نئے جوہری معاہدے پر کام کیا جا سکتا ہے: امریکا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 16th May 2018, 1:00 PM | عالمی خبریں |

واشنگٹن،15 مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)امریکا کی جانب سے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے سے دستبرداری کے بعد سے یورپی یونین کے لیے صورتحال پیچیدہ ہوتی جا رہی ہے۔ اس موقع پر امریکا نے کہا ہے کہ وہ نئے جوہری معاہدے پر کام کرنے کے لیے تیار ہے۔ایک امریکی اعلٰی سفارت کار نے کہا ہے کہ واشنگٹن ایران کے ’تباہ کن‘ طرز عمل کو ٹھیک کرنے کی خاطر یورپ کے ساتھ کام کرنے کے لیے ابھی بھی تیار ہے۔ امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے اس دوران امریکی اتحادیوں سے دو طرفہ تعاون پر از سر نو غور کرنے کے بارے میں تبادلہ خیال کیا ہے۔ دوسری جانب ایک اعلی امریکی نمائندے نے کہا ہے کہ وہ یورپی کمپنیاں پابندی کی زد میں آ سکتی ہیں، جو ایران کے ساتھ تجارت جاری رکھے ہوئے ہیں۔امریکا کی جانب یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے، جب ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے کہا کہ وہ بہتر مستقبل کے حوالے سے پر امید ہیں۔ اس موقع پر ایران نے یورپی یونین کو امریکی دستبرداری کے بعد جوہری معاہدے پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کی ضمانت دینے کے حوالے سے ساٹھ دن کی مہلت دی ہے۔ تاہم یہ خبریں بھی سامنے آئی ہیں کہ یہ مہلت نوے دن کی ہے۔جواد ظریف نے آج ماسکو میں اپنے روسی ہم منصب سرگئی لاوروف کے ساتھ ملاقات میں کہا، ’’ اس بات چیت کا اوّلین مقصد ایک ایسی ضمانت حاصل کرنا ہے، جو ایرانی عوام کے حق میں ہو اور انہیں تحفظ فراہم کرے‘‘۔ ظریف نے ایک مرتبہ پھر خبردار کیا ہے کہ اگر یورپ کی جانب سے ایران کے ساتھ تجارتی سرگرمیوں کی اجازت و ضمانت نہیں دی جاتی تو ایران صنعتی بنیادوں پر یورینیئم کی افزودگی شروع کر دے گا۔دوسری جانب فرانسیسی صدر ایمانوئیل ماکروں نے اپنے دورہ واشنگٹن کے دوران ایران کے ساتھ ایک ضمنی معاہدے کی تجویز پیش کر چکے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

افغانی اور بنگلہ دیشی پناہ گزینوں کو پاکستان کی شہریت دیں گےعمران خان

پاکستان میں جو بچے پیدا ہوئے ہیں، ان کو شہریت دی جائے گی۔پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے اعلان کیا ہے کہ ان کی حکومت پاکستان میں پیدا ہوئے تمام افغانی اوربنگلہ دیشی پناہ گزینوں کو شہریت فراہم کرے گی۔ ایکسپریس ٹریبیونل کی خبر کے مطابق حکومت بنانے کے بعد اتوار کو اپنے پہلے دورے ...

امریکا 2019 میں 30 ہزار پناہ گزین قبول کرے گا

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ نے پیر کے روز ایک اعلان میں بتایا ہے کہ آئندہ برس کے لیے پناہ گزین پروگرام کے سلسلے میں پناہ گزینوں کی حد 30 ہزار مقرر کی گئی ہے۔