میٹرو ریل میں تین بوگیوں کا اضافہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 14th February 2018, 1:02 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،13؍فروری(ایس او نیوز) بنگلور میٹرو ریل کارپوریشن لمیٹیڈ(بی ایم آر سی ایل) نے 14؍فروری سے ہر ایک میٹرو ریل میں فی کس تین بوگیاں اضافہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ بھارت ارتھ مورئس لمیٹیڈ(بی ای ایم ایل) نے ان میٹرو بوگیوں کو تیارکیاہے۔ 14؍ فروری کی صبح 10:30بجے بی ای ایم ایل احاطے میں افزود میٹرو بوگیوں کو بی ایم آر سی ایل کے حوالے کرنے کی تقریب منعقد کی گئی ہے۔ جس میں بنگلور ترقیات وزیر کے جے جارج، رکن پارلیمان پی سی موہن ، رکن اسمبلی ایس رگھو، نارائن سوامی اور بی ایم آر سی ایل کے مینجنگ ڈائرکٹر مہیندر جین موجود رہیں گے۔ بی ایم آر سی ایل نے بہت پہلے ہی میٹرو میں سفرکرنے والے مسافروں کی تعداد اضافہ ہونے کو مدنظر رکھ کربوگیوں کی تعداد6؍کرنے کا اعلان کیا تھا اور اس نے بی ای ایم ایل کو افزود150بوگیاں تیار کرنے کا آرڈ دے رکھاتھا۔ جس کے تحت پہلے مرحلہ میں موجود روٹس میں چل رہی میٹرو ریل کے لئے افزود تین بوگیاں جوڑی جائیں گی۔ بی ای ایم ایل بوگیوں کو تیارکرنے کے بعد اس کا ٹسٹ بھی لیا اور اس میں انہیں کامیابی حاصل ہوئی ہے۔ میٹرو بوگیوں کو بی ایم آر سی ایل کے حوالے کرنے کے لئے کئی امتحانات سے گزرنا پڑتا ہے۔ اس کے بعد ریلوے سکیورٹی کمشنر کی منظوری حاصل کرنی پڑتی ہے۔ ان تمام آزمائشی مراحل کے لئے کم سے کم6ماہ کا وقت درکار ہے۔ بی ای ایم ایل نے ان تمام کاموں کو مارچ کے آخر تک مکمل کرکے تمام150 بوگیاں فراہم کرے گا۔ ملحوظ رہے کہ اضافہ کی جارہی بوگیوں کو خواتین کے لئے مختص کرنے پر غور ہورہاہے۔ خواتین کی اکثریت میٹرو کی مسافر ہیں، ان کی سہولت کی خاطر بوگیاں مختص کرنے کا اعلان اس سے پہلے 

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کیخلاف کانگریس کا جاری کردہ ٹیپ جعلی، کرناٹک کانگریس رکن اسمبلی کابیان، کانگریس پریشان 

بی جے پی کے خلاف کانگریس کے ایک جاری کردہ ٹیپ سے کانگریس کی ٹکٹ پر جیت درج کرنے والے یلاپور کے رکن اسمبلی شیورام ہیبار نے پارٹی کی جانب سے جاری کردہ ٹیپ کو جعلی قرار دیاہے۔ اور اس بات کو غلط قرار دیا ہے کہ بی جے پی کی طرف سے انہیں رقم کی پیشکش کی گئی تھی اور وزارتی عہدہ دینے کا بھی ...

کرناٹک انتخابات:کانگریس کے ان لیڈروں نے بگاڑ دیا بی جے پی کا کھیل

کانگریس صدر راہل گاندھی کے پارٹی کے اندر نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کرنے اور انہیں آگے بڑھانے کی پالیسی اپنانے کے باوجود کرناٹک میں جنتا دل (ایس) کے ساتھ مخلوط حکومت بنانے کے فارمولے کو انجام تک پہنچانے کی حکمت عملی میں پارٹی کے سینئر لیڈر ہی کام آئے۔