مالیگاؤں 2008ء بم دھماکہ معاملہ: ملزمین کے وکلاء نے زخمی گواہوں پر این آئی اے کے دباؤ میں جھوٹی گواہی دینے کا الزام عائد کیا

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 16th March 2019, 2:23 AM | ملکی خبریں |

ممبئی:15 /مارچ(ایس اونیوز /آئی این ایس انڈیا) مالیگاؤں2008ء بم دھماکہ معاملے میں ہائی کورٹ کے حکم نامہ سماعت روز بہ روز جاری ہے ، آج ان بم دھماکوں میں زخمی ہونے والے تین افراد کی گواہی عمل میںآئی جس کے دوران انہوں نے عدالت کو بتایا کہ 29/ستمبر ۲۰۰۸ء کو وہ بھکو چوک میں چائے پینے کے لیئے گئے تھا جب اچانک بم دھماکہ ہوگیا جس کی وجہ سے انہیں شدید چوٹیں آئیں تھیں۔سرکاری گواہوں نے خصوصی جج ونود پڈالکر کو بتایا کہ زخمی ہونے کے بعد انہیں مقامی لوگوں نے فاران اسپتال اورعلی اکبر اسپتال میں پہنچایا تھا جہاں انکا علاج کیا گیا اور بعد میں پولس نے ان کا بیان بھی درج کیا تھا۔وکیل استغاثہ اویناس رسال کی جانب سے پوچھے گئے سوالات کا جواب دیتے ہو ئے سرکاری گواہوں نے عدالت کو بم دھماکوں کے متعلق مزید تفصیلات بتاتے ہو ئے کہا کہ بم دھماکوں کے بعد علاقے میں افر ا تفری کو ماحول مچ گیا تھا اور موٹر سائکلیں بکھری پڑی ہوئی تھیں۔ سرکاری وکیل کے سوالات کے اختتا م کے بعد بھگوا ملزمین کے وکیل نے سرکاری گواہوں سے جرح کی اورحسب سابق ان پر این آئی اے کے دباؤ میں ملزمین کے خلاف جھوٹی گواہی دینے کا الزام عائد کیاہے۔اس معاملے میں ابتک 65 سرکاری گواہوں کی گواہی مکمل ہوچکی ہے جس میں ڈاکٹر اورزخمی شامل ہیں ۔ دوران کارروائی عدالت میں متاثرین نمائندگی کرنے والی تنظیم جمعیۃ علماء مہاراشٹر(ارشد مدنی) کی جانب سے وکلاء شاہ ندیم، ایڈوکیٹ محمد ارشد، ابھیشک پانڈے، ایڈوکیٹ ہیتالی سیٹھ، ایڈوکیٹ عادل شیخ ودیگرموجودتھے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

وزیراعظم مودی نے کابینہ سمیت سونپا صدرجمہوریہ کو استعفیٰ، 30 مئی کو دوبارہ حلف لینےکا امکان

لوک سبھا الیکشن کے نتائج کے بعد جمعہ کی شام نریندرمودی نے وزیراعظم عہدہ سے استعفیٰ دے دیا۔ ان کے ساتھ  ہی سبھی وزرا نے بھی صدرجمہوریہ کواپنا استعفیٰ سونپا۔ صدر جمہوریہ نےاستعفیٰ منظورکرتےہوئےسبھی سے نئی حکومت کی تشکیل تک کام کاج سنبھالنےکی اپیل کی، جسے وزیراعظم نےقبول ...

نوجوت سنگھ سدھوکی مشکلوں میں اضافہ، امریندر سنگھ نے کابینہ سے باہرکرنے کے لئے راہل گاندھی سے کیا مطالبہ

لوک سبھا الیکشن میں زبردست شکست کا سامنا کرنے والی کانگریس میں اب اندرونی انتشار کھل کرباہرآنے لگی ہے۔ پہلےسے الزام جھیل رہے نوجوت سنگھ سدھو کی مشکلوں میں اضافہ ہونےلگا ہے۔ اب نوجوت سنگھ کوکابینہ سےہٹانےکی قواعد نے زورپکڑلیا ہے۔

اعظم گڑھ میں ہارنے کے بعد نروہوا نے اکھلیش یادو پر کسا طنز، لکھا، آئے تو مودی ہی

بھوجپوری سپر اسٹار نروہوا (دنیش لال یادو) نے لوک سبھا انتخابات کے دوران سیاست میں ڈبیو کیا تھا،وہ بی جے پی کے ٹکٹ پر یوپی کی ہائی پروفائل سیٹ اعظم گڑھ سے انتخابی میدان میں اترے تھے لیکن اترپردیش کے سابق وزیر اعلی اکھلیش یادو کے سامنے نروہا ٹک نہیں پائے۔