سرکاری دفاتر کی سیکورٹی سخت کرنے وزیر داخلہ رام لنگا ریڈی کی میٹنگ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th March 2018, 8:28 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،9؍مارچ(ایس او نیوز)پچھلے دنوں لوک آیوکتہ جسٹس وشواناتھ شٹی پر قاتلانہ حملے کے بعد ریاست کی اہم سرکاری عمارتوں اور دفاتر پر سیکورٹی کو سخت کرنے کی ضرورت کافی شدت سے محسوس کی جارہی ہے۔ خاص طور پر ودھان سودھا ، وکاس سودھا ، لوک آیوکتہ کے دفتر اور دیگر عمارتوں میں سیکورٹی کو مستعد کرنے پر آج وزیر داخلہ رام لنگا ریڈی نے اعلیٰ پولیس عہدیداروں کے ساتھ ایک اہم میٹنگ کی ، میٹنگ میں طے کیاگیا کہ دفتر لوک آیوکتہ ، ہائی کورٹ ، ودھان سودھا، وکاس سودھا ، ایم ایس بلڈنگ، ادیوگ سودھا ، سرکاری گیسٹ ہاؤزس وغیرہ میں سیکورٹی کو پارلیمان ہاؤز کی مانند سخت کیا جائے، تاکہ دوبارہ اس طرح کے واقعات رونما نہ ہوسکیں جیسے کہ دفتر لوک آیوکتہ میں رونما ہوا۔ رام لنگا ریڈی نے اس ضمن میں اعلیٰ افسران کے مشوروں کو بغور سنا اور ان میں سے بیشتر کو عملی جامہ پہنچانے کیلئے اقدامات کی ہدایت دی۔ میٹنگ میں اڈیشنل چیف سکریٹری برائے داخلہ، پولیس کمشنر سنیل کمار اور محکمۂ داخلہ اور پولیس فورس کے دیگر اعلیٰ عہدیداران بھی موجود تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

کانگریس لیجسلیچر پارٹی میٹنگ میں سدرامیا پھر غالب، ہنگامہ خیزی کے اندیشوں کے برعکس میٹنگ میں کسی نے بھی زبان نہیں کھولی

حسب اعلان 22دسمبر کو ریاستی کابینہ میں توسیع کی تصدیق کرتے ہوئے آج سابق وزیراعلیٰ اور کانگریس لیجسلیچر پارٹی لیڈر سدرامیا نے تمام کانگریسی اراکین کو خاموش کردیا۔

مندروں کو دئے جانے والے فنڈز کو فرقہ وارنہ رنگ دینے بی جے پی کی مذموم کوشش، اسمبلی میں اسپیکر نے فرقہ پرست جماعت کی ایک نہ چلنے دی

وقفۂ سوالات میں بی جے پی رکن اسمبلی سی ٹی روی کی طرف سے سوالات تک خود کو محدود رکھنے کی بجائے ایک معاملے پر بحث شروع کرنے کی کوشش کو جب اسپیکر رمیش کمار نے روک دیا تو اس بات پر بی جے پی اراکین اور اسپیکر کے درمیان نوک جھونک شروع ہوگئی۔

ریاست کرناٹک میں 800 نئے سرویرس کا تقرر

وزیر مالگزاری آر وی دیش پانڈے نے آج ریاستی اسمبلی کو بتایاکہ ریاست بھر میں اراضی سروے کی ذمہ داری ادا کرنے کے لئے محکمے کی طرف سے 800نئے سرویرس کا تقرر کیا گیا ہے۔

پسماندہ طبقات کے سروے کی رپورٹ تیاری کے مراحل میں: پٹ رنگا شٹی

ریاستی وزیر برائے پسماندہ طبقات پٹ رنگا شٹی نے کہا ہے کہ سابقہ سدرامیا حکومت کی طرف سے درج فہرست طبقات کی ہمہ جہت ترقی کو یقینی بنانے کے مقصد سے جو سماجی ومعاشی سروے کروایا گیا تھا اس کے اعداد وشمار کو کمپیوٹرائز کرنے کا عمل جاری ہے۔