلہ میں کپڑا سازی کا ایک مرکز قائم کیا ہے (یہ تین یونٹو ں پر مشتمل ہے جس میں سے ہر ایک میں سلائی کی 100-100 مشینیں لگی ہوئی ہیں۔ این ای آر ٹی پی ایس کے تحت اگرتلہ میں 3.71 کروڑ روپے کی لاگت سے سلک کاایک پرنٹنگ یونٹ بھی قائم کیا ہے۔ اس کی صلاحیت تقریباً 1.5 لاکھ میٹر سلک کے کپڑے کی سالانہ پرنٹنگ کرنا ہے ۔ حکومت نے تریپورہ میں ہنڈلوم سیکٹر کو فروغ دینے کے لئے بلاک کی سطح پر تین کلسٹر قائم کئے ہیں۔ ان پر 4.28 کروڑ روپے لاگت آئی ہے۔ٹیکسٹائل کے وزیر مملکت جناب اجے ٹمٹا نے آج لوک سبھا میں ایک سوال کے تحریری جواب میں یہ اطلاع فراہم کی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

مولانا اسرارالحق قاسمی بلا تفریق مذہب و ملت غریبوں کے مسیحا تھے : نتیش کمار بہار کے وزیر اعلیٰ نے کشن گنج پہنچ کر اہل خانہ سے کیا تعزیت کا اظہار

ملک کے معروف عالم دین وممبرپارلیمنٹ مولانا اسرارالحق قاسمی کی رحلت پر ان کے اہل خانہ سے تعزیت کے لئے آج بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار کشن گنج پہنچے اور ان سے ملاقات کرکے مرحوم کی وفات پر اپنے گہرے رنج و غم کا اظہار کیااور مولانا کی روح کے سکون کے لئے دعاء کی۔

پانچ ریاستوں میں بی جے پی کی شرمناک شکست کے بعد لکھنو میں لگے ’یوگی لاؤ، دیش بچائو‘ کے بینرس؛ نو نرمان سینا کے خلاف معاملہ درج

انچ ریاستوں میں ہوئے الیکشن میں بی جے پی  کو جس شرمناک  شکست  کا سامنا کرنا پڑا، اُس کے نتیجے میں  اتر پردیش نو نرمان سینا نے لکھنو میں جگہ جگہ مودی کی مخالفت میں بڑے بڑے بینرس لگادئے  جس پر بڑا تنازعہ پیدا ہوگیاہے۔البتہ انتظامیہ کو واقعے کی اطلاع ملتے ہی محکمہ میں  ہنگامہ مچ ...

مولانااسرارالحق قاسمی نے تعلیمی وسماجی میدانوں میں بے مثال خدمات انجام دیں، ملی کونسل کے زیر اہتمام تعزیتی اجلاس کا انعقاد

ملک کے مقبول و ممتاز عالم دین اور ممبر آف پارلیمنٹ مولانا اسرارالحق قاسمی کی رحلت پر ملی کونسل کولکاتا کی جانب سے تعزیتی نشست منعقد کی گئی،جس میں شہر کی اہم علمی وسماجی شخصیات نے شرکت کی اور مولانا مرحوم کی بے مثال ملی خدمات اور قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کیاگیا۔ اس موقع پر ...

شراکت داری سے ہی اہداف کاحصول ممکن ، پی ایم این سی ایچ شراکت فورم میں وزیراعظم کاخطاب 

وزیراعظم نے پی ایم این سی ایچ شراکت فورم میں خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ صرف شراکت داری سے ہم اپنے اہداف کوحاصل کر سکتے ہیں۔شہریوں کے مابین شراکت داری ،برادریوں کے مابین شراکت داری ، ممالک کے مابین شراکت داری ہمہ گیر ترقی ایجنڈا اس کی جھلک ہے۔ ملک متحدہ کوششوں سے آگے بڑھ چکے ہیں۔ ...

لکھنؤ میں ’یوگی فارپی ایم‘ کے ہورڈنگ،’جملے بازی کا نام مودی، ہندوتو کا برانڈ یوگی‘

اتر پردیش کی دارالحکومت لکھنؤ میں لگے کچھ ہورڈنگ بدھ کو بحث میں آگئے، جس پر’یوگی فارپی ایم‘ لکھا ہے۔ایک طرف مودی کی تصویر ہے تو دوسری طرف یوگی کی۔مودی کی تصویر نیچے لکھا ہے’جملے بازی کا نام مودی اور یوگی کی تصویر نیچے لکھا ہے’ہندوتو کا برانڈ یوگی‘۔دارالحکومت میں 2-3مقامات ...

کیا ’مودی کا جادو‘ ختم ہو رہا ہے:تجزیہ 

بھار ت کی پانچ ریاستوں میں ہوئے اسمبلی انتخابات میں زبردست شکست کے بعد یہ سوال شدت سے پوچھا جا رہا ہے کہ آیا حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کا زوال شروع ہوچکا ہے اور وزیر اعظم نریندر ’مودی کا جادو‘ ختم ہو رہا ہے؟اسی کے ساتھ حکمران جماعت بی جے پی میں ایسی چہ مگوئیاں بھی شروع ...