شمالی کوریا جوہری اور میزائل تنصیبات معائنہ کاروں کے لیے کھولنے پر تیار ہے: پومپیو

Source: S.O. News Service | By Staff Correspondent | Published on 8th October 2018, 8:29 PM | عالمی خبریں |

واشنگٹن 8اکتوبر ( آئی این ایس انڈیا ؍ایس او نیوز) امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ اْن بین الاقوامی معائنہ کاروں کو شمالی کوریا کی جوہری اور میزائل تنصیبات میں داخلے کی اجازت دینے پر تیار ہیں۔ پومپیو جنہوں نے اتوار کو پیونگ یانگ کے مختصر دورے کے دوران کم جونگ سے ملاقات کی تھی ۔ انہوں نے بتایا کہ معائنہ کاروں کی ٹیم میزائلوں کے انجن ٹیسٹ کرنے کی تنصیب اور جوہری تجربات کے مقام 'بونجی ری' کا دورہ کرے گی۔ یہ دورہ فریقین کے بیچ لوجسٹک امور پر اتفاق رائے ہونے کے فوری بعد کیا جائے گا۔ امریکی وزیر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ کم جونگ کی طرف سے گزشتہ ماہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو پیش کی گئی دوسری سربراہ ملاقات کی تجویز پر عمل کے سلسلے میں دونوں ممالک 'اتفاق رائے کے بہت قریب پہنچ گئے ہیں۔اس سے قبل شمالی کوریا کی سرکاری خبر رساں ایجنسی کا کہنا تھا کہ کِم جونگ اْن نے اتوار کے روز امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کے ساتھ ہونے والی بات چیت کو فائدے مند اور شان دار قرار دیا۔ادھر جنوبی کوریا میں صدارتی دفتر نے بتایا ہے کہ کم جونگ اور پومپیو جلد از جلد ممکنہ وقت میں شمالی کوریا کے سربراہ اور امریکی صدر کے درمیان ملاقات کے انتظامات پر متفق ہو گئے ہیں۔کوریا کی مرکزی خبر رساں ایجنسی کے مطابق کم جونگ نے مائیک پومپیو کے ساتھ مثبت انداز سے جزیرہ نما کوریا میں بدلتی صورت حال کا جائزہ لیا۔ اس دوران جوہری ہتھیاروں کی تلفی کا معاملہ حل کرنے اور دو طرفہ اہمیت کے امور کے حوالے سے تجاویز تفصیلی طور پر زیر بحث آئیں۔اس سے قبل مائیک پومپیو نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ ان کا پیانگ یانگ کا دورہ اور کِم جونگ سے ملاقات اچھی رہی ہے۔ ہم سنگاپور سربراہ اجلاس میں طے پانے والے سمجھوتوں پر مسلسل پیش رفت کر رہے ہیں۔ میں اپنی اور اپنی ٹیم کی مہمان نوازی پر ان کا شکر گزار ہوں۔امریکی وزیر خارجہ کے وفد میں شامل ایک عہدے دار کا کہنا تھا کہ "شمالی کوریا کے دورے میں کچھ پیش رفت ہوئی ہے۔ شمالی کوریا کے لیڈر کِم جونگ اْن سے ملاقات ہوئی ہے لیکن ابھی مفید نتائج برآمد ہونے میں بہت وقت لگے گا۔ مائیک پومپیو کا وزیر خارجہ اور سی آئی اے کے سابق سربراہ کی حیثیت سے شمالیامریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ اْن بین الاقوامی معائنہ کاروں کو شمالی کوریا کی جوہری اور میزائل تنصیبات میں داخلے کی اجازت دینے پر تیار ہیں۔ پومپیو جنہوں نے اتوار کو پیونگ یانگ کے مختصر دورے کے دوران کم جونگ سے ملاقات کی تھی ۔ انہوں نے بتایا کہ معائنہ کاروں کی ٹیم میزائلوں کے انجن ٹیسٹ کرنے کی تنصیب اور جوہری تجربات کے مقام 'بونجی ری' کا دورہ کرے گی۔ یہ دورہ فریقین کے بیچ لوجسٹک امور پر اتفاق رائے ہونے کے فوری بعد کیا جائے گا۔ امریکی وزیر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ کم جونگ کی طرف سے گزشتہ ماہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو پیش کی گئی دوسری سربراہ ملاقات کی تجویز پر عمل کے سلسلے میں دونوں ممالک 'اتفاق رائے کے بہت قریب پہنچ گئے ہیں۔اس سے قبل شمالی کوریا کی سرکاری خبر رساں ایجنسی کا کہنا تھا کہ کِم جونگ اْن نے اتوار کے روز امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کے ساتھ ہونے والی بات چیت کو فائدے مند اور شان دار قرار دیا۔ادھر جنوبی کوریا میں صدارتی دفتر نے بتایا ہے کہ کم جونگ اور پومپیو جلد از جلد ممکنہ وقت میں شمالی کوریا کے سربراہ اور امریکی صدر کے درمیان ملاقات کے انتظامات پر متفق ہو گئے ہیں۔کوریا کی مرکزی خبر رساں ایجنسی کے مطابق کم جونگ نے مائیک پومپیو کے ساتھ مثبت انداز سے جزیرہ نما کوریا میں بدلتی صورت حال کا جائزہ لیا۔ اس دوران جوہری ہتھیاروں کی تلفی کا معاملہ حل کرنے اور دو طرفہ اہمیت کے امور کے حوالے سے تجاویز تفصیلی طور پر زیر بحث آئیں۔اس سے قبل مائیک پومپیو نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ ان کا پیانگ یانگ کا دورہ اور کِم جونگ سے ملاقات اچھی رہی ہے۔ ہم سنگاپور سربراہ اجلاس میں طے پانے والے سمجھوتوں پر مسلسل پیش رفت کر رہے ہیں۔ میں اپنی اور اپنی ٹیم کی مہمان نوازی پر ان کا شکر گزار ہوں۔امریکی وزیر خارجہ کے وفد میں شامل ایک عہدے دار کا کہنا تھا کہ "شمالی کوریا کے دورے میں کچھ پیش رفت ہوئی ہے۔ شمالی کوریا کے لیڈر کِم جونگ اْن سے ملاقات ہوئی ہے لیکن ابھی مفید نتائج برآمد ہونے میں بہت وقت لگے گا۔ مائیک پومپیو کا وزیر خارجہ اور سی آئی اے کے سابق سربراہ کی حیثیت سے شمالی کوریا کے دارالحکومت کا یہ چوتھا دورہ تھا۔ انھوں نے اپنی مذکورہ ٹوئیٹ میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی شمالی کوریا کے لیڈر کِم سے جون میں سنگاپور میں پہلی ملاقات کا حوالہ دیا۔ دونوں ممالک کے درمیان سربراہان کی سطح پر یہ پہلا بالمشافہ ٹاکرا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

