گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس کے بعد مرکزی حکومت کو دھمکی ۔۔۔۔۔ اعتماد کا اداریہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 19th June 2017, 12:31 PM | ملکی خبریں | مہمان اداریہ |

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس میں مرکزی حکومت کو دھمکی دی گئی ہے کہ اگر وہ 2023تک ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر نہیں کروائے گی تو ہندو تنظیمیں خود وہاں مندر تعمیر کرلیں گے کوئی قانون یا عدالت کا پاس و لحاظ نہیں رکھا جائے گا اس کے علاوہ اس اجلاس میں گائے کو قومی جانور قرار دینے کا بھی مطالبہ کیا گیا بڑے جانوروں کے ذبیحہ پر مکمل پابندی تبدیلی مذہب پر مکمل امتناع سے متعلق قرار دادتیں بھی منظور کی گئی۔ چہارشنبہ کو شروع ہوئے اس چار روزہ ہند وکنویشن میں 132دائیں باوز ہندو تنظیموں کے 300سے زائد نمائندوں نے شرکت کی۔ اجلاس میں ہندو تنظیموں کے نمائندوں نے اس بات کی شکایت کی کہ حکومت ان افراد کے مطالبات کو تسلیم نہیں کررہی ہے جنہوں نے اس حکومت کو ووٹ دیا۔ 

اجلاس میں اس بات کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ یکساں سیول کوڈ کے نفاذ ، رام مندر کی تعمیر، تبدیلی مذہب پر روک تھام کے مطالبات کو لے کر مہم میں شدت پیدا کی جائے گی۔ آئندہ ماہ 45ضلع سطح اور 10ریاستی سطح کے اجلاس طلب کئے جائیں گے۔ مختلف ہندو تنظیموں نے بی جے پی کو دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ آج اس اقتدار ان ہندو تنظیموں کی وجہ سے ہی ملاہے۔ ان تنظیموں کی خواہشات اور امیدوں کو پورا کرنا حکومت کی ذمہ داری ہے۔ یہ بھی شکایت کی گئی کہ حکومت بنگلہ دیشی افراد کو ان کے ملک واپس بھیجنے میں ناکام ہوچکی ہے جبکہ بی جے پی نے انتخابات سے قبل اس کا وعدہ کیا تھا۔ 

اس ہندو کنویشن کی شروعات ہی شر انگیزی سے ہوئی۔ مدھیہ پردیش کی ایک سادھوی نے تقریر کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ جو لوگ گائے کا گوشت کھاتے ہیں انہیں پھانسی دی جائے حکومت اس سلسلہ میں ایک قانون بنائے ۔ سادھوی نے ہندوں سے یہ بھی کہا کہ وہ خود کے دفاع کیلئے اپنے پاس ہتھیار رکھیں۔ اس شرانگیزی اور نفرت پر مبنی تقریر کے باوجود گوا کی بی جے پی حکومت نے سادھوی کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی جبکہ اپوزیشن کانگریس نے فوری مقدمہ درج کرنے کی مانگ کی تھی۔ گوا میں ان دائیں بازو ہندو تنظیموں کا س طرح کا اجلاس ملک میں دستور اور قانون کی حکمرانی کیلئے ایک چیالنج ہے۔ پہلے اجلاس منعقد کرنے کی اجازت دی گئی اور اجلاس کے بعد مرکزی وریاستی حکومتوں کی جانب سے کوئی کارروائی نہیں کی گئی جس سے شرپسند اور شر انگیز عناصر کے حوصلے مزید بلند ہورہے ہیں۔ ملک کی بین الاقوامی سطح پر بدنامی ہورہی ہے۔ مصبرین نے دریافت کیا ہے کہ اگر کوئی ماوسٹ اس طرح کا اجلاس رکھتے اور اور ملک کو تبدیل کرنے کی بات کرتے تو کیا ان کے خلاف کارروائی نہیں کی جاتی ؟ ہندوستان ایک سیکولر جمہوری مملکت ہے۔ اس کو ہندو مملکت بنانے کا مطالبہ کرنا ایک جرم ہے۔ 

حیرت کی بات یہ ہے کہ ملک کے وزیر اعظم نریندر مودی ان تمام سرگرمیوں پر خاموش ہیں۔ ایک امریکی صحافی کے ٹویٹ سے متعلق مودی معلومات رکھتے ہیں لیکن ان کی ناک کے نیچے مخصوص طبقے کے افراد کو برسر عام پیٹ پیٹ کر ہلاک کیا جارہا ہے۔ مسلسل دائیں بازو ہندوتنظیموں سے تعلق رکھنے والے عناصر شرانگیزی کررہے ہیں اس کے باوجود نریندر مودی خاموش ہیں۔ 

وزیر قانون روی شنکر پرساد نے اب بیان دیا ہے کہ اس طرح کے عناصر اور گاء رکھشکوں کے خلاف کارروائی ہوگی لیکن تا حال کوئی کارروائی نہیں ہوئی۔ اخلاق ، نعمان، زائد کے قاتل ضمانت پر رہا ہوگئے ۔ان عناصر کے خلاف حکومت غنڈہ ایکٹ اور قومی سلامتی کا قانون لگاتے ہوئے انہیں جیل میں بند کرسکتی تھی لیکن افسوس ایسا نہیں کیا گیا۔ 

بشکریہ:  اعتماد، حیدرآباد

ایک نظر اس پر بھی

کاغذات نامزدگی بھرنے کے بعد رام ناتھ کووندنے کہا،جب سے گورنر بنایاتب سے میری کوئی پارٹی نہیں

