میسورو میں ووٹنگ مشین ہیاک کرنے کا الزام۔ جے ڈی ایس امیدواراور کارکنان نے چار افراد کو پکڑ کر کیاپولیس کے حوالے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 5:23 PM | ریاستی خبریں |

میسورو17؍مئی (ایس او نیوز)میسورو نرسمہا راجہ حلقے سے جے ڈی ایس کے امیدوار اور کارکنان نے وہاں پر ووٹنگ مشین کو ہیاک کرنے کا الزام لگاتے ہوئے چار افراد کوپکڑ لیا اور پھر اس کے بعد ان لوگوں کو پولیس کے حوالے کردیا۔

بتایا جاتا ہے کہ الیکشن سے قبل ایک آزاد امیدوار وینکٹیش موڈی گیرے اور پردیپ نامی شخص نے جے ڈی ایس کے امیدوار عبدالعزیز اور بی جے پی کے امیدوار سندیش سوامی سے الگ الگ ملاقات کی تھی اور پیش کش کی تھی کہ اگر انہیں 5کروڑ روپے دئے گئے تو وہ لوگ امیدوار کو 20ہزار ووٹوں کے فرق سے جیت دلاسکتے ہیں۔

جے ڈی ایس امیدوار عبدالعزیز کا کہنا ہے کہ انتخاب کے بعد انہیں بہت ہی کم ووٹ ملنے کا معاملہ سامنے آنے پر انہیں مشین سے چھیڑ چھاڑ کرنے کے تعلق سے شکوک پیدا ہوئے۔اس بارے میں جانکاری کے لئے انہوں نے الیکشن سے قبل بڑی رقم کی مانگ رکھنے والے پردیپ سے رابطے کی کوشش کی تو وہ ناکام رہے ۔پھر جب انہوں نے پردیپ کے گھر پر جاکر دیکھا تو وہ اپنا گھر خالی کرکے کہیں لاپتہ ہوچکا تھا۔اس لئے پردیپ کے ساتھ گھومنے پھرنے والے چار افراد کو عبدالعزیز اور جنتادل ایس کے دیگر اراکین نے پکڑلیااور انہیں پولیس کے حوالے کیا ہے۔

معلوم ہوا ہے کہ اس معاملے میں نرسمہا راج محلہ پولیس اسٹیشن میں عبدالعزیز نے اپنی شکایت درج کروائی ہے۔اس خبر کے عام ہوتے ہی مختلف سیاسی پارٹیوں کے اراکین کی بھیڑ پولیس اسٹیشن کےباہر  جمع ہوگئی۔

ایس ڈی پی آئی کے ایک ذمہ دار کا کہنا ہے کہ ووٹنگ مشینوں سے چھیڑ چھاڑ کے معاملے حقیقت پر مبنی ہونے کے امکانات  ہیں۔ ایس ڈی پی آئی کو بھی متوقع مقدار میں ووٹ نہیں ملے ہیں۔ اس سلسلے میں ایس ڈی پی آئی کا کہنا ہے کہ وہ  ہائی کورٹ میں شکایت درج کروائے گی۔ تاکہ اس کی گہرائی سے جانچ ہو اور اصل حقیقت عوام کے سامنے آئے۔

پولیس کمشنر ببرامنیشور راؤ کا کہنا ہے کہ جے ڈی ایس کے امیدوار عبدالعزیز کے الزامات کے مطابق شکایت درج کرلی گئی ہے۔اس بارے میں تحقیقات کی جارہی ہے۔ لیکن ووٹنگ مشین کو ہیاک کرنا کسی سے بھی ممکن نہیں ہے۔ ہم لوگوں نے اس کا تجربہ کرکے دیکھا ہے۔اس طرح کا خیال بے وقوفی کے سوا کچھ بھی نہیں ہے ۔اور تحقیقات کے بعد اس الزام میں اگرکوئی سچائی نظرنہیں آتی ہے تو پھرالزام لگانے والوں کے خلاف قانون کے مطابق سخت کارروائی کی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

مخلوط حکومت کوکوئی خطرہ نہیں ۔ صورتحال میڈیا کی پیداوار کوئی پارٹی نہیں چھوڑے گا ۔ جارکی ہولی برادران کے مسائل پر مشورہ کرنے سدارامیا دہلی جائیں گے

ریاستی مخلوط حکومت کی بقا کو لے کر پچھلے ایک ہفتہ سے چل رہا ڈرامہ ہنوز جاری ہے ۔ حالانکہ آج وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی اور ان کے بھائی ریاستی وزیر برائے تعمیرات عامہ ایچ ڈی ریونا نے مخلوط حکومت کے مستقبل کیلئے خطرہ پیدا کرنے والے جارکی ہولی برادران سے یہاں شہر کے ایک ہوٹل میں ...

حجاج کرام کے آٹھویں اور نویں قافلوں کی بنگلورو واپسی؛ حج کمیٹی چیرمین آر روشن بیگ ائرپورٹ پر حاجیوں کے استقبال کے لئے رہےموجود

حجاج کرام کے آٹھویں اور نویں قافلوں کی آج مدینہ منورہ سے بنگلور واپسی ہوئی۔ تقریباً ہر فلائی میں 300حجاج کرام پر مشتمل قافلے 42 دن قبل بنگلور سے سفر مقدسہ پر رخصت ہوئے تھے، فریضۂ حج کی تکمیل ،مکہ مکرمہ میں عبادات اور مدینے میں روضۂ رسول ؐ پر حاضری کی سعادتوں سے سرفراز ہوکر یہ ...

مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کی آج بنگلور آمد؛ آپریشن کمل کے جواب میں بی جے پی اراکین کے استعفوں کے خدشے؛ کیا اُلٹی پڑگئیں تدبیریں ؟

مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ منگل کو  بنگلور دورہ پر آرہے ہیں۔ حالانکہ بنگلور میں ان کا کوئی سرکاری پروگرام نہیں ہے، لیکن کہا جارہاہے کہ مخلوط حکومت کو گرانے کے لئے بی جے پی کی کوششوں کی مسلسل ناکامی کے بعد اس سلسلے میں ریاستی قائدین کو چند ہدایات دینے کے لئے وزیر داخلہ کا یہ ...

کرناٹکا کی مخلوط حکومت گرانے کے بی جے پی کے منصوبے پر پھر گیا پانی؛ کرناٹک کے بی جے پی قائدین پر امت شاہ گرم؛ پوچھا ،آپریشن کمل کی صلاحت نہیں تھی تو اس میں الجھے کیوں تھے

ریاستی حکومت کو ایک دن ایک ہفتہ اور ایک ماہ میں گرانے کے لئے بی جے پی قیادت بالخصوص ریاستی بی جے پی صدر بی ایس یڈیورپا کے تمام دعوؤں کی کانگریس اور جے ڈی ایس اتحاد نے ہوا نکال دی ہے۔جن اراکین اسمبلی کو آپریشن کمل کا شکار قرار دیاجارہاتھا انہوں نے عوام کے سامنے آکر واضح کردیا ہے ...