صدر کے عہدے سے اڈوانی کا نام ہٹانے کے لیے مودی نے کی سوچی سمجھی سیاست :لالو پرساد یادو کا خیال

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 20th April 2017, 6:40 AM | ملکی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

پٹنہ، 19؍اپریل (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا ) آر جے ڈی سربراہ لالو پرساد نے آج الزام لگایا کہ سپریم کورٹ کے ذریعہ بابری مسجد شہادت کیس میں سی بی آئی کی عرضی منظور کیا جا نا اور بی جے پی کے سینئر لیڈروں لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی اور اوما بھارتی کے خلاف مجرمانہ سازش کے الزام کو بحال کیا جانا اڈوانی کا صدارتی امیدواری سے نام ہٹائے جانے کے لیے وزیر اعظم کی ایک سوچی سمجھی سیاست کا حصہ ہے۔پٹنہ میں صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے لالو نے الزام لگایا کہ جب سے صدر کے لیے اڈوانی کے نام کی بحث شروع ہوئی ہے، سی بی آئی نے خود سپریم کورٹ میں بابری مسجد شہادت کیس میں اڈوانی اور دیگر کے خلاف مقدمے کی سماعت شروع کرائے جانے کی اپیل کی تھی۔انہوں نے الزام لگایا کہ صدر کے عہدے کی امیدواری سے اڈوانی کا نام ہٹائے جانے کے لیے یہ نریندر مودی کی ایک سوچی سمجھی سیاست کا حصہ ہے۔اپنی دلیل کو ثابت کرنے کے لیے لالو نے الزام لگایا کہ یہ ثابت شدہ ہے کہ سی بی آئی وہی کرتی ہے جو مرکزی حکومت چاہتی ہے کیونکہ سی بی آئی مرکزی حکومت کے ماتحت ہوتی ہے۔لالو نے الزام لگایا کہ نریندر مودی کی مخالفت کرنے والے کسی بھی شخص کے خلاف خطرناک سیاسی کھیل کھیلنے میں بی جے پی اپنے پرائے کے درمیان بھی کوئی فرق نہیں کرتی ۔آر جے ڈی سربراہ سپریم کورٹ کے بابری مسجد کی شہادت معاملے میں سی بی آئی کی عرضی منظور کرنے اور بی جے پی کے سینئر لیڈران لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی اور اوما بھارتی کے خلاف مجرمانہ سازش کے الزام کو آج بحال کئے جانے پر اپنے ردعمل کا اظہار کر رہے تھے۔لالو نے چمپارن ستیہ گرہ صدسالہ تقریب کے موقع پر مشرقی چمپارن ضلع کے ہیڈکوارٹر موتیہاری میں بی جے پی کی طرف سے ’کسان کمبھ ‘کے انعقاد پر حملہ بولتے ہوئے اس پر ایک ہاتھ سے گاندھی جی کے مجسمہ پر گلہائے عقیدت پیش کرنے اور دوسرے ہاتھ سے ان کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کو سلامی دینے کا الزام لگایا۔

ایک نظر اس پر بھی

اروندر سنگھ لولی کی کانگریس میں واپسی، بی جے پی میں نظریاتی طور پر ’’بے میل ‘‘تھا :اروندسنگھ لولی

دہلی کانگریس کے سابق صدر اروندرسنگھ لولی کی آج کانگریس میں’’ گھر واپسی‘‘ ہو گئی۔ کچھ ماہ قبل پارٹی چھوڑ کر بی جے پی میں شامل ہوئے لولی نے کہا کہ وہ نے کہا کہ وہاں وہ ’’ نظریاتی طور پر بے میل ‘‘ تھے۔

گورکھپوراورپھول پور لوک سبھا ضمنی الیکشن کے لیے کانگریس نے امیدواروں کے نام کااعلان کیا

کانگریس نے گورکھپور اور پھول پورلوک سبھا سیٹوں پر ضمنی انتخابات کے لیے اپنے امیدواروں کااعلان کر دیاہے۔اتر پردیش کانگریس کے ترجمان وریندر مدان نے بتایا کہ پارٹی نے ڈاکٹر سرہیتا کریم کو گورکھپور اور منیش مشرا کو پھول پور لوک سبھاسیٹ پر ضمنی انتخاب کے لیے امیدواربنایاہے۔

تری پورہ اسمبلی الیکشن کے لئے تمام تیاریاں مکمل؛کل ہوگی ووٹنگ

تری پورہ میں اسمبلی کے انتخابات کے لیے تمام تیاریاں مکمل ہو چکی ہیں۔جمعہ کو انتخابی مہم ختم ہونے کے بعد،اتوار کے روز سب کی نگاہیں اب ووٹنگ پرہیں۔دراصل، تری پورہ میں کل یعنی اتوار کو انتخابات ہونے ہیں اور بھارتیہ جنتا پارٹی ان انتخابات میں حکمران بائیں محاذ کے سامنے اہم ...

کاسرگوڈ:غیرمحسوب14لاکھ روپے نقد لے جاتے ہوئے ایک شخص گرفتار

مصدقہ خفیہ اطلاع پر کارروائی کرتے ہوئے کُمبلے پولیس اسٹیشن کے افسران نے شانتی پالّا کے علاقے میں ایک کارروک لی اور اس کی تلاشی لینے پر کار کی سیٹ کے نیچے چھپاکر رکھے گئے 14,26,500روپے نقد بر آمد کیے جس کے تعلق مذکورہ شخص کے پاس کوئی حساب وکتاب نہیں تھا۔

حضرت مولانامفتی عبد القیوم رائے پوری کا انتقال

خانقاہ  رائے پور کی عالمی شہرت یافتہ شخصیت حضرت مولانامفتی عبد القیوم رائے پوری کا آج صبح یہاں طول علالت کے بعدانتقال ہوگیا۔ وہ طویل عرصہ سے صاحب فراش تھے۔ ان کی عمر تقریباً 85سال تھی۔