محمداظہرالدین نے ٹی آرایس پربی جے پی سے ملی بھگت کاالزام لگایا

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 3rd December 2018, 2:14 AM | ملکی خبریں |

حیدرآباد: 2/دسمبر (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)ہندوستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان و کانگریس کے سینئر لیڈر محمد اظہر الدین نے کہا ہے کہ تلنگانہ کی حکمران جماعت ٹی آرایس کو ووٹ دینا بی جے پی کے ووٹ دینے کے مترادف ہے کیونکہ ٹی آرایس نے جی ایس ٹی ، صدارتی، نائب صدر کے انتخابات میں بی جے پی کاساتھ دیاتھا۔اظہر الدین نے تلنگانہ میں عظیم اتحاد کی حلیف جماعت تلگودیشم کے امیدوار ناما ناگیشور راو کے ساتھ آج کھمم میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے الزام لگایا کہ ٹی آرایس نے اقلیتوں کو نظر اندا ز کردیا۔انہوں نے کہا کہ ٹی آرایس حکومت نے 12فیصد ریزرویشن مسلمانوں کو دینے کا وعدہ کیا تھا جو پورا نہیں ہوسکا۔ یہ ٹی آرایس کا جھوٹا وعدہ ثابت ہوا اور جب وزیراعلیٰ سے اس تعلق سے پوچھا گیا تو ان سے سوال پوچھنے والے کو نامناسب جواب دیتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہاہے کہ وہ اس سوال کرنے والے کے باپ کو بتائیں گے۔ وزیراعلی کے عہدہ پر رہنے والے شخص کو اس طرح کی بات نہیں کرنی چاہئے کیونکہ عوام نے ان کو یہ عہدہ دیا ہے اور وہ عوام کو جوابدہ ہیں۔کانگریسی لیڈر نے کہا کہ تلنگانہ میں حکومت کی لاپرواہی کے سبب26 اقلیتی کالجس بند ہوچکے ہیں کیونکہ حکومت ان کو فنڈس نہیں دے رہی ہے۔انہوں نے کہاکہ اقلیتی فنڈس واپس کردیا گیااور اس کا مناسب استعمال نہیں کیاگیا۔اردو اکیڈیمی کیلئے بھی حکومت نے کچھ نہیں کیا۔وقف بورڈ کے دفتر کو کچھ عرصہ پہلے مقفل کردیاگیا تھا۔اظہرالدین نے اپیل کی کہ تلنگانہ کی اقلیتیں ریاست کی ترقی کیلئے متحد ہوکر عظیم اتحاد کے حق میں ووٹ دیں۔انہوں نے کہا کہ وہ اقلیتوں اور ہر طبقہ کیلئے کام کریں گے۔انہوں نے الزام لگایا کہ حکومت نے وعدہ کے مطابق عوام کو ڈبل بیڈروم کے مکانات نہیں دیئے۔حکومت کو پانچ سال کیلئے رائے عامہ دیاگیا تھا لیکن 9ماہ پہلے ہی انتخابات کر وائے جارہے ہیں۔اس کی وجہ یہ ہے کہ حکومت وعدوں کو پورا نہیں کرپائی۔پروجیکٹس کو ری ڈیزائن کرتے ہوئے ان کے تخمینی مصارف میں اضافہ کردیاگیا۔یہ پروجیکٹس کانگریس کے ہی ہیں۔ شادی مبار ک اسکیم کی کئی فائلس زیرالتوا ہیں۔تین ایکڑ اراضی غریبوں کو دینے کا بھی وعدہ پورا نہیں کیا گیا۔ٹی آرایس نے عوام سے جھوٹے وعدے کئے۔انہوں نے واضح کیا کہ تلنگانہ میں ترقی نہیں ہوئی۔ہر خاندان کے ایک فرد کو ملازمت دینے کاوعدہ بھی پورا نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں عظیم اتحاد کے قیام کے سلسلہ میں ناما ناگیشور راو کا بہت بڑا رو ل رہا۔

ایک نظر اس پر بھی

مودی جی کا پرگیہ سنگھ ٹھاکور سے لاتعلقی ظاہر کرنا ایسا ہی ہے جیسے پاکستان کا دہشت گردی سے ۔۔۔۔ دکن ہیرالڈ میں شائع    ایک فکر انگیز مضمون

 وزیر اعظم نریندرا مودی کا کہنا ہے کہ وہ مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کو دیش بھکت قرار دیتے ہوئے ”باپو کی بے عزتی“ کرنے کے معاملے پر پرگیہ ٹھاکورکو”کبھی بھی معاف نہیں کرسکیں گے۔“امیت شاہ کہتے ہیں کہ پرگیہ ٹھاکور نے جو کچھ کہا ہے(اور یونین اسکلس منسٹر اننت کمار ہیگڈے ...

لوک سبھا انتخابات؛ آخری مراحل کے انتخابات جاری؛ 918 اُمیدواروں کی قسمت داو پر؛ ای وی ایم میں خرابی کی شکایتیں؛ بنگال میں دو کاروں پر حملہ

لوک سبھا انتخابات کے ساتویں  اور آخری مرحلہ کے لئے اتوار کی صبح 7 بجے سے ووٹنگ جاری ہے۔جس میں  918 امیدواروں کی قسمت دائو پر لگی ہوئی ہے۔آج جاری انتخابات میں  وزیر اعظم نریندر مودی کا حلقہ انتخاب وارانسی بھی شامل ہے۔ 

دہشت گرد ہر مذہب میں ہیں: کمل ہاسن

تنازعات میں گھرے اداکار لیڈر کمل ہاسن نے جمعہ کو کہا کہ ہر مذہب میں دہشت گرد ہوتے ہیں اور کوئی بھی اپنے مذہب کوبہترین ہونے کا دعویٰ نہیں کر سکتا۔

بی جے پی کو280 سے زیادہ سیٹیں ملیں گی، این ڈی اے کی سیٹیں 300 سے متجاوز ہوں گی: پی مرلیدھر راؤ

بی جے پی لیڈر رام مادھو کے تخمینے کو مسترد کرتے ہوئے پارٹی کے سینئر لیڈر پی مرلیدھر راؤ نے کہا کہ بھگوا پارٹی کو 280 سے زیادہ سیٹیں ملیں گی جبکہ این ڈی اے کے سیٹوں کی تعداد 300 کے پار ہوں گی۔

مالیگاؤں 2008بم دھماکہ معاملہ: اے ٹی ایس کی عدالت سے غیر حاضری کے معاملے میں عدالت کا دخل دینے سے انکار

مالیگاؤں 2008 بم دھماکہ متاثرین جانب سے خصوصی این آئی اے عدالت میں داخل عرضداشت جس میں اس معاملے کی سب سے پہلے تفتیش کرنے والی تفتیشی ایجنسی ATSکی عدالت سے غیرحاضری پر سوال اٹھایا گیا تھا کو عدالت نے یہ کہتے ہوئے خارج کردیا کہ اے ٹی ایس کو پابند کرنا اس کے دائرہ اختیار میں نہیں ہے ...