متحدہ عرب امارات میں حفظ قرآن جرم، حکومت کی منظوری کے بغیر کوئی شخص قرآن حفظ نہیں کرسکتا، مساجد میں مذہبی تعلیم اور اجتماع پر بھی پابندی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 18th November 2017, 10:04 PM | خلیجی خبریں |

دبئی17؍نومبر (ایس او نیوز؍ایجنسی)مشرقی وسطیٰ کے مختلف ممالک میں داخل اندازی اور عرب کی اسلامی تنظیموں کو دہشت گرد قرار دینے کے بعد متحدہ عرب امارات قانون کے ایسے مسودہ پر کام کررہا ہے جس کی رو ک سے حکومت کی منظوری کے بغیر قرآن شریف کا حفظ بھی غیرقانونی ہوگا۔ اس کے علاوہ حکومت کی منظوری کے بغیر مذہبی تقریریں بھی نہیں کی جاسکیں گی۔اس کی اطلاع خلیج ٹائمز نے دی ہے۔ اس مسودہ قانون کو دو روز قبل ہی وقافی کونسل کی جانب سے منظوری حاصل ہوگئی ہے اور اس کی خلاف ورزی کرنے والوں کو پانچ ہزار درہم جرمانے کے ساتھ سخت سزا کا بھی سامنا کرنا پڑے گا۔ مساجد میں بھی کسی قسم کی تقریر حکومت کی منظوری کے بغیر نہیں کی جاسکے گی اور ائمہ سے کہا گیا ہے کہ وہ مسجدوں میں حکومت کی منظوری کے بغیر مذہبی تعلیمات فراہم نہ کریں۔ متحدہ عرب امارات کی وفاقی قومی کونسل کے اسپیکر ڈاکٹر امل الفبیسی نے کہا کہ ہے کہ اس میں امارات میں موجود مساجد کے لئے قوانین اور ضابطے بنائے گئے ہیں۔ اگر قانون کے اس مسودہ کو پاس کردیا جاتا ہے تو حکومت کی منظوری کے ساتھ دئے جانے والے خطبات پر اعتراض کرنے والوں کو بھی تین ماہ قید کی سزا سنائی جائے گی ۔قابل ذکر ہے کہ متحدہ عرب امارات مذہبی مباحثہ کو متعدد برسوں سے کنٹرول کرنے کی کوششوں میں ہے اور اس نے  متعدد مسلم تنظیموں سمیت قدیم اسلامی تنظیم اخوان المسلمین کو دہشت گرد قراردے رکھا ہے۔ امارات اپنے سیاسی نقطہ نظر کے مطابق اسلام کی تشریح کرنے میں دلچسپی رکھتا ہے۔ خبر ہے کہ اس موسودہ قانون پر بحث کے دوران متعدد قانون سازوں نے اس پر بھی زور دیا کہ امارتی باشندوں سے سوشیل میڈیا پر ربط رکھنے والے غیرملکی علمائے دین کی بھی سخت نگرانی کی جائے۔کونسل کے ایک نمائندہ سید الرمیشی نے کہاکہ حکومت یہ جاننا چاہتی ہے کہ کون امارتی باشندہ کس سے مذہبی تعلیم حاصل کررہا ہے۔ الرمیشی نے مزید کہا کہ خدشہ اس بات کا ہے کہ امارتی باشندے غیر ملکی علماء سے فتوے حاصل کریں گے،اس لئے ہم نہیں چاہتے دوسری طرف سے اطلاع ہے کہ متحدہ عرب امارت کی حکومت نے اسکالرز کو منظوری دے گی جنہوں نے امریکی حکومت کے ساتھ مل کر کام کیاہے اور وہ اسلام کی تشریح مغرب کے زیر اثر کرنا چاہتے ہیں اس میں وہ ’معتدل اسلام‘ کا پروپگنڈہ بھی شامل ہے جو اس وقت سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان انجام دے رہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کے ہونہار طالب العلم صلاح الدین ایوب سدی باپا نے لی پیرس سے ماسٹر ڈگری

بھٹکل انجمن انجینرنگ کالج سے ڈگری حاصل کرنے والے صلاح الدین ابن ایوب سدی باپا نے فرانس کے مشہور شہر  پیرس سے  ماسٹر آف ڈگری حاصل کرتے ہوئے  قوم و ملت کا نام روشن کردیا ہے۔ موصوف معروف قومی سماجی  خدمت گار  مرحوم ظفر علی  معلم کے  نواسے اور مسقط  سرکاری اسپتال کی ڈاکٹر ...

