نیا عہدہ سنبھالنے سے انکار کرتے ہوئے آلوک ورما نے دیا استعفیٰ؛ حکومت کی نیت پر کانگریس نے اٹھائے سوال۔ناگیشورراؤنے لیا،سی بی آئی ڈائرکٹر کا چارج

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 12th January 2019, 9:08 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی۔11جنوری(ایجنسیز)مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) کے ڈائرکٹر کے عہدے سے ہٹائے گئے آلوک ورما نے فائر بریگیڈ سروس کے ڈائرکٹر جنرل کا عہدہ سنبھالنے سے انکار کرتے ہوئے آج استعفیٰ دے دیا۔سی بی آئی ڈائرکٹر کی انتخابی کمیٹی (سلیکٹ کمیٹی) نے چہارشنبہ کی رات ان کو عہدے سے ہٹانے کا فیصلہ کیا تھا جس کے بعد حکومت نے انہیں فائربریگیڈ سروس، سیول ڈیفنس اور ہوم گارڈز کا ڈائریکٹر جنرل مقرر کیا تھا۔ورما نے نئی ذمہ داری قبول کرنے سے انکار کر دیا اور عملہ جات وزارت کے سکریٹری کو مرسلہ استعفیٰ نامہ میں کہا کہ انہیں آج سے ہی سبکدوش مانا جائے۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی کمیٹی نے فیصلہ کرنے سے قبل سنٹرل ویجلینس کمیشن کی رپورٹ پر اپنا موقف رکھنے کا موقع نہیں دیا۔ انہوں نے کہا کہ عدالتی عمل میں مداخلت کی گئی تھی اور پورے عمل کو الٹ دیا گیا تاکہ انہیں سی بی آئی ڈائریکٹر کے عہدے سے ہٹایاجاسکے۔مرکزی تفتیشی ایجنسی کے سابق ڈائرکٹر نے کہا ہے کہ وہ31جولائی2017کو ریٹائرمنٹ لے چکے ہوتے ۔تاہم انہیں 31 جنوری2019 تک سی بی آئی ڈائرکٹرکے عہدے پر مقرر کیا گیا۔ انہیں یہ ذمہ داری مقررہ مدت تک دی گئی تھی۔فائر بریگیڈ سرویس، سیول ڈیفنس، اور ہوم گارڈز کے ڈائرکٹر جنرل کے عہدے سے ریٹائرمنٹ کی جو عمرہے اس سے وہ پہلے ہی گزر چکے ہیں۔ لہٰذا، انہیں آج سے ریٹائرما نا جائے۔ورما نے یہ بھی لکھا ہے کہ چہارشنبہ کو کیا گیا فیصلہ ان کے کام کاج کے بارے میں تو اشارہ دیتا ہے اور اس بات کا بھی ثبوت دیتا ہے کہ کوئی بھی حکومت مرکزی ویجیلینس کمیشن کے ذریعے ایک ادارہ کے طور پر سی بی آئی کے ساتھ کس طرح سلوک کرے گی۔

یہ اجتماعی غور و فکر کا لمحہ ہے۔آلوک ورما کو سی بی آئی ڈائریکٹر کے عہدے سے ہٹائے جانے پر کانگریس نے بھی مودی حکومت پر کئی سنگین الزامات عائد کئے ہیں۔ کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے کہا کہ رافیل کی جانچ سے بچنے کے لئے مودی حکومت نے آلوک ورما کو سی بی آئی سے ہٹایا ہے۔ سنگھوی نے کہا کہ سی وی سی مودی حکومت کی معاون کے طور پر کام کر رہی ہے۔سی بی آئی ڈائرکٹر کو ہٹانے کی بنیاد سی وی سی رپورٹ تھی، جبکہ سی وی سی نہ تو کسی کی تقرری کرتی ہے اور نہ ہی کسی کو برطرف کر سکتی ہے۔اس اقدام سے حکومت خود ہی بے نقاب ہو گئی ہے کیوں کہ سی وی سی کی طرف سے لگائے گئے10 الزامات میں سے6کو سی وی سی نے خود بھی بے بنیاد قرار دیا ہے۔ بقیہ 4الزامات میں سے ایک کے حوالہ سے سی وی سی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رشوت کے لین دین کا کوئی ثبوت نہیں ہے اور شواہد کی تصدیق کے لئے مزید تفتیش کی ضرورت ہے۔‘‘سنگھوی نے مودی حکومت پر سی وی سی کے دفتر کا غلط استعمال کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ’’استھانہ کے الزامات پر کمیٹی نے آلوک ورما کو ڈائرکٹر کے عہدے سے برطرف کر دیا ہے جبکہ ہائی کورٹ نے استھانہ کی عرضی کو خارج کر کے ان کے خلاف جانچ سلسلہ وار طریقہ سے مکمل کرنے کا حکم سنایا ہے۔ یہ پورا کارنامہ حکومت نے اپنے آپ کو رافیل یا دوسرے معاملات سے بچانے کے لئے انجام دیا ہے۔‘‘