صدارتی انتخابات کے لئے این ڈی اے کے امیدوار رام ناتھ کووند نے نامزدگی بھر دی ہے۔اس دوران ان کے ساتھ پی ایم مودی، سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی اور بی جے پی صدر امت شاہ بھی موجود تھے۔

کرناٹک کا دیرینہ خواب شرمندۂ تعبیر بنگلور شہر اسمارٹ سٹی کی فہرست میں شامل

بشمول راجدھانی بنگلور ملک کے 30؍شہروں کو مرکزی حکومت نے اسمارٹ سٹی کے طورپر ترقی دینے کے لئے منتخب کرلیاہے۔ مرکزی وزیر برائے شہری ترقیات وینکیا نائیڈونے آج اس کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ مرکزی اسمارٹ سٹی اسکیم کے تحت ان 30؍شہروں کو ترقی دی جائے گی۔

سری نگر میں ڈی ایس پی محمد ایوب کا قتل، ہنس راج اہیر بولے قصورواروں کو چھوڑا نہیں جائے گا

 سری نگر میں بھیڑ کی طرف سے ڈی ایس پی کو پیٹ پیٹ کر بغیر وجہ قتل کئے جانے پر سرینگر سے دہلی تک غصہ ہے۔وزیر داخلہ ہنس راج اہیر نے بھی اس واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے مجرم لوگوں کے خلاف سخت کارروائی کی بات کی ہے۔ہنس راج اہیر کا کہنا ہے کہ جمعرات کاواقعہ بہت افسوسناک ہے

میراکی امیدواری پربوکھلایابی جے پی خیمہ ! یوگی نے کہا، لوگوں کو لڑوانے کے لئے بنایا میرا کمار کو امیدوار؛ کانگریس کاجوابی حملہ،دلت کوامیدواربنانے سے بی جے پی کے گناہ نہیں دھلیں گے

این ڈی اے کے صدارتی امیدوار رام ناتھ کووند نے اپنا نامزدگی بھر دیا ہے۔نامزدگی کے دوران این ڈی اے نے اپنی پوری طاقت دکھائی۔اس دوران کووند کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی، بی جے پی صدر امت شاہ، بی جے پی کے قدآور لیڈر لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی بھی موجود رہے،

نئی دہلی قادری مسجدمیں ہزاروں لوگوں نے لگائے بھارت۔فلسطین زندہ باد کے نعرے

شاستری پارک کی سب سے بڑی قادری مسجد میں یوں تو جمعہ کی نماز کے لئے عام طور پر ہزاروں نمازی آتے ہیں لیکن رمضان کے آخری جمعہ کی نماز میں یہ تعداد چار گنا ہو جاتی ہے. نماز کے بعد فلسطین کے حق میں ہوئے احتجاج میں تقریبا دس ہزار لوگ جمع ہو گئے اور بھارت اور فلسطین زندہ باد کے نعرے لگانے ...

جانوروں کی فروخت پر پابندی کے نام پر تنازعہ کھڑاکرنے کی ضرورت نہیں تھی (پرجا وانی کا اداریہ۔۔۔کنڑا سے ترجمہ)

ذبح کرنے کے مقصد سے گائے، بیل، سانڈ، بھینس ، چھوٹے بچھڑے اور اونٹوں کو جانوروں کے میلے اور مارکیٹ میں بیچنے پرمرکزی حکومت کی طرف سے لگائی گئی  پابندی سے ایک بڑا تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے۔یہ پابندی اصل میں کوئی مناسب تدبیر ہی نہیں ہے۔ بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کو گؤ ...

ہوشیار، خبردار۔۔۔۔۔۔۔از قلم : مدثر احمد

جب ہندوستان کی سرزمین پر مغل ، نواب اور نظام حکومت کررہے تھے اس وقت انکے پاس جو مال و دولت اور خزانے تھے انہیں اگر وہ صحیح طریقے سے استعمال کرتے تو آج کے مسلمان کسی کی مدد کے طلبگار نہ ہوتے اور مسلمان قوم ایک عزت دار قوم بن کر اس ملک میں دوسروں پر حکومت کرتی یا کم از کم حکومتیں ...

طلاق: مسلمانوں کا ایجنڈ ا کیا ہو؟ کنڑا ہفتہ وار’’ سنمارگہ‘‘ میں ایڈیٹر عبدالقادر کوکیلا کی تحریر

ملک بھر میں جاری طلاق کی بحث کا سدباب دوطریقوں سےکرسکتےہیں۔ پہلا یہ ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی مرکزی حکومت پر پورا الزام دھر کر خاموش ہوجائیں۔ دوسرا انہی موضوعات کو بنیاد مان کر مسلم ملت کی داخلی ترقی کے لئے حکمت عملی ترتیب دیں ۔ طلاق کے گرد گھومنے والی ٹی وی ...

جاسوسی اپنے ملک کے لئے؟ .... از : ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

پاکستان کی فوجی عدالت نے ہندوستان کے سابق نیوی کمانڈر کلبھوشن سدھیر یادو کو سزائے موت سنائی ہے۔ جس پر ہندوستان کا شدید ردعمل فطری ہے۔ خود پاکستانی میڈیا نے فوجی عدالت کے اس فیصلے کو بعید از قیاس اور ہند۔پاک کشیدگی میں مزید اضافے کا سبب قرار دیا۔ کلبھوشن کی سزا پر عمل آوری کب ...