انیس عامری ایک ’دہشت گرد سیل‘ کا حصہ تھا: جرمن میڈیا

برلن میں دو برس قبل ایک کرسمس مارکیٹ پر ٹرک کے ذریعے حملہ کرنے والا انیس عامری’تنہا بھیڑیا‘ نہیں تھا بلکہ ممکنہ طور پر اس کا تعلق ایک سلفی سیل سے تھا، جس نے اسے اس حملے میں مدد دی تھی۔جرمن میڈیا پر ہفتے کے روز سامنے آنے والی رپورٹوں کے مطابق برلن کرسمس مارکیٹ حملے کے فقط دو ...

فرانسیسی شہروں میں زرد جیکٹوں والے مظاہرین کا احتجاج

فرانس کے مختلف شہروں میں زرد جیکٹوں والے حکومت مخالف مظاہرین مسلسل پانچویں ویک اینڈ پر احتجاج کے لیے جمع ہیں۔ صدر ایمانوئل ماکروں کی حکومت کے خلاف مظاہروں کا یہ سلسلہ ایندھن کی قیمتوں میں اضافے پر شروع ہوا تھا۔ فرانسیسی دارالحکومت پیرس میں مظاہرین کی پرتشدد کارروائیوں کو ...

سری لنکا کے برخاست وزیراعظم پر پارلیمان کا اعتماد

رواں برس اکتوبر میں برخاست کیے جانے والے سری لنکن وزیراعظم رانیل وکرمے سنگھے نے پارلیمنٹ میں اعتماد کا ووٹ حاصل کر لیا ہے۔ آج بدھ کو ہونے والی رائے شماری میں 225 رکنی ایوان میں وکرمے سنگھے کی حمایت میں 117 اراکین نے ووٹ ڈالا

امریکی فوج نے شمالی شام میں مبصر چوکیاں قائم کر دیں

امریکی وزارت دفاع نے اعلان کیا ہے کہ اْس کی افواج نے شمالی شام میں مبصر چوکیاں قائم کر دیں ہیں۔ اس اعلان میں ان چوکیوں کی تعداد اور مقامات کی وضاحت نہیں کی گئی ہے۔ اسی علاقے میں شامی کردوں کی ملیشیا وائی پی جی ایک بڑے علاقے پر قابض ہے

برطانوی وزیر اعظم کو درپیش قیادت کا چیلنج: کیوں اور کیسے؟

برطانوی پارلیمان کے ارکان نے قدامت پسند وزیر اعظم ٹریزا مے کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کر دی ہے، جس پر رائے شماری آج بدھ بارہ دسمبر کو ہو رہی ہے۔ سوال یہ ہے کہ یہ تحریک پیش کیے جانے کے بعد اب ہو گا کیا ۔برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مے نے اسی ہفتے پیر کا دن یورپ کے مختلف ممالک کے ...