خوبصورت سیاحتی مقام مرڈیشورمیں عوام کا ہجوم مگر سہولیات نہ ہونے سے سیاح پریشان ؛ ضلعی انتظامیہ پر غفلت کا الزام

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 14th October 2016, 1:17 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل:12/اکتوبر(ایس او نیوز) دنیا بھر میں سیاحت کے لئے مشہور مرڈیشورمیں اس وقت سیاحوں کا ہجوم جمع ہورہا ہے مگر سیاح یہاں پر سہولیات نہ دئے جانے اور ہوٹلوں میں ڈبل اور ٹریبل کرایہ وصول کرنے کی شکایتیں کررہے ہیں۔ سیاحوں کا کہنا ہے کہ یہاں بنیادی سہولیات نہیں کے برابر ہیں، جبکہ سیاحتی مقام میں ترقی کی امید بھی ماند پڑتی جارہی ہے۔

ملک وبیرون ملک کے سیاح اپنی چھٹیوں کا لطف لینے کے لئے مرڈیشور آتے ہیں، جہاں تہاں بدنظمی سے کھڑی ہوئی سواریاں پارک کرکے سیاح ہجوم میں گم ہوجاتے ہیں۔ سمندر کنارے کچروں کا ڈھیر دیکھا جاسکتاہے۔ ماہی گیروں کی کشتیوں کے اطراف سیاحو ں کی سواریاں کھڑی ہونے سے ماہی گیروں کے لئے کافی پریشانی لاحق ہے، ماہی گیروں کے جال ، بوٹ وغیرہ شرارتیوں کے لئے ایک مذاق بن گیا ہے۔ باکڑا وغیرہ نکال باہر کرنے کے بعد ضلعی انتظامیہ کی طرف سے خاص بندوبست نہیں ہونے کی وجہ سے باکڑا دوکان مالکان پیٹ کے لئے دوبارہ سمندر کنارے کا رخ کررہے ہیں، قریب 20-25لوگ نئے دوکان شروع کرتے ہوئے بیوپار شروع کئے جانے کی اطلاعات ہیں۔ ضلعی انتظامیہ کی طرف سے سمندر کنارے کو پاک صاف کرنے کے لئے جلد بازی میں کارروائی تو کی گئی لیکن کام آگے نہیں بڑھا ، بس آبی کھیلوں کے لئے ٹینڈر بلانے تک ہی محدود ہوگیا ہے ۔ بنیادی سہولیات کی طرف افسران بھی کوئی خاص توجہ دینا چاہتے ۔ سابق وزیر سیاحت آر وی دیش پانڈے نے بنیادی سہولیات کے لئے منظورکئے کروڑوں روپئے کہاں گئے ؟ باکڑا دوکانوں کی تعمیر کا معاملہ کیا ہوا؟ ۔ اس معاملےمیں جب رکن اسمبلی سے پوچھا گیا تو جوب ملا کہ ضلعی انتظامیہ ہمیں پوچھے بغیر ہی آبی کھیلوں کے لئے ٹینڈر بلائی ہے، اور جو رقم منظور ہوئی ہے وہ کچرانکاسی ، سڑک درستی کےلئے استعمال کئے جانے کی بات کہی اور بتایا کہ مجھ سے جو کچھ ممکن ہے وہ میں کررہاہوں اور کرونگا، سڑک درستی جاری رہنے کی بات کہی۔ دوسری طرف دباؤ شکار ہوئے ماہی گیر اپنے لنگر کے لئے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹانے کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔ سیاحو ں کے قیام کے لئے کوئی مناسب رہائشی جگہ نہیں ملنے کی بھی شکایات موصول ہورہی ہیں۔ اور کچھ لوگ کمانےکی لالچ میں اپنے گھروں کو ہی لاڈج میں منتقل کردئیے ہیں۔ سیاح کے لئے کوئی مناسب سہولیات نہیں ہونےکی وجہ سے سیاح ادھر ادھر مارے مارے پھرتے دیکھے جاسکتے ہیں۔ تھوڑی سی خالی جگہ دیکھی تو وہیں ضروریات سے فارغ ہوگئے ۔ گڑھوں والی سڑک پر گزرنے والی سواریاں ماحول میں گدلا پن پیدا کرنا عام بات ہوگئی ہے۔ پولس بھی کوئی مناسب انتظام نہیں کرپانے کے الزامات بھی سنے جارہے ہیں۔ مرڈیشور میں مندر کو مرکز مان کر ہی ترقیات کے کام ہورہے ہیں، موجودہ صورت حال مندر کا ماحول اور سمندر کنارے کی سرگرمیاں ، دیگر معاملات کو کوئی تعلق ہونے کی اطلاع نہیں ہے۔ عوام اور سیاحوں کے سمجھ سے باہر ہے اور کوئی تجویز سوجھ نہیں رہی ہے کہ بدلتے  مرڈیشور کے متعلق کس سے پوچھیں ؟۔

