ہیگڈے کے خلاف پھر ایک بار دیش پانڈے نے کھولی زبان، کہا؛ جھوٹے بیانات کے سہارے عوام کو گمراہ کرنے کا کام بند کیا جانا چاہئے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 6th March 2019, 12:24 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

ڈانڈیلی 6؍مارچ (ایس او نیوز) ضلع انچارج اور ریوینیو وزیر آر وی دیشپانڈے پر عوام الزام لگارہے تھے کہ  وہ    کنیرا ایم پی اور مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڈےکے خلاف کبھی اپنا منہ نہیں کھولتے، مگر اب  غالباً دوسری دیش پانڈے نے  ہیگڈے  پر نشانہ سادھتے ہوئے کہا ہے کہ گزشتہ پانچ سالوں میں کسی بھی قسم کا ترقیاتی کام انجام نہ دینے والے مرکزی وزیر کو پارلیمانی انتخابات قریب آنے پر جھوٹے بیانات کے سہارے عوام کو گمراہ کرنے کاکام بند کرنا چاہیے۔

ڈانڈیلی میں میڈیا سے گفتگو کے دوران دیشپانڈے نے کہا کہ ہم جیسے عوامی نمائندوں کو سچائی اور حقیقت بیانی سے ہی کام لینا چاہیے۔انتخابات کو نظر میں رکھ کر عوام کے سامنے جھوٹے بیانات دینا اور انہیں گمراہ کرنا کسی کے لئے مناسب نہیں ہے۔میں نے کیا کچھ کام انجام دئے ہیں وہ مجھے معلوم ہیں۔ میں یہ باتیں عوام کے سامنے بھی کہہ سکتا ہوں۔ بالکل اسی طرح مرکزی وزیر(اننت کمار) کو بھی ان کے ذریعے انجام دئے کام کے تعلق سے ہی بات چیت کرنی چاہیے، اس سے  ہٹ کر غلط بیانی سے کام لینا ٹھیک نہیں ہے۔

انہوں نے مثال دیتے ہوئے کہا کہ بی جے پی کے مقامی لیڈروں نے کہا تھا کہ ڈانڈیلی کے آلناور میں پندرہ دنوں کے اندر ریل کی آمد و رفت شروع ہوجائے گی۔ جبکہ مرکزی وزیراس تعلق سے کچھ اورہی بات کہہ رہے ہیں۔ جس کا مطلب یہ ہے کہ خود مرکزی وزیر کو اصل حقیقت کا پتہ ہی نہیں ہے۔اس ریلوے اسٹیشن کے لئے میں نے اس وقت کوششیں کی تھیں جبکہ مرکز میں ملیکاارجن کھرگے ریلوے منسٹر تھے۔اس کے بعد دیگر وزرائے ریل منی اَپا اور سریش پربھو سے بھی بات چیت کرتے ہوئے یہاں ٹرین سروس شروع کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔میں آج بھی اس کے لئے کوشش کررہاہوں۔متعلقہ افسران کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہوں۔اس کے بارے میں میرے پاس دستاویزی ثبوت موجود ہیں۔ اب اگر مرکزی وزیر(اننت کمار) نے کبھی کوئی کوشش کی ہوتو اس تعلق سے عوام کو بتائیں۔

دیشپانڈے نے ڈانڈیلی میں نیشنل اسکل ڈیولپمنٹ سینٹر کے تعلق سے بتایا کہ یہ مرکزی حکومت کا ادارہ ہے۔ اسے اننت کما ر ہیگڈے اپنی کوششوں کا نتیجہ بتارہے ہیں۔ تھوڑی بہت سبسیڈی ہوسکتی ہے ، لیکن اس میں ایک حصہ ریاستی حکومت کا بھی ہوتا ہے اور اس کا قیام ریاستی حکومت نے ہی کیا ہے۔ اگر یہ مرکزی وزیر کے دائرۂ کار میں ہے تو پھر ایک بار بھی انہوں نے اس مرکز میں پہنچ کر اس کی ترقی کے سلسلے میں جائزہ کیوں نہیں لیا؟