ناگیشورراؤ سی بی آئی ڈائرکٹر: انڈین پولیس سرویس (آئی پی ایس) کے سینئر افسر مسٹر آلوک ورما کے مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) کے ڈائرکٹر کے عہدے سے ہٹائے جانے کے بعد ایڈیشنل ڈائریکٹر ایم ناگیشور راؤ نے ڈائرکٹر کے عہدے کا چارج سنبھال لیا ہے ۔سی بی آئی کی جانب سے آج یہاں دی گئی اطلاع کے مطابق مسٹر راؤ نے کل رات نو بجے چارج سنبھالا۔ جبکہ انڈین پولیس سروس کے 1986بیاچ کے افسر راؤ کو اگلے حکم تک سی بی آئی کے ڈائرکٹر کے عہدے کا چارج سنبھالنے کے لئے کہا گیاہے ۔ راؤفی الحال تحقیقاتی ایجنسی کے ایڈیشنل ڈائرکٹر کے طور پر تعینات ہیں۔

استھانہ کو دھچکا،بدعنوانی کے الزام کی جانچ جاری رہے گی: دریں اثناء مرکزی تفتیشی بیورو(سی بی آئی)کے خصوصی ڈائرکٹر راکیش استھانہ کو بدعنوانی کے الزام کے معاملے میں جمعہ کو دہلی ہائی کورٹ سے سخت دھچکا لگا۔عدالت نے اس معاملہ میں استھانہ کے خلاف جانچ جاری رکھنے کا حکم دیاہے ۔جسٹس نجمی وزیری نے اس سلسلہ میں اپنے حکم میں کہاکہ استھانہ کے خلاف بدعنوانی کے الزامات کے معاملے کی جانچ جاری رہے گی ۔واضح رہے کہ خصوصی ڈائریکٹر کے خلاف سی بی آئی کے سابق سربراہ آلوک ورما نے بدعنوانی کے معاملے میں ایف آئی آر درج کرنے کے احکامات دیے تھے ۔ عدالت نے استھانہ اور ڈپٹی ڈائرکٹر دیویندر کمار کی ایف آئی آر رد کرنے کی عرضی بھی خارج کردی ۔جسٹس وزیری نے استھانہ اور کمار کے خلاف جانچ10ہفتے میں پوری کرنے کا حکم دیا ہے ۔ایف آئی آر میں جس طرح کے الزامات ہیں ان کی جانچ ضروری ہے ۔

مودی نے سی بی آئی کاوقارمجروح کیا:ممتا:
وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے بی جے پی پر سی بی آئی کا سیاسی استعمال کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ مرکزی حکومت نے اپنے مفادات کیلئے جانچ ایجنسی سی بی آئی کے وقار کو مجروح کردیا ہے ۔وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے سی بی آئی ڈائرکٹر آلوک ورما کی برطرفی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی مسلسل سی بی آئی کا غلط استعمال کررہی ہے اور یہ سب سیاسی فائدے کیلئے کیا گیا ہے ۔بی جے پی نے سی بی آئی کے وقار کو مکمل طور پر مجروح کردیا ہے ۔

ایک نظر اس پر بھی

الیکشن کمیشن کا حلف نامہ - گجرات میں راجیہ سبھا انتخابات قانون کے مطابق، کمزور پڑ رہی کانگریس 

گجرات میں راجیہ سبھا انتخابات کو لے کر کانگریس کی درخواست پر الیکشن کمیشن نے حلف نامہ داخل کیا ہے الیکشن کمیشن نے دو سیٹوں پر الگ الگ انتخابات کرانے کے اپنے فیصلے کو برقرار رکھا۔

بی ایس این ایل کی حالت خراب؛ ملازمین کو جون کی تنخواہ دینے کے لیے نہیں ہیں رقم

رکاری ٹیلی کام کمپنی بی ایس این ایل نے حکومت کو ایک خط  بھیجا ہے، جس میں کمپنی نے آپریشنز جاری رکھنے میں تقریبا نااہلی ظاہر کی ہے۔کمپنی نے کہا ہے کہ رقم میں  کمی کے سبب کمپنی کے ملازمین کو  جون ماہ کی تنخواہ  تقریبا 850 کروڑ روپے  دے پانا مشکل ہے۔کمپنی پر ابھی قریب 13 ہزار کروڑ ...