مرڈیشور کی ترقی کے متعلق رکن اسمبلی منکال وئیدیا نے کہا کہ مرڈیشور سڑک ترقی کے لئے 4کروڑ روپئے کی لاگت سے کام جاری ہے۔ سڑک ، اندروانی نالیاں، روڈ لائٹ وغیرہ کے لئے 10کروڑ روپئے کی پیش کش کی گئی ہے، اور اعتماد بھی ہے کہ حکومت منظور کرے گی ، مرڈیشور میں ون وے کے لئے کوششیں جاری ہیں، آئندہ دنوں میں سڑک دباؤ کم ہونےکے امکانات ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

21مارچ سے ایس ایس ایل سی امتحانات : اترکنڑا ضلع میں کل 9766طلبا و طالبات کی سالانہ امتحانات میں شرکت

طلبا کی تعلیمی  زندگی کا پہلا اہم مرحلہ   ایس ایس ایل سی کے سالانہ امتحانات 21مارچ 2019سے 04 اپریل 2019منعقد ہونگے ۔ جس کے لئے اترکنڑا ضلع محکمہ  تعلیمات عامہ پوری طرح تیار رہنے کی  ڈپوٹی ڈائرکٹر کے منجوناتھ نے اطلاع دیتے ہوئے جانکاری دی ہے کہ اترکنڑا تعلیمی ضلع کے 5تعلقہ جات میں ...

اُڈپی : آر ایس ایس مسلمانوں سے زیادہ دلت مخالف ہے: سابق بجرنگ دل لیڈر مہیندر کمار

 آر ایس ایس حقیقت میں  دلت، شودر، مظلوم ، پسماندہ طبقات ، ہندو  اور ملک مخالف ہےوہ  مسلم مخالف نہیں ہے ،کیونکہ  یہ سب صرف نوجوانوں کو غلط راستے پر لے جانےکے لئے انہیں استعمال کرتی ہے۔ اگر اس کو اب نہیں سمجھیں گے تو پھر ایک بار ملکی آزادی کے لئے جدوجہد کی ضرورت پڑے گی۔ سماجی مفکر ...

بھٹکل کے ایک اُردو اسکول کے کمپائونڈ میں خون کے دھبے اور کھڑکی کے ٹوٹے گلاس پائے جانے کے بعد زبردست ہاتھاپائی ہونے کا شبہ

یہاں مدینہ کالونی ، محی الدین اسٹریٹ  میں واقع  اُردو ہائیر پرائمری اسکول  کی دیوار اور صحن پرجابجا  خون کے دھبے سمیت ایک کھڑکی کا شیشہ ٹوٹا ہوا پائے جانے  کے بعد شبہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ یہاں رات کو زبردست ہاتھاپائی یا ماردھاڑ کی واردات رونما ہوئی ہے۔ واقعے کے بعد  اسکول کے ...

ضلع شمالی کینرا کا انتخاب۔ منووادی اور غیر منووادیوں کے درمیان مقابلہ ہے؛ سیکولراُمیدوار کو جیت دلانا اہم مقصد ہونا چاہئے؛ سابق وزیر آر این نائک کا بیان

درپیش پارلیمانی انتخابات اور خاص کرکے ضلع شمالی کینرا کی سیٹ کو کانگریس کی طرف سے جنتا دل ایس کو مختص کیے جانے کے بعد سابق وزیر اور کانگریسی لیڈر ایڈوکیٹ آر این نائک نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اس بار ہونے والا انتخاب پارٹیوں کی جیت یا پارلیمان میں امیدواروں کی تعداد بڑھانے والا ...

