سنگھ پریوار کی مورل پولیسنگ کے خلاف ایک ہندو طالبہ اور اس کی ماں نے کھولا محاذ۔ پولیس میں درج کی شکایت

Source: S.O. News Service | Published on 11th January 2018, 1:40 PM | ساحلی خبریں |

منگلورو 11؍جنوری (ایس او نیوز) ساحلی علاقے اور خاص کر جنوبی کینرا میں ہندو لڑکیوں کے ساتھ مسلم لڑکوں کی دوستی یا جان پہچان کے معاملے میں سنگھ پریوار کے کارکنان کی جانب سے اخلاقی پولیس کے طور پر مداخلت کرنے، ڈرانے دھمکانے اور مارپیٹ کرنے کے واقعات دن بدن بڑھتے جارہے ہیں۔ اسی طرح کی مورل پولیسنگ کے نتیجے میں ابھی دو چار روز قبل موڈوگیری میں ایک نوجوان طالبہ نے خود کشی بھی کرلی تھی۔ مگر اب ایک غیر مسلم لڑکی اور اس کی ماں نے مورل پولیسنگ کرنے والوں کے خلاف محاذکھولتے ہوئے پولیس میں شکایت درج کروائی ہے۔

موصولہ تفصیلات کے مطابق مادھوری بولار نامی ایک طالبہ کا مسلم نوجوان کے ساتھ فوٹو سوشیل میڈیا پر مختلف گروپس میں اس پیغام کے ساتھ پوسٹ ہورہا ہے کہ:’’حمزہ کینیا ہماری ہندو لڑکیوں کے ساتھ دن دہاڑے بائک پر گھوم پھر رہا ہے۔اگر وہ آئندہ کبھی ہندو لڑکیوں کے ساتھ گھومتا ہوا دکھائی دیا تو ہندو تنظیموں کو اس کا جواب دینا ہوگا۔‘‘

مادھوری بولار کا کہنا ہے کہ یہ اس کا ایک سال پرانا فوٹو ہے جس میں وہ اپنے کالج کے ساتھی حمزہ کے علاوہ سہاس اڈیگا اور گنیش بولار کے ساتھ ایک کیمپ میں شرکت کے لئے گئی تھی۔ چونکہ وہ اسٹوڈنٹ فیڈریشن آف انڈیا (ایس ایف آئی) کی ڈسٹرکٹ سکریٹری ہے اور حمزہ جوائنٹ سکریٹری ہے اس لئے ان کو اس طرح کے پروگرامات میں شرکت کے لئے ایک ساتھ جانا پڑتا ہے۔لیکن کچھ لوگ اس کو نشانہ بناکربدنام اور ذہنی طور پر ہراساں کررہے ہیں۔ 

مادھوری نے اپنی ماں کے ساتھ پولیس اسٹیشن پہنچ کر جو شکایت درج کروائی ہے اس میں کم ازکم چھ وہاٹس ایپ گروپس اور اس کے ارکین کے ساتھ دیگر دو لڑکوں اور ایک لڑکی کو ملزم بناتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی طرف سے اس کو رسوا کرنے کی مہم چلائی جارہی ہے۔مادھوری کی ماں بھارتی بولارنے کہا ہے کہ و ہ اپنی بیٹی کی حمایت میں اس کے ساتھ کھڑی ہے۔ وہ کہتی ہیں کہ جنوبی کینرا میں مورل پولیسنگ کرنے والے گروہوں کے جانب سے نوجوانوں کو تنگ کرنے کا یہ کوئی پہلا معاملہ نہیں ہے۔ اس لئے اس طرح کی مذہبی نگرانی کا سلسلہ اب بندہوجانا چاہیے۔

پولیس کمشنر ٹی آر سریش نے پانڈیشور پولیس اسٹیشن میں داخل کیے گئے اس کیس کو سائبر کرائم برانچ کے پاس بھیج دیا ہے تاکہ اس سلسلے میں تحقیقات اورکارروائی کی جاسکے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میں کٹے ویرا کے زیراہتمام تین روزہ اسٹیٹ لیول کبڈی ٹورنامنٹ کا آج سے ہوا شاندار آغاز

کٹے ویرا اسپورٹس سینٹر کے زیراہتمام اسٹیٹ لیول کبڈی ٹورنامنٹ کا آج جمعہ شام سے یہاں ساگر روڈ پر گرو سدھیندرا کالج میدان میں بھٹکل رکن اسمبلی منکال وئیدیا کے ہاتھوں شاندار آغاز ہوا۔  تین روز ٹورنامنٹ کا فائنل مقابلہ اتوار کو کھیلا جائے گا جس میں اول آنے والی ٹیم کو ایک لاکھ ...

22جنوری ووٹرلسٹ میں نام درج کرنے یاترمیم و اضافے کی آخری تاریخ 

ضلع پنچایت کے سی ای او مسٹر ایل چندرا شیکھر نے کاروارآکاش وانی کے فون اِن پروگرام میں سوالات کے جواب دیتے ہوئے بتایا 18سال کی عمر کو پہنچنے والے ملک کے ہر باشندے کا یہ حق ہے کہ اس کا نام ووٹر لسٹ میں شامل ہو اور اسے حق رائے حاصل ہوجائے۔

بھٹکل:شرالی کے چتراپور سرکاری پرائمری اسکول کےمسئلہ کو حل کرنے عوام کا مطالبہ

شرالی کے چتراپور میں واقع سرکاری پرائمری اسکول کی زمین چتراپور مٹھ کی انتظامیہ کی تحویل میں آتی ہے۔ اسکول کے مستقبل کو دیکھتے ہوئے زمین اسکول کے نام رجسٹرڈ کرنے کاجمعہ کو منعقد کی گئی میٹنگ میں عوام نے مطالبہ کیا۔

اُلائی بیٹو فساد کے تعلق سے وجرے دیہی مٹھ سوامی کو عدالت میں حاضری کا سمن جاری

منگلورو سے قریب اُلائی بیٹو نامی مقام پر9دسمبر 2014کو ہوئے فساد سے متعلق معاملے کی سماعت کے دوران منگلورو کی سیکنڈ جے ایم ایف سی عدالت نے گروپور کے وجرے دیہی مٹھ کے سوامی راج شیکھرا نندا کو شخصی طور پر عدالت میں حاضر رہنے کا سمن جاری کردیا ہے۔