کوبرا پوسٹ کا انکشاف،ٹائمس آف انڈیا ،انڈیا ٹو ڈے، ہندوستان ٹائمس،زی نیوز،وغیرہ پیڈ نیوز چھاپنے کے لئے تیار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 26th May 2018, 12:15 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،25؍مئی (ایس او نیوز؍ایجنسی)  جمعہ کے روزکوبرا پوسٹ نے آپریشن 136 کا دوسرا حصہ فیس بک لائیو کے ذریعے جاری کیا۔ کوبرا پوسٹ نے اس سے جڑی ایک کور اسٹوری بھی اپنی ویب سائٹ پر شائع کی ہے۔ کوبرا پوسٹ کے یو ٹیوب چینل پر اس اسٹنگ آپریشن سے متعلق کل 50 ویڈیو ڈالے گئے ہیں، جن میں میڈیا کی کئی جانی مانی شخصیتیں تول مول کرتے ہوئے ریکارڈ ہوئی ہیں۔ ان میں سے کچھ ویڈیو ابھی بھی پبلک ہونے باقی ہیں۔

واضح ہو کہ اس اسٹنگ کے پہلے حصے میں میڈیا کی بڑی ہستیاں پیسے کے بدلے ہندوتوا کا ایجنڈا اپنے چینل، اخبار کے ذریعے بڑھانے کو راضی تھیں۔آج جاری دوسرے حصے میں بھی وہی بات سامنے آئی ہے۔پہلے حصے میں کوبرا پوسٹ کے صحافی پشپ شرما نے دینک جاگرن، امر اجالا، ڈی این اے، پنجاب کیسری ،اسکوپ وہوپ، انڈیا ٹی وی، ریڈف اور یو این آئی شامل تھے۔

تازہ جاری اسٹنگ ویڈیو میں میڈیا کے کچھ بے حد بڑے نام پکڑے گئے ہیں۔ان میں ٹائمس آف انڈیا ، انڈیا ٹو ڈے، ہندوستان ٹائمس، زی نیوز،نیٹ ورک 18، اسٹار انڈیا،اے بی پی نیوز، ریڈیو ون، ریڈ ایف ایم، لوک مت، اے بی این آندھرا جیوتی، ٹی وی 5، دن ملار، بگ ایف ایم، کے نیوز، انڈیا وائس، دی نیو انڈین ایکسپریس، ایم وی ٹی وی اور اوپین میگزین شامل ہے۔ کوبرا پوسٹ کے دوسرے حصے کو آج پریس کلب آف انڈیا میں جاری کیا جانا تھا۔ لیکن اس اسٹنگ آپریشن میں شامل میڈیاگروپ دینک بھاسکرنے دہلی ہائی کورٹ کی پناہ لے لی۔

بھاسکر نے کورٹ میں اپیل کی کہ اس اسٹنگ کو نشر کرنے سے ان کے وقار کو چوٹ پہنچے گی۔اس پر کورٹ نے اسٹے جاری کر دیا۔کورٹ میں اس معاملے کی اگلی شنوائی 4 جولائی کو ہوگی۔ کورٹ کے آرڈر کا ذکر کرتے ہوئے 25 مئی کی کور اسٹوری میں کوبرا پوسٹ نے لکھا ہے،’ ہمیں 24 مئی 2018 کی شام دہلی ہائی کورٹ سے ایک اسٹے آرڈر ملاہے۔ جس میں ہمارے انویسٹی گیشن سے دینک بھاسکر گروپ کو الگ رکھنے کا آرڈر ملا ہے۔ دہلی ہائی کورٹ نے دینک بھاسکر کے حق میں یہ آرڈر ہماری بات سنے بغیر جاری کیا ہے۔ لہٰذا ہم عدالت کے اس آرڈر کو سچائی اور انصاف کے لیے چیلنج دیتے ہیں۔’

ایک نظر اس پر بھی

رافیل :مودی نے اپنی چوری تسلیم کرلی !راہل فضائیہ سے پوچھے بغیرمعاہدہ میں تبدیلی کی گئی

رافیل طیارہ سودا کے معاملے میں مودی حکومت کو مسلسل نشانہ بنانے والے کانگریس کے صدر راہل گاندھی نے ایک بار پھر آج وزیر اعظم نریندر مودی پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے سپریم کورٹ میں دائر حلف نامے میں اپنی غلطی تسلیم کرلی ہے ۔

الہ آبادکانام بدلنے پر چیلنج

الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنؤ بنچ نے الہ آباد کا نام بدل کر پریاگ راج کئے جانے کے معاملے میں عوامی عرضی پر ریاستی حکومت سمیت دیگر فریقوں سے جواب مانگا ہے ۔

وزیر اعظم نے مانا کہ فضائیہ سے بغیر پوچھے بدلا تھا رافیل کا کنٹریکٹ: راہل گاندھی نے کی ٹویٹ، کہا؛ پکچر ابھی باقی ہے

کانگریس صدر راہل گاندھی نے سپریم کورٹ میں حکومت کے رافیل معاملے سے متعلق حلف نامے کو لے کر منگل کو وزیر اعظم نریندر مودی پر نشانہ لگایا اور دعوی کیا کہ مودی نے فضائیہ سے پوچھے بغیر کنٹراکٹ بدلنے کی بات قبول کر لی ہے۔گاندھی نے ٹویٹ کر کہاکہ سپریم کورٹ میں مودی جی نے مانی اپنی ...

منی لانڈرنگ معاملے میں صحافی اپیندر رائے کی ضمانت کی درخواست مسترد

دہلی کی ایک عدالت نے مبینہ طور پر زبردستی وصولی اور مشکوک مالیاتی لین دین سے متعلق منی لانڈرنگ کے ایک معاملے میں گرفتار صحافی اپیندر رائے کی ضمانت کی درخواست منگل کو مسترد کر دی۔ایڈیشنل سیشن جج راکیش سیال نے رائے کو یہ کہہ کر راحت دینے سے انکار کر دیا کہ ان کے خلاف لگے الزامات ...