اچھے اور عام کا فرق نہیں ہو سکے گا 100 گیند کی کرکٹ میں:سوربھ گنگولی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th May 2018, 12:53 PM | اسپورٹس |

کولکاتہ ،12؍مئی (ایس او نیوز؍ آئی این ایس انڈیا ) ہندوستانی ٹیم کے سابق کپتان اور ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی کے رکن سوربھ گنگولی 100 گیند کے کرکٹ میچ فارمیٹ کے حق میں نہیں ہیں۔انگلینڈ اور ویلز کرکٹ بورڈ انتہائی مقبول ٹی 20کی فارمیٹ کی جگہ 100 گیند کے میچ کی وکالت کر رہا ہے۔ای سی بی نے گھریلو ٹی 20 سیریز کی جگہ 100گیند کے میچ کی تجویز بھی دی ہے جس میں چھ گیند کی 15اوور کے بعد آخری اوور 10گیند کا ہوگا۔اس کی تفصیلات ابھی طے نہیں کی گئی ہے آٹھ ٹیموں کی یہ سیریز 2020 میں شروع ہوگی۔ گنگولی نے کہاکہ آپ کو اس کا خیال رکھنا ہوگا کہ یہ ایسا نہ ہو کہ ناظرین پلک جھپکائیں اور میچ ختم ہو جائے۔جیسے جیسے فارمیٹ چھوٹا جائے گا اچھے اور عام فرق کم ہو جائے گا۔گنگولی مانتے ہیں کہ ٹی 20 کرکٹ کی مقبولیت کے بعد بھی ٹیسٹ کرکٹ سب سے مشکل فارمیٹ رہے گا۔انہوں نے کہاکہ اس میں آپ کو توجہ، مہارت اور تکنیک کی ضرورت ہوتی ہے۔ٹی 20 ایسے ہی چلتا رہے گا، یہ پیشہ ورانہ اوراس میں دل لگی ہوتی ہے لیکن حقیقی کھیل بڑے فارمیٹ کے کھیل میں ہوتا ہے۔یہ سب سے مشکل فارمیٹ ہوتا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

آسٹریلوی گیند بازوں کو لمبے قد کا فائدہ ملے گالیکن ہندوستانی بلے باز بھی تیار: روہت

ہندوستانی نائب کپتان روہت شرما نے کہا کہ آسٹریلیا کے گیند بازوں کو اپنے لمبے قد کا فائدہ ملے گا لیکن ان کی ٹیم بھی اس بار کرکٹ کی نئی تاریخ رقم کرنے کو تیار ہیں۔ہندوستانی ٹیم دورے کا آغاز 21 نومبر کو ٹی 20 میچ سے کرے گی

کوہلی کے بعد روہت کو بھی روکنے کی حکمت عملی بنا رہا ہے آسٹریلیا

ہندوستانی اوپنر روہت شرما کے لیے آسٹریلیا حکمت عملی بنارہا ہے اور اس کا انکشاف تیز گیند باز ناتھن کولٹر نال نے کیا ہے۔ ہندوستانی کپتان وراٹ کوہلی کے علاوہ روہت دیگر بلے باز ہے جو بدھ سے شروع ہونے والی محدود اوورز کی سیریز میں آسٹریلیا کے لیے سردردبن سکتے ہیں۔