بی جے پی کو اقتدار پر لانے کے لئے آر ایس ایس کی طرف سے لاشوں پر سیاست کی جاتی ہے؛ سابق بجرنگ دل لیڈرمہیندر اکمارکا خلاصہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 4th December 2018, 12:05 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

منگلورو4؍دسمبر (ایس او نیوز) بجرنگ دل کے سابق لیڈر مہیندر اکمارنے آر ایس ایس پر سیدھا نشانہ سادھتے ہوئے کہا کہ وہ اکثر و بیشتر ہندوؤں کی موت کا سیاسی فائدہ اٹھانے کی کوشش کرتی ہے۔

مہیندرا کمار شانتی کرن باجوڈی میں منعقدہ دوروزہ ادبی فیسٹول ’جان نوڈی‘ کے اختتامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے آر ایس ایس کو مختلف زاویوں سے آڑے ہاتھوں لیا۔انہوں نے کہا کہ ’’جب شیموگہ میں ایک ہندو نوجوان کا بہیمانہ قتل ہوا تھا تو مجھ سے کہا گیا کہ میں اس قتل کو سیاسی فائدے کے لئے استعمال کروں ۔ میں نے ان کی بات نہیں مانی۔ یہ لوگ بی جے پی کو اقتدار پر لانے کے لئے یہ طریقہ کار اپناتے ہیں۔اوریہی آر ایس ایس کا یک نکاتی پروگرام ہے ۔‘‘

انہوں نے کہا کہ سماجی انتشار اور منافرت کی وجہ سے فائدہ اٹھانے کی تاک میں رہنے والے’’ راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کو ہندو لڑکیوں کی آبروریزی سے جتنی خوشی ہوتی ہے ، اتنی خوشی کسی اور کو نہیں ہوسکتی۔کیونکہ کسی مسلم نوجوان کی طرف سے ظلم و زیادتی ہوتی ہے تو اس کا بھرپور فائدہ سنگھ کی طرف سے اٹھایا جاتا ہے۔ 

مہیندرا کمار نے صاف گوئی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ’’سنگھ پریوار پسماندہ قبائل اور پسماندہ طبقات(ایس سی ؍ایس ٹی) کے نوجوانوں کو اپنے مفادات پورے کرنے کے لئے استعمال کرتا ہے۔ انہیں دوسرے طبقات کے خلاف اکساکر بدامنی کا ماحول پیدا کرتا ہے۔ پھر جب تشدد برپا ہوتا ہے تو سنگھی لیڈر غائب ہوجاتے ہیں، اور پسماندہ طبقات کے نوجوانوں جیلوں میں بند کیے جاتے ہیں۔اس کے بعد اقتدار پر آنے والے بی جے پی کے لیڈر عیش کرتے ہیں ، جبکہ ہندو تنظیموں کے لئے کام کرنے والے بہت سارے رضاکاروں کے خلاف متعدد مقدمات درج ہوجاتے ہیں۔‘‘

سابق بجرنگ دل لیڈر نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ’’آر ایس ایس ہندودھرم کے اصولوں کے خلاف کام کرتا ہے۔ اس کے پاس ہندو سماج کے مسائل کے لئے کوئی حل نہیں ہے۔ حد یہ ہے کہ جو کوئی دلتوں کے مفاد کے لئے آواز اٹھاتا ہے اسے آر ایس ایس مخالف بتادیا جاتا ہے۔سنگھ نہ ہندوؤں کا حامی ہے اورنہ دلتوں کا۔اس کے نظریات ایک طرح کا نشہ ہے۔ جو اس کا عادی ہوجاتا ہے اس کے لئے اس سے باہر نکلنا مشکل ہوجاتا ہے۔وشوا ہندو پریشد کا مطلب پورا ہندو سماج نہیں ہے ۔ بلکہ ہندو سماج تو اس سے کہیں زیادہ وسیع تر ہے۔‘‘

ایودھیا میں ہوئے دھرم سنسد کے تعلق سے نرموہی اکھاڑا کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے مہیندراکمار نے کہاکہ وہ سیاسی اجلاس تھا۔وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت ہر محاذ پر ناکام ہوگئی ہے۔ ا ن کے ترکش میں کوئی تیر نہیں بچا ہے۔ اس لئے اس وقت عوام کے سامنے انہوں نے ایودھیا میں مندر تعمیر کا مسئلہ اچھال کر رکھ دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ’’ جب میں بجرنگ دل میں تھا تو ترقی پسند سوچ رکھنے والوں کا بڑا مخالف تھا۔مگرجب وہاں پر چل رہے چھوت چھات کی وجہ سے میں وہاں سے باہر نکلا تو میں نے محسوس کیا کہ کسی کے فرقے یا مذہب کی وجہ سے اس شخص کی مخالفت کرنادرحقیقت غداری کرنے جیسا کام ہے۔اس لئے حقیقی ہندوتوا یہی ہے کہ مظلوموں کے حق میں آواز بلند کی جائے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