ضلع انچارج وزیر نے کہا کہ جوئیڈا کے بجارکوننگ علاقے میں بجلی کنکشن فراہم کرنے کے راستے میں میری طرف سے رکاوٹ پیدا کرنے کی جو بات کہی گئی ہے وہ مضحکہ خیز ہے۔ وہاں 14گاؤں اور 50مجرے ہیں۔ ان میں سے 43مجرے میں بجلی کنکشن دیا جاچکا ہے اب صرف 7مجرے باقی ہیں۔ اس بات کی خبر وزیر اننت کمار ہیگڈے کو نہیں ہے۔اسی طرح جوئیڈا کے کُنبی طبقے کو پسماندہ قبیلے میں شامل کرنے کے لئے میں ریاستی سطح سے مرکزی سطح تک مسلسل کوشش میں لگا ہوا ہوں۔ہمپی یونیورسٹی سے ریسرچ کرکے اس کی رپورٹ ریاستی حکومت کو دینے کے ساتھ مرکزی حکومت کو تجویز بھی بھیج دی گئی ہے۔اس ضمن میں مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڈے نے کیا کیا کوششیں کی ہیں اور کتنی مرتبہ پارلیمنٹ میں اس مسئلے کو اٹھایا ہے، یہ باتیں بھی عوام کو بتائیں تو اچھا ہوگا۔جنگلاتی زمین کے حقوق اورجنگل واسیوں کے انخلاء سے متعلق بھی دیشپانڈے نے بتایا کہ اس معاملے میں وہ عوام کے ساتھ ہیں۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف ریاستی حکومت نے بھی رِٹ داخل کی تھی۔ اب اس فیصلے پر اسٹے ملا ہے۔اس لئے عوا م کو خوف و دہشت کا شکار ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو آننت کمار ہیگڈے کو ہرگز ووٹ نہ دیں؛ بھٹکل میں ماہی گیروں سے پرمود مدھوراج کی اپیل

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو  آپ کو چاہئے کہ  ماہی گیروں کی پرواہ نہ کرنے والے بی جے پی اُمیدوار آننت کمار ہیگڈے  کو ہرگز ووٹ  نہ دیں۔ ملپے سے نکلی سات ماہی گیروں پر مشتمل بوٹ لاپتہ ہوکر  پانچ ماہ ہوچکے ہیں مگر مرکزی وزیر آننت کمار ہیگڈے کو ماہی گیروں کی پرواہ ہی نہیں ہے۔ ...

منگلورو میں ایک عجیب سانحہ۔بوتھ کے آخری ووٹر نے ووٹ دینے کے بعد لی آخری سانس

پاجیرو گاؤں کے پانیلا میں ایک شخص نے پولنگ بوتھ میں اپنا ووٹ ڈالنے کے بعد گھر لوٹتے ہی دم توڑ دیا۔پانیلا کے رہنے والے والٹر ڈیسوزا(۴۰سال) گردے کی بیماری میں مبتلا تھاجس کے لئے وہ بہت عرصے سے زیرعلاج تھا۔

پارلیمینٹ گلبرگہ کے مسلمانوں سے کھڑگے کے حق میں قیمتی ووٹ دینے ڈاکٹر اصغر چلبل کی اپیل 

ڈاکٹراصغرچلبل سابق صدر گلبرگہ اربن ڈیولوپمینٹ اتھارٹی نے ایک صحافتی بیان میں کہا ہے کہ ملک کے موجودہ پارلیمانی انتخابات نہایت اہمیت کے حامل ہیں ۔2019کے پارلیمانی انتخابات مسلمانوں کے لئے آر پار کی لڑائی کی طرح سمجھے جارہے ہیں ۔پچھلے پانچ سالوں میں بی جے پی سرکار میں دلتوں ، ...

سدارامیا کے دوبارہ وزیراعلیٰ بننے میں غلط کیا ہے؟ کس کے نصیب میں کیا لکھا ہے کوئی نہیں جانتا : کمار سوامی

سدارامیا کے دوبارہ وزیر اعلیٰ بننے میں غلط کیا ہے ؟ اس قسم کا چونکانے والا بیان ریاستی وزیر اعلیٰ کمار سوامی نے دیا ہے ۔ ضلع کے مدے بہال تعلقہ میں اخباری نمائندوں سے انہوں نے کہا کہ کس کے نصیب میں کیا لکھا ہے ، کسی کو معلوم نہیں ہے ۔

کرناٹک کا سب سے اہم حلقہ گلبرگہ؛ کیا ا س بار کانگریس اپنا قلعہ بچا پائے گی..؟ (آز: قاضی ارشد علی)

ملک بھر میں چل رہے 17ویں لوک سبھا کے انتخابات کے دو مراحل مکمل ہوچکے ہیں ۔تیسرا مرحلہ 23؍اپریل کو مکمل ہوگا ۔ریاستِ کرناٹک کے28پارلیمانی حلقہ جات میں سے14حلقہ جات میں رائے دہی مکمل ہوچکی ہے ۔باقی رہ گئے14حلقہ جات میں الیکشن پروپگنڈہ زوروں پر ہے۔18؍اپریل کو ہوئے14حلقہ جات میں ...

دیوگوڑا پر یدی یورپا کا طنز، 7 سیٹ پر لڑ رہے ہیں اور بنناچاہتے ہیں وزیر اعظم

حال ہی میں سابق وزیر اعظم اور جنتا دل (سیکولر) کے سربراہ ایچ ڈی دیوگوڑا نے کہا تھا کہ انتخابات کے بعد اگر راہل گاندھی وزیر اعظم بنتے ہیں تو وہ ان کا ساتھ دیں گے۔ان کے اسی بیان پر طنز کستے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیڈر بی ایس یدی یورپا نے کہا ہے کہ دیوگوڑا سات سیٹوں پر لڑ رہے ہیں ...