فرقہ وارانہ کشیدگی سے فائدہ اٹھانے کے لئے خود کو ہی زخمی کرلیا !

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 16th July 2017, 2:54 PM | ساحلی خبریں |

منگلورو ،16؍جولائی (ایس او نیوز)بجپے پولیس کے بیان کے مطابق 10جولائی کو نامعلوم لوگوں کی طرف سے حملے کی شکایت کرنے والے ابوبکر صدیق (30سال) کا معاملہ جھوٹا ثابت ہواکیونکہ فرقہ وارانہ کشیدگی کے موقع سے فائدہ اٹھانے کے لئے اس نے خود ہی اپنے سر پر بلیڈ سے زخم لگایا تھا اور موٹر بائک پر آنے والے نامعلوم افراد کی طرف سے حملہ کیے جانے کی من گھڑت کہانی پولیس کو سنائی تھی۔

کہتے ہیں کہ جب وہ زخمی حالت میں بجپے پولیس اسٹیشن پہنچا تھا تو اسے فوری طور پر علاج کے لئے اسپتال لے جایا گیا اور اس کے بھائی نے نامعلوم افراد کے خلاف تحریری شکایت درج کروائی تھی۔ لیکن تفتیش کے دوران ابوبکر کے بیانات میں تضاد سامنے آیا۔ جب سختی کے ساتھ پوچھ تاچھ کی گئی تو اس نے پولیس کومبینہ طور پر بتایا کہ سلام نامی ایک شخص سے اس نے 36ہزار روپے قرض لیا تھا۔ اورسلام رقم واپس مانگ رہاتھا۔ابوبکرایک معمولی مزدور ہے جو پتھر کی لاریوں پر مزدوری کیا کرتا ہے۔اس وجہ سے قرض کی رقم لوٹانا اس کے بس میں نہیں تھا۔لہٰذا اس نے خود کو فرقہ وارانہ تشدد کا شکار بتاکر اس پریشانی سے بچ نکلنے کا منصوبہ بنایاتھا۔

ڈائریکٹر جنرل آف پولیس روپک کمار دتّا نے بجپے پولیس ٹیم کو اس کامیاب کارروائی کے لئے نقد انعام اور ستائشی سند سے نوازا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کمٹہ بلاک کانگریس دفتر کا ضلعی صدر بھیمنانائک کے ہاتھوں افتتاح

مورور کے قریب اُڈپی ہوٹل سےمتصل کمٹہ بلاک کانگریس کے دفتر کا ضلع کانگریس کمیٹی صدر بھیمنا نائک نے افتتاح کرنے کے بعد خطاب کرتے ہوئے کہاکہ عوام کی سہولت کے لئے دفتر کا افتتاح کیاگیا ہے عوام اپنی شکایات اور مسائل کو یہاں پیش کرکے حل حاصل کرسکتےہیں۔ عوامی مسائل کے سلسلے میں ہی اس ...

بھٹکل کے اتی کرم داروں کو اراضی دستاویزات میں تاخیر کرنے پرراما موگیر برہم؛ ہزاروں آتی کرم داروں کی طرف سے احتجاج کا انتباہ

بیرونی ملک سے ضلع کو آئے تبتی(ٹبیٹین)عوام کو رہائش کے لئے ضلعی انتطامیہ نے مواقع فراہم کیا ہے۔ ضلع میں ہی پیدا ہوکر پرورش پانے والوں کو زمینی دستاویز(حق پترا) دینے کے لئے افسران ہی اہم وجہ سبب ہونے کا تعلقہ اتی کرم دارر ہوراٹ سمیتی کے صدر راما موگیر نے سخت برہمی  کااظہارکیا۔

بھٹکل اسمبلی حلقے میں کھیلا جارہا ہے ایک نیا سیاسی کھیل! کون بنے گا کانگریسی اُمیدوار ؟

یہ کوئی ہنسی مذاق کی بات ہرگز نہیں ہے۔بھٹکل کی موجودہ جو صورتحال ہے اس میں ایک بڑا سیاسی گیم دکھائی دے رہاہے۔ کیونکہ 2018کے اسمبلی انتخابات کی تیاریوں میں لگی ہوئی سیاسی پارٹیاں اپنا امیدوار کون ہوگا اس پر توجہ دینے کے ساتھ ساتھ مخالف پارٹیوں سے کون امیدوار بننے پر ان کی جیت کے ...