روس پر پابندیاں بدستور عائد رہنا چاہیے : جرمن چانسلر

Source: S.O. News Service | By Staff Correspondent | Published on 2nd November 2018, 8:51 PM | عالمی خبریں |

برلن 2نومبر( آئی این ایس انڈیا ؍ایس او نیوز)جرمن چانسلر انگلیلا میرکل نے یورپی یونین کی جانب سے روس پر عائد پابندیوں میں توسیع کی حمایت کی ہے۔ ان کا یہ بیان مشرقی یوکرائن کے جاری تنازعے کے پس منظر میں ہے۔جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے یوکرائن کے صدر پیٹرو پوروشینکو کے ساتھ کییف میں ایک پریس کانفرنس میں کہاکہ جرمنی روس پر عائد پابندیوں کے حق میں ہے۔میرکل کے بقول اگر مشرقی یوکرائن میں جاری تنازعے کی شدت میں کمی ہوتی ہے تو ان پابندیوں میں بھی نرمی کی جانا چاہیے۔ افسوس کی بات ہے کہ فائر بندی پر ابھی تک پائیدار انداز میں عمل درآمد نہیں ہو سکا ہے اور فوجی مسلسل ہلاک ہو رہے ہیں۔یوکرائن کے صدر پوروشینکو نے اس تناظر میں کہا کہ مشرقی یوکرائن کے علاقے ڈونباس میں خواتین اور بچے بھی اس تنازعے کی نذر ہو رہے ہیں اور صورتحال انتہائی کشیدہ ہے۔پوروشینکو نے متنازعہ علاقوں میں گیارہ ستمبر کو ہونے والے انتخابات کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا۔ ان کے بقول ان جعلی انتخابات کی کوئی وقعت نہیں۔ اس تنازعہ کا واحد حل یوکرائنی قانون کے مطابق شفاف، غیر جانبدار اور جمہوری انتخابات ہیں۔مشرقی یوکرائن میں 2014 سے حکومتی دستے روس نواز باغیوں سے لڑ رہے ہیں۔ ماسکو حکومت ان باغیوں کی مکمل پشت پناہی کرتی ہے۔ اقوام متحدہ کے اندازوں کے مطابق اس تنازعے میں اب تک دس ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔اس علاقے میں فائر بندی کے لیے جرمن چانسلر انگیلا میرکل کی کوششوں سے منسک امن معاہدہ بھی طے پایا تھا۔ تاہم اس معاہدے کی تواتر سے خلاف ورزی ہوتی رہی ہے۔یورپی یونین نے 2014میں روس کی جانب سے جزیرہ نما کریمیا سے الحاق کے بعد پہلی مرتبہ ماسکو کے خلاف پابندیاں عائد کی تھیں۔ تاہم روس نے جمعرات کو یوکرائن کے خلاف پابندیوں کا اعلان کیا۔یوکرائن کے صدر پیٹرو پوروشینکو کے مطابق ان کی حکومت کے خلاف عائد کردہ روسی پابندیاں دراصل کییف کے لیے ایک ا عزاز کی بات ہے۔ پوروشینکو نے مزید کہا کہ یوکرائنی علاقوں میں تعینات روسی فوجیوں کو واپس چلا جانا چاہیے۔

ایک نظر اس پر بھی

امریکہ میں بھارتی طلباء کی تعداد میں مسلسل پانچویں سال اضافہ

 بین الاقوامی تعلیمی ایکسچینج سے متعلق آج جاری اوپن ڈورس رپورٹ  2018  کے مطابق، گزشتہ سال میں امریکہ میں تعلیم حاصل کرنے والے ہندوستانی طلبا کی تعداد 5.4 فیصد بڑھکر 196،271 ہو گئی۔ یہ مسلسل پانچواں سال ہے کہ امریکہ میں اعلی تعلیم حاصل کرنے والے ہندوستانی طلبا کی تعداد میں اضافہ ...

سویفٹ کا ایرانی بنکوں کو الگ کرنے کا اعلان

عالمی سطح پر رقوم کی ترسیلات کے سب سے بڑے نیٹ ورک "سویفٹ سسٹم" نے امریکا کی جانب سے ایران پر اقتصادی پابندیوں کے اعلان کے بعد ایرانی بنکوں کو مرحلہ وار سسٹم سے الگ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

پہلی عالمی جنگ کی صدی تقریب میں ٹرمپ کی شرکت 

امریکی صدر ڈونالڈ جمعے کی علی الصبح دورۂ یورپ کے لیے روانہ ہو رہے ہیں، جہاں وہ اور درجنوں دیگر عالمی سربراہان ’آرمزٹائس‘ معاہدے کی صد سالہ تقریبات میں شرکت کریں گے، جس کے نتیجے میں پہلی عالمی جنگ کا خاتمہ ہوا۔