نئے لوک آیوکتہ کے تقرر پر اعلیٰ سطحی میٹنگ میں اتفاق نہ ہوسکا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th January 2017, 11:41 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،9؍جنوری(ایس او نیوز) ریاست کے نئے لوک آیوکتہ کے تقرر کے سلسلے میں آج وزیراعلیٰ سدرامیا کی صدارت میں اعلیٰ اختیاری کمیٹی کا اجلاس منعقد ہوا، جس میں کسی جج کے نام پر اتفاق نہیں ہوسکا۔ رشوت ستانی کے الزامات کے بعد اس عہدہ سے جسٹس بھاسکر راؤ کے استعفیٰ کے بعد سے اب تک ریاستی حکومت نے انسانی حقوق کمیشن کے سابق چیرمین جسٹس ایس آر نائک کو لوک آیوکتہ بنانے کی دو مرتبہ کوشش کی ،لیکن گورنر نے اسے منظور نہیں کیا۔ آج منعقدہ اعلیٰ اختیاری کمیٹی میٹنگ میں لوک آیوکتہ کے عہدہ کیلئے جسٹس گوپال گوڈا، جسٹس ایس آر نائک ، جسٹس بی وشواناتھ شٹی اور جسٹس این کمار کے نام پیش کئے گئے۔ وزیر اعلیٰ سدرامیا کی صدارت میں ہوئی میٹنگ میں ریاستی ہائی کورٹ کے چیف جسٹس ایس کے مکھرجی ، اسمبلی اسپیکر کے بی کولیواڈ، کونسل چیرمین شنکر مورتی، وزیر قانون ٹی بی جئے چندرا، اسمبلی کے اپوزیشن لیڈر جگدیش شٹر ، کونسل کے اپوزیشن لیڈر ایشورپا اور دیگر نے شرکت کی۔ چونکہ گورنر نے جسٹس ایس آر نائک کے نام کو دو مرتبہ منظوری کے بغیر لوٹادیا ، بی جے پی لیڈران نے حکومت کو مشورہ دیا کہ دوبارہ وہ جسٹس نائک کے تقرر پر زور نہ دے، لیکن حکومت کی طرف سے یہی کوشش ہورہی ہے کہ دوبارہ ایس آر نائک کا نام تجویز کیا جائے۔ ان کے علاوہ جسٹس وشواناتھ شٹی ، این کمار اور جسٹس گوپال گوڈا کے ناموں پر تفصیلی تبادلۂ خیال کیاگیا۔ جسٹس وشواناتھ شٹی کے نام پر سماجی کارکن ایس آر ہیرے مٹھ نے اعتراض کیا اور کہا کہ وہ وزیر توانائی ڈی کے شیوکمار کے وکیل ہیں اور ساتھ ہی ان پر جعلی حلف نامہ دے کر سائٹ حاصل کرنے کا الزام ہے۔ اسی لئے انہیں لوک آیوکتہ بنایا نہیں جانا چاہئے۔پچھلے ایک سال سے ریاست میں لوک آیوکتہ کا عہدہ خالی پڑا ہوا ہے۔موزوں امیدوار نہ ہونے کے نتیجہ میں ایسی صورتحال پیدا ہوئی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اسکولی بچوں کے سوشیل میڈیا استعمال کرنے پر پابندی،پابندی پامال کرنے والوں کو اسکول سے نکال دینے کی تاکید

ریاستی محکمۂ تعلیمات نے کمسن ذہنوں پر سوشیل میڈیا کے اثرات کو دیکھتے ہوئے سختی سے یہ فرمان جاری کیا ہے کہ 13سال کی عمر تک کے بچوں کو سوشیل میڈیا کا استعمال کرنے کی اجازت قطعاً نہ دی جائے۔

مودی حکومت کے انسداد گؤ کشی قانون کو کمار سوامی نے قرار دیا خوش آئند: گائیوں کی دیکھ بھال کیلئے مراکز قائم کرنے کا بھی مشورہ

مرکزی حکومت کی طرف سے کل ملک بھر میں لاگو کئے گئے انسداد گؤ کشی قانون کا سابق وزیراعلیٰ اور ریاستی جنتادل(ایس) صدر ایچ ڈی کمار سوامی نے خیر مقدم کیااور کہاکہ مرکزی حکومت کو چاہئے کہ اس قانون کو نافذ کرنے کے ساتھ ملک بھر میں گائیوں کی دیکھ بھال کیلئے مراکز قائم کرے۔

موسلادھار بارش کی وجہ سے شہر میں عام زندگی متاثر،نشیبی علاقے زیر آب ، دوسو سے زائد درخت اور متعدد بجلی کے کھمبے زمین بوس

شہر میں کل رات ہوئی زبردست بارش کے سبب 200 سے زائد مقامات پر درخت اور بجلی کے کھمبے اکھڑگئے اور ساتھ ہی نہ صرف نشیبی علاقے بلکہ چند مشہور ومعروف سرکاری اور دیگر عمارتوں میں بھی بارش کا پانی گھس آیا۔