بیندور: معمولی تکرار کے نتیجے میں جان لیوا حملہ۔تین خواتین سمیت پانچ افراد زخمی

دوگھرانوں کے افراد کے بیچ معمولی تکرار کے بعدکرمنجیشور نامی مقام پر چھ افراد پر مشتمل ایک ٹولی نے گھر میں گھس کر جان لیوا حملہ کیا جس میں ڈنڈے اور تلواروں کا استعمال کیا گیا اور ا س کے نتیجے میں دو خواتین سمیت پانچ افراد زخمی ہوگئے۔

جنوبی کینرا ایم پی نلین کمار کٹیل نے کی مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کی حمایت

بھوپال سے بی جے پی کی پارلیمانی امیدوار پرگیہ سنگھ ٹھاکور نے مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کی ستائش کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ ایک اصلی دیش بھکت تھا۔ اس متنازعہ بیان کی ہرطرف سے مذمت ہورہی تھی مگراس کی حمایت میں اب ضلع جنوبی کینرا کے ایم پی نلین کمار کٹیل اور ضلع شمالی ...

سی پی آئی ایم کارکن قتل معاملے میں آر ایس ایس اور بی جے پی کے 7کارکنان کوسزائے عمر قیداورفی کس 1لاکھ روپے جرمانہ

کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا (ماکسسٹ) کے پی پویتھرن نامی کارکن کوقتل کیے جانے کے 12سال بعد اس جرم کا ارتکاب ثابت ہونے پر آر ایس ایس اور بی جے پی سے تعلق رکھنے والے 7کارکنان کو عدالت نے عمر قید کی سزا سنائی ہے۔

بھٹکل میونسپالٹی انتخابات کے لئے51 اُمیدواروں نے داخل کیا پرچہ نامزدگی؛ 9 اُمیدوار بلامقابلہ منتخب ہونا طئے؛ 29 مئی کو ہوں گے انتخابات

بھٹکل میونسپالٹی کے لئے 29 مئی کو ہونے والے انتخابات میں جملہ 23 سیٹوں کے لئے 51 اُمیدواروں نے  53 پرچہ نامزدگیاں داخل کی ہیں۔ جمعرات کو پرچہ داخل کرنے کی آخری تاریخ تھی جس کے ساتھ ہی  یہ صاف ہوگیا ہے کہ جملہ 23 سیٹوں میں  سے 9 سیٹوں پر کوئی مقابلہ نہیں ہوگا کیونکہ ان سیٹوں  پر صرف ...

بنگلور میں 23/ مئی کو ووٹوں کی گنتی کے دوران امتناعی احکامات نافذ

23 مئی کو لوک سبھاانتخابات کے نتائج کا اعلان ہورہا ہے۔ انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے مرحلے میں کوئی ناخوشگوار صورتحال پیدا نہ ہونے پائے اس کے لئے شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے 23مئی کی صبح چھ بجے سے شہر بھر میں امتناعی احکامات نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کرناٹک کے کندگول اور چنچولی حلقوں میں آج ہوگی پولنگ؛ 85 پولنگ بوتھوں کو قرار دیا گیا ہے حساس

ریاست کرناٹک  کے دو اسمبلی حلقوں کندگول اور چنچولی کے لئے آج اتوار کو  ووٹ ڈالے جائیں گے۔ دونوں حلقوں پر کامیابی درج  کرنے کے لئے کانگریس جے ڈی ایس اتحاد اور بی جے پی نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ہے۔

محمد محسن کی فرض شناسی کو پھر نشانہ بنانے کی کوشش، الیکشن کمیشن تادیبی کارروائی کے لئے ہائی کورٹ سے رجوع

اڈیشہ میں انتخابی مشاہد کے طور پر متعین کرناٹک کیڈر کے آئی اے ایس افسر محمد محسن نے وزیراعظم مودی کے ہیلی کاپٹر کی تلاشی لے کر جس فرض شناسی کا ثبوت پیش کیا اسے فرض شکنی قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن نے نہ صرف انہیں معطل کردیا بلکہ اب ایسا لگتا ہے کہ الیکشن کمیشن نے انہیں نشانہ ...