سعودی عربیہ کو الوداع کہہ کر وطن لوٹنے کے بعدساحلی علاقے میں ICSE اور انگریزی میڈیم اسکولوں میں بڑھ گئے بچوں کے داخلے 

سعودی عربیہ میں غیر وطنی باشندوں اور ملازمین کے تعلق سے نئے اور سخت قوانین سے پریشان ہو کر غیر رہائشی ہندوستانیوں کے وطن واپس لوٹنے کے بعد ان کے بچوں کو اسکولوں میں داخل کرانے  کا مسئلہ بھی کافی سنگین ہوگیا ہے۔ مسئلہ یہ ہے کہ ریاست کرناٹک کے کسی بھی اسکول میں داخل  کرنے کی ...

سعودی کے نئے قانون سے ہندوستانی عوام سخت پریشان؛ 15 ماہ میں 7.2 لاکھ غیر ملکی ملازمین نے سعودی عربیہ کو کیا گُڈ بائی؛ بھٹکل کے سینکڑوں لوگ بھی ملک واپس جانے پر مجبور

سعودی عرب میں ویز ے کے متعلق نئے قانون کا نفاذ ہوتے ہی بھٹکل کے ہزاروں لو گ اپنی صنعت کاری، تجارت اور ملازمت کو الوداع کہتے ہوئے وطن واپس لوٹنے پر مجبورہوگئے  ہیں۔ اترکنڑا ضلع کے اس خوب صورت شہر بھٹکل کے  قریب 5000 لوگ سعودی عربیہ میں برسر روزگار تھے جن میں سے کئی لوگ واپس بھٹکل ...

بھٹکل مسلم جماعت بحرین کا خوبصورت عید ملین پروگرام 

بھٹکل مسلم جماعت بحرین نے 28/جون 2018ء کو عید ملن کی تقریب مشہور ڈپلومیٹ ریڈیشن بلو(Diplomat  Radssion  Blu) فائیو اسٹار ہوٹل میں بنایا۔ محفل کاآغاز تقریباً رات 10بجے عزیزم محمد اسعدابن محمدالطاف مصباح کی خوبصورت قرآن سے ہوا۔ محمد عاکف ابن محمد الطاف مصباح نے قرآن کاانگریزی ترجمہ پیش ...

بھٹکل :صحافتی میدان کے بے لوث اورمخلص خادم  ساحل آن لائن کے مینجنگ ایڈیٹر  ایوارڈ کے لئے منتخب

اترکنڑا ضلع ورکنگ جرنالسٹ اسوسی ایشن کی طرف سے دئیے جانےو الےمعروف ’’جی ایس ہیگڈے  اجِّبل ‘‘ ایوارڈ کے لئے اپنی جوانی کی ابتدائی  عمر سے ہی سوشیل میڈیا کے ذریعے صحافت کی دنیا میں قدم رکھتے ہوئے ایمانداری کے ساتھ قوم وملت کی بے لوث اور مخلصانہ خدمات انجام دینے والے ساحل آن ...

سعودی عرب میں خواتین کی ڈرائیونگ پر پابندی ختم

سعودی خواتین پر لگی ڈرائیونگ  کی پابندی ختم ہوتے ہی خواتین رات کے بارہ بجتے ہی جشن مناتے ہوئے  سڑکوں پر نکل آئیں اور کار میں بلند آواز میں میوزک چلاکر  شہروں کا چکر لگاتے ہوئے اس پابندی کے خاتمے کا خیر مقدم کیا۔