شمالی کینرا پارلیمانی سیٹ کو جے ڈی ایس کے حوالے کرنے پر کانگریسی لیڈران ناراض؛ کیا دیش پانڈے کا دائو اُلٹا پڑ گیا ؟

ایک طرف کانگریس اور جنتا دل ایس کی مخلوط حکومت نے ساجھے داری کے منصوبے پر عمل کرکے سیٹوں کے تقسیم کے فارمولے پر رضامند ہونے کا اعلان کیا ہے تو دوسری طرف کچھ اضلاع سے کانگریس پارٹی کے کارکنان اور مقامی لیڈران میں بے اطمینانی کی ہوا چل پڑی ہے۔ جس میں ضلع اڈپی کے علاوہ شمالی کینرا ...

پاکستان پر فضائی حملے سے بی جے پی کے لئے پارلیمانی الیکشن کا راستہ ہوگیا آسان !  

پاکستان کے بہت ہی اندرونی علاقے میں موجود دہشت گردی کے اڈے پر ہندوستانی فضائی حملے سے بی جے پی کو راحت کی سانس لینے کا موقع ملا ہے اور آئندہ پارلیمانی انتخابات جیتنے کی راہ آسان ہوگئی۔اور اب وہ سال2017میں یو پی کے اسمبلی انتخابات جیتنے کی طرز پر درپیش لوک سبھا انتخابات جیتنے کے ...

ہندوستان میں اردو زبان کی موجودہ صورتحال، عدم دلچسپی کے اسباب اوران کا حل ۔۔۔۔ آز: ڈاکٹر سید ابوذر کمال الدین

یہ آفتاب کی طرح روشن حقیقت ہے کہ اردو بھی ہندی، بنگلہ، تلگو، گجراتی، مراٹھی اور دیگر ہندوستانی زبانوں کی طرح آزاد ہندوستان کی قومی اور دستوری زبان ہے جو دستورِ ہند کی آٹھویں شیڈول میں موجود ہے۔ لہٰذا یہ کوئی نہیں کہہ سکتا کہ اردو ہندوستان کی زبان نہیں ہے۔ جو ایسا کہتا ہے اور ...

آننت کمار ہیگڈے۔ جو صرف ہندووادی ہونے کی اداکاری کرتا ہے ’کراولی منجاؤ‘کے چیف ایڈیٹر گنگا دھر ہیرے گُتّی کے قلم سے

اُترکنڑا کے رکن پارلیمان آننت کمار ہیگڈے جو عین انتخابات کے موقعوں پر متنازعہ بیانات دے کر اخبارات کی سُرخیاں بٹورتے ہوئے انتخابات جیتنے میں کامیاب ہوتا ہے، اُس کے تعلق سے کاروار سے شائع ہونے والے معروف کنڑا روزنامہ کراولی منجاو کے ایڈیٹر نے  اپنے اتوار کے ایڈیشن میں اپنے ...

کیا جے ڈی نائک کی جلد ہوگی کانگریس میں واپسی؟!۔دیشپانڈے کی طرف سے ہری جھنڈی۔ کانگریس کر رہی ہے انتخابی تیاری

ایسا لگتا ہے کہ حالیہ اسمبلی انتخابات سے چند مہینے پہلے کانگریس سے روٹھ کر بی جے پی کا دامن تھامنے اور بی جے پی کے امیدوار کے طور پر فہرست میں شامل ہونے والے سابق رکن اسمبلی جے ڈی نائک کی جلد ہی دوبارہ کانگریس میں واپسی تقریباً یقینی ہوگئی ہے۔ اہم ذرائع کے مطابق اس کے لئے ضلع ...

ضلع شمالی کینرا میں پیش آ سکتا ہے پینے کے پانی کابحران۔بھٹکل سمیت 11تعلقہ جات کے 423 دیہات نشانے پر

امسال گرمی کے موسم میں ضلع شمالی کینرا میں پینے کے پانی کا شدید بحران پیدا ہونے کے آثار نظر آر ہے ہیں۔ کیونکہ ضلع انتظامیہ نے 11تعلقہ جات میں 428دیہاتوں کی نشاندہی کرلی ہے، جہاں پر پینے کے پانی کی شدید قلت پیدا ہوگئی ہے۔