گنیش تہوارکیلئے پولیس نے کوئی پابندی نہیں لگائی: ڈی جی پی

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 12th August 2017, 11:44 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو:12/ اگست(ایس او نیوز) ریاستی پولیس کے ڈائرکٹر جنرل آر کے دتہ نے بعض ہندو تنظیموں کے ان الزامات کو بے بنیاد قرار دیا کہ ریاستی پولیس کی طرف سے گنیش تہوار کے اہتمام پر بندشیں عائد کی گئی ہیں۔ آج اس سلسلے میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ڈی جی پی نے بتایاکہ ریاست کے مختلف شہروں میں گنیش تہوار کے دوران حفاظتی بندوبست کی ذمہ داری متعلقہ پولیس کمشنروں کو سونپی گئی ہے، جبکہ اضلاع میں یہ ذمہ پولیس سپرنٹنڈنٹوں کے سپرد رہے گا۔ انہوں نے کہاکہ مقامی تنظیموں ، اداروں اور انجمنوں کی سہولت کے حساب سے گنیش تہوار کے متعلق یہی افسران فیصلہ لیں گے۔اس تہوار کے اہتمام پر کسی طرح کی بندش عائد کرتے ہوئے ریاستی پولیس ہیڈکوارٹر سے کوئی حکم جاری نہیں ہوا ہے۔ انہوں نے کہاکہ گنیش تہوار کے اہتمام کیلئے پولیس کی طرف سے عموماً جو ضوابط وضع کئے گئے ہیں اس بار بھی صرف انہی کی پابندی کی جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ تہوار سے قبل دیگر برادران وطن کے ساتھ امن کمیٹی میٹنگ کا اہتمام لازمی قرار دیا گیا ہے۔جہاں بھی گنیش جلوس نکالا جائے گا وہاں منتظمین کو امن برقرار رکھنے کیلئے اپنی طرف سے رضاکار متعین کرنے ہوں گے۔ ڈی جی پی نے بتایاکہ یوم آزادی کے موقع پر بھی حفاظتی انتظامات پر خصوصی توجہ دی گئی ہے اور ریاست بھر میں پولیس فورس کو مستعد رکھا گیا ہے۔ ریاستی حکومت کی طرف سے پولیس افسران کے تبادلوں کو معمول کے مطابق عمل قرار دیتے ہوئے ڈی جی پی نے واضح کیا کہ پولیس کے روز مرہ کے کام کاج میں ریاستی حکومت کی طرف سے کسی بھی طرح کی مداخلت نہیں کی جارہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بنگلورو میں 394 ایکڑ سرکاری زمین پر قبضہ جلد بحال ہوگا: ڈی سی

شہر کے ڈپٹی کمشنر وی شنکر نے کہا ہے کہ شہر بنگلور میں غیر قانونی قبضوں میں جاچکی 15 ہزار ایکڑ سرکاری زمین پر قبضہ بحال کرنے کیلئے ضروری قدم اٹھائے جائیں گے۔اے ٹی رام سوامی کمیٹی کی بنیاد پر شہر میں 394ایکڑ زمین پر سرکاری قبضہ فوری طور پر بحال کیاجائے گا۔

اگلے انتخابات میں یوگیشور کو شکست یقینی: ڈی کے شیوکمار

ریاستی وزیر توانائی ڈی کے شیوکمار نے چن پٹن اسمبلی حلقہ کے رکن اسمبلی سی پی یو گیشور کے کانگریس سے استعفیٰ پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ یوگیشور آنے والے اسمبلی انتخابات میں جس پارٹی سے چاہے کھڑے ہوجائیں وہ انتخابات جیتنے والے نہیں ہیں۔