کانگریس اراکین اسمبلی کی بی جے پی میں شمولیت محض افواہ: پرمیشور

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 12th September 2018, 12:17 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،11؍ستمبر(ایس او نیوز) نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے کہا ہے کہ ریاستی وزیر رمیش جارکی ہولی اور ان کے بڑے بھائی ستیش جارکی ہولی اور ان کے حامی اراکین اسمبلی کسی بھی حال میں کانگریس چھوڑ کر کسی بھی حال میں بی جے پی میں شامل نہیں ہوں گے۔

ریاستی حکومت کے گرنے کے متعلق بی جے پی کے دعوؤں کو جھوٹ کا پلندہ قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ مخلوط حکومت کے استحکام کو کسی طرح کا کوئی خطرہ لاحق نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ ریاست میں کمار سوامی حکومت کمزور نہیں بلکہ آنے والے دنوں میں اور بھی زیادہ مستحکم ہوجائے گی۔ انہوں نے کہاکہ آج صبح کے پی سی سی صدر دنیش گنڈو راؤ نے رمیش جارکی ہولی سے تفصیلی بات چیت کی ہے، اس بات چیت کے دوران رمیش جارکی ہولی نے واضح کیا ہے کہ ریاستی حکومت سے ان کی کوئی ناراضی نہیں ہے، مقامی سطح پر جو مسائل ہیں ان کو پارٹی کی طرف سے جلد از جلد سلجھالیا جائے گا۔ اس سوال پر کہ آخر جارکی ہولی برادران کی ناراضی کا سبب کیا ہے؟

نائب وزیر اعلیٰ نے کہاکہ چند ایسے امور ہیں جن کو ظاہر نہیں کیا جاسکتا۔ بلگاوی کی سیاست میں وزیر آبی وسائل ڈی کے شیوکمار کی مداخلت کے متعلق سوال پر نائب وزیراعلیٰ نے کہا کہ جارکی ہولی نے ان سے ایسی کوئی شکایت نہیں کی ہے اگر ایسی کوئی بات سامنے آتی ہے تو تمام قائدین کو اعتماد میں لے کر مناسب راستہ نکالا جائے گا۔ انہوں نے کہاکہ بی جے پی کی طرف سے ہر دن اس حکومت کے استحکام کے متعلق ایک نیا بیان دیا جارہاہے۔ کہا جارہا ہے کہ رمیش جارکی ہولی کے ساتھ 20 اراکین اسمبلی کانگریس چھوڑ کر جانے والے ہیں ان دعوؤں میں کوئی سچائی نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ رمیش جارکی ہولی سے خود انہوں نے بات کی ہے اس بات چیت کے دوران رمیش نے واضح کیا ہے کہ وہ کانگریس پارٹی چھوڑنے والے نہیں ہیں۔ بی جے پی کے اس الزام پر کہ کل کانگریس کی آواز پرمنائے گئے بھارت بند کے دوران دکانوں کو زبردستی بند کرانے کے لئے پولیس فورس کا استعمال کیا گیا ۔ ڈاکٹر پرمیشور نے اس الزام کی تردید کرتے ہوئے کہاکہ جہاں بھی نظم وضبط کا مسئلہ پیدا ہوا ہے وہاں پولیس نے مداخلت کی ہے۔ دکانوں کو بند کرانے کے لئے پولیس کی طرف سے کوئی ہراسانی نہیں کی گئی۔ انہوں نے کہاکہ بی جے پی کی طرف سے لگائے گئے الزامات سیاسی بدنیتی پر مبنی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ مرکزی حکومت کی طرف سے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں بے تحاشہ اضافے کے خلاف پورے ملک میں کامیاب بند منایا گیا۔ اس سے بی جے پی بوکھلاگئی ہے۔ ریاستی بی جے پی نے بھی اسی بوکھلاہٹ میں حکومت پر الزامات عائد کئے ہیں۔ 

ایک نظر اس پر بھی

مفرورمنصورخان کاایک اورویڈیو 24 گھنٹے میں ہندوستان واپسی کاوعدہ!

لوگوں کو کروڑوں روپئے کا دھوکہ دینے والی پونزی کمپنی آئی ایم اے کے بانی وایم ڈی محمد منصور خان کیا واقعی 24 گھنٹوں میں ہندوستان واپس لوٹ آئیں گے؟ جبکہ اس گھپلے کی جانچ کررہی ایس آئی ٹی نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ منورخان کا پاسپورٹ انٹرپول کے ذریعہ کالعدم قرار دیا گیا ہے -