کرناٹک میں بارش کی تباہی؛ 3 مہینوں میں 100 سے زائد افراد جاں بحق

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th June 2018, 11:59 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،13جو ن (ایس او  نیوز) کرناٹک میں گزشتہ 3 مہینوں میں جو زبردست بارش ہوئی ہے اس کے نتیجہ میں 100 سے زائدافراد اور 322 جانوروں کی موت واقع ہوئی ہے ۔ ان تباہی پر قابو پانے کیلئے درکار اقدامات نہیں کئے گئے ۔ماہرین کا کہنا ہے کہ ضلعی انتظامیہ کی کوششوں سے ان اموات پر قابو پایا جاسکتا تھا ۔ ریاست کے کسی بھی حصہ میں گرج کے ساتھ بارش ہونے کے متعلق محکمۂ موسمیات کی طرف سے متعلقہ ڈپٹی کمشنروں کو اطلاع مل جاتی ہے لیکن جن علاقوں میں تباہی ہونے کا امکان رہتا ہے ان مقامات کو یہ اطلاع نہیں ملتی جس کے نتیجہ میں بارش کے موسم میں ہر سال جانیں تلف ہونے کی تعداد میں سالہا سال اضافہ ہوتا ہے ۔ گرج اور بجلی گرنے سے جو تباہی ہوتی ہے اس پر قابو پانے کی غرض سے بارش ہونے سے 3 گھنٹے قبل ہی محکمۂ موسمیات کے ریجنل دفتر سے ریاست کے تمام ڈپٹی کمشنروں کو بارش کی تفصیل روانہ کردی جاتی ہے ۔ گزشتہ ایک سال سے ای۔ میل کے ذریعہ یہ اطلاع تمام ڈپٹی کمشنروں کو روانہ کی جارہی ہے لیکن توقع کے مطابق اس کا نتیجہ برآمد نہیں ہورہا ہے ۔ اگر محکمۂ موسمیات کی طرف سے جاری کردہ تفصیلات پر عمل کیا جاتا تو تباہی پر قابو ممکن ہوسکتا تھا ۔ محکمۂ موسمیات کے باوثوق ذرائع سے ملنے والی اطلاع کے مطابق محکمہ کی طرف سے ریکارڈر کے ذریعہ بادل چھانے ، ہواؤں کا رُخ کا پتہ لگاکر گرج اور بجلی گرنے والے علاقوں کی نشاندہی کی جاتی ہے ۔ اس کی تمام تفصیل متعلقہ ڈپٹی کمشنروں کو روانہ کی جاتی ہے ۔ ڈپٹی کمشنروں کی یہ ذمہ داری ہوتی ہے کہ وہ متعلقہ علاقوں کو روانہ کریں ۔ ایسا نہ کرنے کی صورت میں معصوم افراد کی جانیں تلف ہوتی ہیں۔دوسری طرف ڈپٹی کمشنروں نے محکمہ موسمیات کی اس بات پر برہمی کا اظہار کیا ہے ۔ ڈپٹی کمشنروں کا کہنا ہے کہ محکمۂ موسمیات کی طرف سے روانہ کردہ پیغام میں یہ اطلاع نہیں دی جاتی کہ متعلقہ جگہ پر گرج کے ساتھ بجلی گرنے والی ہے ۔ اس کے باوجود آئندہ دنوں میں یہ اطلاع متعلقہ علاقوں کو روانہ کرنے کیلئے مناسب اقدامات کئے جائیں گے ۔ اس کے لئے دیہی سطح پر ماہرین کو تعینات کیا جائے گا ۔ ان کے ذریعہ بارش سے ہونے والی تباہی کے متعلق رپورٹ روانہ کی جائے گی ۔ انہوں نے بتایا کہ بارش کے سبب جنوبی کنڑا ضلع میں سب سے زیادہ لوگوں کی موت واقع ہوئی ہے ۔بلگام کے ڈپٹی کمشنر ضیاء اللہ کے مطابق بارش کے 3 گھنٹے قبل محکمۂ موسمیات سے بارش کے متعلق جو تفصیلات فراہم ہوتی ہے اس سے ندی کے کنارے زندگی بسر کرنے والوں کو ہوشیار کرنے اور انہیں تحفظ فراہم کرنے میں آسانی ہوگی ۔ محکمہ موسمیات کی طرف سے فراہم کی جانے والی تفصیل کو عوام پر پہنچانے کیلئے ہوبلی سطح پر افسران کا تعینات کیاگیا ہے۔ واٹس ایپ گروپ کے ذریعہ بھی پیغام روانہ کیا جارہا ہے ۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بنگلورومیٹرو برڈج میں خرابی کا نائب وزیراعلیٰ پرمیشور نے معائنہ کیا

شہر کے ایم جی روڈ پر ٹرینٹی سرکل کے قریب ایم جی روڈ بیپنا ہلی میٹرو روٹ کے پلر نمبر 155کے قریب ایک بیم میں دراڑ کا آج نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے معائنہ کیا اور کہاکہ اس سلسلے میں مرمت کا کام جاری ہے۔

زہریلے کھانے کا معاملہ، اعلیٰ سطحی جانچ کرانے سدارمیاکا مطالبہ

کرناٹک کے سابق وزیر اعلیٰ اور مخلوط حکومت کے کورابطہ کمیٹی کے صدر سدارمیا نے سُلوادی گاؤں کے مرمَّا مندر میں زہریلا کھانہ کھانے سے 11 عقیدتمندوں کی موت اور 80 افراد کے بیمار ہونے کے معاملے کی اعلیٰ سطحی جانچ کا مطالبہ کیا ہے ۔