انتخاب سے قبل مہاگٹھ بندھن کا امکان نہیں: یچوری

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 9th February 2019, 11:40 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی:9 /فروری (ایس اونیوز /آئی این ایس انڈیا)سی پی ایم کے جنرل سکریٹری سیتا رام یچوری نے آئندہ لوک سبھا انتخابات میں بی جے پی کو اقتدار سے بے دخل کرنے کے لیے موجودہ حالات میں انتخاب سے قبل مہا گٹھ بند ھن کے امکان کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ علاقائی سطح پر مختلف سیکولر جماعتوں کے ساتھ انتخابی تعاون کے امور کو پارٹی آئندہ تین اور چار مارچ کو طے کرے گی۔ یچوری نے ہفتہ کو نامہ نگاروں کو بتایا کہ پارٹی پولٹ بیورو نے انتخاب سے قبل’ مہا گٹھ بند ھن‘ کو مسترد کرتے ہوئے اگلے عام انتخابات میں ریاستوں کی مقامی حالات کی بنیاد پر انتخابی تعاون قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس سے غیر بی جے پی ووٹوں کو متحد کیا جاسکے۔ انہوں نے بتایا کہ اگلے لوک سبھا انتخابات کی تیاریوں کو لے کر آج ختم سی پی ایم پولٹ بیورو کی میٹنگ میں تمام ریاستوں کی رپورٹ کے تجزیہ کی بنیاد پر یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔مغربی بنگال سمیت دیگر ریاستوں میں کانگریس کے ساتھ انتخابی تعاون کے سوال پر یچوری نے کہا کہ کس ریاست میں کس ٹیم کے ساتھ کس قسم کا انتخابی تعاون قائم کیا جائے گا، اس کا خاکہ آئندہ تین اور چار مارچ کو پارٹی کی مرکزی کمیٹی کے اجلاس میں تیار کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ جہاں تک مغربی بنگال کا سوال ہے، آپ جانتے ہیں وہاں بایاں محاذ میں سی پی ایم سمیت نو پارٹیاں ہیں اور مورچہ نے فی الحال کسی اور پارٹی کو اس میں شامل کرنے کا فیصلہ نہیں کیا ہے، اس پر ابھی گفتگو چل رہی ہے۔ اس کے علاوہ اسمبلی انتخابات کے ساتھ مل کر لڑنے والے آر جے ڈی، این سی پی سمیت دیگر جماعتوں کے ساتھ بھی بات چیت چل رہی ہے۔لوک سبھا انتخابات کے لئے امیدواروں کے انتخاب کے سوال پر بھی یچوری نے کہا کہ مرکزی کمیٹی کے اجلاس کے بعد امیدواروں کا اعلان کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ امیدواروں کے انتخاب میں ’جیت کے امکانات‘ ہی اہم معیار ہو گا۔یچوری نے بتایا کہ پولٹ بیورو نے لڑاکا طیارہ رافیل کی خریداری میں گڑبڑی کے تحت ہو رہے نئے انکشافات کا حوالہ دیتے ہوئے مشترکہ پارلیمانی کمیٹی (جے پی سی) سے جانچ کرانے کی مانگ کا اعادہ کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پولٹ بیورو نے موجودہ بجٹ سیشن کے باقی بچے تین دنوں میں جے پی سی قائم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

مودی پھر جیتے تو ملک میں شاید انتخابات نہ ہوں: اشوک گہلوت

کانگریس کے سینئر لیڈر اور راجستھان کے وزیر اعلی اشوک گہلوت نے منگل کو نریندر مودی حکومت کے دور میں ’جمہوریت اور آئین‘ کو خطرہ ہونے کا الزام لگاتے ہوئے دعوی کیا کہ اگر عوام نے مودی کو پھر سے اقتدار سونپا، تو ہو سکتا ہے