امریکی سفارت خانے کی یروشلم منتقلی کی دنیا بھر مذمت

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 16th May 2018, 12:57 PM | عالمی خبریں |

واشنگٹن،15 مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) امریکہ کے بہت سے اتحادیوں اور مخالفین نے اسرائیل میں اپنا سفارت خانہ تل ابیب سے یروشلم منتقل کرنے کے فیصلے پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے مشرق وسطیٰ میں کشیدگیوں اور تناؤ میں اضافہ ہو گا۔برطانوی وزیر اعظم تھریسا مے کے ایک ترجمان نے کہاہے کہ مشرق وسطیٰ میں امن کے کسی حتمی فیصلے تک پہنچنے سے پہلے ہم امریکہ کی جانب سے اپنا سفارت خانہ یروشلم منتقل کرنے اور یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے سے اختلاف کرتے ہیں۔فرانس کے صدر ایمانوئل مکرون نے غزہ میں پیر کے روز ہونے والے تشدد کی مذمت کی ہے جس میں اسرائیلی سپائیوں کی فائرنگ سے 52 فلسطینی ہلاک ہو گئے تھے۔صدر مکرون نے کہا ہے کہ وہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کیے جانے کے فیصلے کے نتائج کے متعلق کئی بار خبردار کر چکے ہیں۔صدر مکرون کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ صدر آنے والے دنوں میں علاقے کے تمام کرداروں سے بات کریں گے۔روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاروف نے ماسکو کا اعتراض ایک بار پھر دوہراتے ہوئے کہا کہ ہمیں پختہ یقین ہے کہ اس طریقے سے یک طرفہ طور پر بین الاقوامی کمیونٹی کے فیصلے کو بدلنا غیر مناسب اقدام ہے۔عرب دنیا کے بہت سے راہنماؤں نے بھی اس اقدام کی مذمت کی ہے۔ لبنان کے وزیر اعظم سعد حریری نے اسے جارحیت قرار دیا ہے اور ایران کے وزیر خارجہ جواد ظریف نے اسے ایک انتہائی شرمناک دن سے تعبیر کیا ہے۔سعودی عرب نے غزہ میں فلسطینیوں پر اسرائیلی فائرنگ کی مذمت کی ہے جس میں درجنوں مظاہرین ہلاک اور بڑی تعداد میں زخمی ہوئے ہیں۔اقوام متحدہ کے لیے کویت کے سفیر منصور العتابی نے غزہ میں تشدد پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس بلانے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہاں جو کچھ ہوا ہم اس کی مذمت کرتے ہیں اور اس پر ہم اپنا رد عمل دیں گے ا ور ہم دیکھیں گے کہ سلامتی کونسل اس سلسلے میں کیا کرتی ہے۔ترکی کے صدر رجب طیب اردوان نے، جو لندن کے دورے پر ہیں، کہا ہے کہ سفارت خانے کی منتقلی ایک انتہائی بدقسمت واقعہ ہے اور اس اقدام سے امریکہ مشرق وسطی ٰ کے امن عمل میں ثالث کا کردار ادا کرنے کا اہل نہیں رہا ۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بھارت۔ تائیوان ایس ایم ای ترقیاتی فورم تائیپی میں شروع 

vایم ایس ایم ای کے سکریٹری ڈاکٹر ارون کمار پانڈا 13 سے 17 نومبر 2018 تک چلنے والے بھارت 150 تائیوان ایس ایم ای ترقیاتی فورم کے اجلاس میں بھارتی وفد کی قیادت کررہے ہیں۔ فورم میں کل اپنے افتتاحی کلمات میں ڈاکٹر پانڈا نے کہا کہ بھارت میں ایم ایس ایم ای کی پوزیشن کلیدی اہمیت کی حامل ہے

شمالی کوریا کا میزائل پروگرام جاری ہے، رپورٹ

ایک امریکی ریسرچ آرگنائزیشن نے کہا ہے کہ اس نے شمالی کوریا کے میزائلوں سے متعلق ایسے 13 مقامات کا پتا لگایا ہے جن کا اعلان نہیں کیا گیا ہے۔ یہ اس بات کی تازہ ترین علامت ہے کہ شمالی کوریا کو اس کے جوہری ہتھیاروں سے دستبردار کرانے کی امریکی کوشش تعطل کا شکار ہو گئی ہے۔

غیر ملکی طلبہ کی امریکہ میں دلچسپی کیوں گھٹ رہی ہے؟

غیر ملکی طالب علموں کی آمد سے امریکی معیشت کو ہر سال42 ارب ڈالر کا فائدہ ہوتا ہے اور روزگار کی منڈی میں ساڑھے چار لاکھ ملازمتیں پیدا ہوتی ہیں۔ غیر ملکی طالب علم امریکی معیشت کے لئے بے بڑی اہمیت رکھتے ہیں۔

ہندوستان ڈیجیٹل فروغ اورترقی کے دورسے گذررہاہے ، سنگاپورمیں جاری فنٹیک فیسٹول میں وزیراعظم کاخطاب

وزیراعظم نے سنگاپورمیں جاری فنٹیک فیسٹول میں خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ یہ ہندوستان پر چھاجانے والے مالیاتی انقلاب اور ہندوستان کے 1.3 ارب عوام کی زندگی میں بہتر تبدیلیوں کا اعتراف ہے۔ہندوستان اور سنگاپور ہندوستانی اور آسیان ملکوں کے چھوٹے اور اوسط درجے کے کاروباری اداروں کوایک ...

سنگاپور کے وزیراعظم لی سین لونگ سے وزیراعظم نریندر مودی کی ملاقات

وزیر اعظم نریندر مودی نے بدھ کو سنگاپور کے وزیراعظم لی سین لونگ سے ملاقات کی۔ دونوں رہنماؤں نے مالیاتی ٹیکنالوجی میں تال میل اور علاقائی اقتصادی اتحاد سمیت کئی مسائل پر بات چیت کی۔ مودی نے فنٹیس فیسٹیول سے خطاب کر کے بدھ کو دو روزہ سنگاپوردورہ کا آغاز کیا ۔یہ فیسٹیول مالیاتی ...