نیتاجی سبھاش چندر بوس کی یاد میں سبھاش چندر بوس میوزیم کا افتتاح 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 24th January 2019, 12:11 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،24جنوری(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) جدوجہد آزادی کے ہیرو کو یاد کرتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی نے آج نیتاجی سبھاش چندر بوس کے 122 ویں یوم پیدائش پر لال قلعہ میں سبھاش چندر بوس میوزیم کا افتتاح کیا اور انہیں گلہائی عقیدت نذرکیے۔وزیراعظم نے نیتاجی سبھاش چندر بوس اور انڈین نیشنل آرمی کے میوزیم کا دورہ کرتے ہوئے کہا کہ میں نیتاجی سبھاش چندر بوس کو اْن کی جینتی پر خراج عقیدت پیش کرتاہوں۔وہ ایک ایسے جانبازتھے جنہوں نے بھارت کو آزاد کرانے کے تئیں عہد کیا تھااور انہوں نے ایک باوقار زندگی گزاری۔ انہوں نے کہا کہ ہم ان کے نظریات کو پورا کرنے اور ایک مضبوط بھارت قائم کرنے کے لئے عہد بستہ ہیں۔ انہوں نے یہ مزید کہا کہ ان درو دیوار سے تاریخ خود کو دہرارہی ہے۔ اسی عمارت میں بھارت کے بھادر بیٹے کرنل پریم سہگل ، کرنل گربخش سنگھ ڈھلو اور میجر شاہنواز خان پر سامراجی حکمرانوں نے مقدمہ چلایا تھا۔ انہوں نے ان فوٹو گراف کو دیکھا جس میں سبھاش چندر بوس اور انڈین نیشنل آرمی کی تاریخی تفصیلات نظر آتی ہیں۔ وزیراعظم نے نیتاجی اور انڈین نیشنل آرمی (آئی این اے) سے منسوب کچھ نواردات بھی دیکھے، جن میں لکڑی کی کرسی ، نیتاجی کی تلوار ، میڈل ، بیج اور آئی این اے کی یونیفارم شا مل ہیں۔وزیراعظم نے ان تمام فوٹوگرافس ، پینٹنگ اور اخباروں کے تراشے وغیرہ کا بھی معائنہ کیا جن میں جلیان والا باغ قتل عام کے بارے میں بتایا گیا ہے۔ یہ تمام چیزیں یادِ جلیان میوزیم میں لگائی گئی ہیں۔ اس میوزیم کا مقصد آنے والوں کو 1919 میں جلیان والا باغ کے قتل عام اور پہلی جنگ عظیم کے دوران ہندوستانی فوجیوں کی قربانیوں کو یاد دلانا ہے۔وزیراعظم نے 1857 یعنی ہندوستان کی پہلی جنگ آزادی کے موضوع پر قائم میوزیم کا بھی دورہ کیا اور 1857 کی جنگ آزادی کی تاریخ پیش کرنے والی تصاویر کو دیکھا جس میں جنگ آزادی کے دوران ہندوستانیوں کی بہادری اور قربانیوں کو اجاگر کیا گیا ہے۔ ان میوزیموں میں ہمارے مجاہدین آزادی کی قربانیوں کو بھی اجاگر کیا گیا ہے۔وزیراعظم نے اسی مقام پر ہندوستانی آرٹ کی نمائش ’’درشیہ کلا‘‘ میوزیم کا بھی دورہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ’’درشیہ کلا میں گرودیو ٹیگور کے فن کو دیکھنا، آرٹ کے شائقین کے لئے ایک عظیم تحفہ ہے۔ ہم سبھی جانتے ہیں کہ گرودیو ٹیگور ایک شاندار مصنف تھے لیکن ان کا تعلق آرٹ کی دنیا سے بھی تھا۔ انہوں نے مختلف موضوعات پر بہت سی پینٹنگ بنائیں۔ گرودیو کے فن کی نمائش بین الاقوامی سطح پر بھی کی گئی ہے۔ وزیراعظم نے ٹوئیٹ کیا کہ میں خاص طور پر آرٹ کے شائقین پر زور دیتا ہوں کہ وہ درشیہ کلا کا دورہ کریں، جو آپ کو ہندوستانی آرٹ اور کلچر کے بہترین پہلوؤں کو پیش کرے گی۔ ہندوستان کے ممتاز آرٹسٹ جیسے راجا روی ورما، گرودیو ٹیگور، امرتیہ شیرگل، ابانندر ناتھ ٹیگور ، نندلال بوس ، گگنیندر ناتھ ٹیگور، سیلول مکھریجیا اور جیمنی رائے کی پنٹنگس نمائش میں موجود ہیں۔میوزیم کا افتتاح کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ بھارت کی مالا مال تاریخ وثقافت سے متعلق چار میوزیموں کا افتتاح کرنا میرے لئے بڑی عزت افزائی ہے۔ ان چاروں میوزیم کو کرانتی مندر کا نام دیا گیا ہے۔ اس کمپلیکس میں نیتاجی سبھاش چندر بوس اور انڈین نیشنل آرمی کی میوزیم ، یادِ جلیان میوزیم (جو جلیان والا باغ اور پہلی جنگ عظیم پر مبنی ہے)، ہندوستان کی پہلی جنگ آزادی ۔ 1857 پر میوزیم اور تین صدیوں پر محیط 450 سے زیادہ شہ پاروں پر مبنی بھارتی فن کی میوزیم درشیہ کلا شامل ہیں۔کرانتی مندر ہمارے عظیم مجاہدین آزادی کی انقلابی جو ش و خروش اور جرات مندی کے لئے خراج عقیدت ہے۔ یوم جمہوریہ سے پہلے یہ میوزیم ہماری عظیم تاریخ اور نوجوانوں کے درمیان رابطے کو مزید مستحکم کریں گی اور شہریوں میں حب والو طنی کے جذبے میں اضافہ کریں گی۔

ایک نظر اس پر بھی

سیلاب اور بارش سے کیرالہ، کرناٹک، مہاراشٹر وغیرہ بے حال، اَب دہلی پر منڈلایا خطرہ

ہریانہ کے ہتھنی كنڈ بیراج سے گزشتہ 40 برسوں میں سب سے زیادہ آٹھ لاکھ سے زیادہ کیوسک پانی جمنا میں چھوڑے جانے کے بعد دہلی اور ہریانہ میں دریاکے کنارے کے آس پاس کے علاقوں میں سیلاب کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے اور اگلے 24 گھنٹے انتہائی سنگین بتائے جا رہے ہیں۔