ملائیشیا : حزب اختلاف کی اہم ترین شخصیات کے لیے عام معافی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 1:01 PM | عالمی خبریں |

کوا لالمپور 16 مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) ملائیشیا میں قید سیاسی رہ نما انور ابراہیم کو آج بدھ کے روز مکمل معافی دے دی گئی ہے۔ وہ کوالا لمپور کے اْس ہسپتال سے آزادانہ طور پر رخصت ہو گئے ہیں جہاں وہ زیر علاج تھے۔اس موقع پر کالے کوٹ میں ملبوس ٹائی باندھے ہوئے 70 سالہ انور ہسپتال سے باہر آئے تو انہوں نے اپنے حامیوں کو مْسکراہٹ کا تحفہ پیش کیا۔ وہ اپنے اہل خانہ ، وکیلوں اور جیل کے محافظین کے گھیرے میں گاڑی میں سوار ہوئے اور پھر ملائیشیا کے شاہ سے ملاقات کے لیے ان کے محل روانہ ہو گئے۔انور کے وکیل نے بتایا کہ شاہ کی جانب سے عام معافی کا اعلان جاری کیا گیا جس کا مطلب ہے کہ انور ابراہیم کے خلاف گزشتہ تمام الزامات ختم ہو چکے ہیں۔ادھر ملائیشیا کے نو منتخب وزیراعظم مہاتیر محمد نے کہا ہے کہ وہ اپنے منصب پر ایک یا دو سال رہ سکتے ہیں۔ مہاتیر نے اس بات کی جانب اشارہ کیا کہ وہ سبک دوشی کے بعد بھی پس پردہ رہ کر اپنا کردار ادا کرتے رہیں گے۔انہوں نے یہ بات منگل کے روز کوالا لمپور سے براہ راست وڈیو لنک کے ذریعے ٹوکیو میں وال اسٹریٹ جرنل اخبار کے لیے منعقد کانفرنس میں کہی۔حالیہ انتخابات میں مہاتیر کے سیاسی اتحاد نے حیران کن طور پر سابق وزیر اعظم نجیب عبدالرزاق کے مقابل کامیابی حاصل کر لی۔ مہاتیر نے امید ظاہر کی ہے کہ انور ابراہیم اتحاد میں موجود بقیہ تین جماعتوں کے سربراہان کی طرح اپنا کردار ادا کریں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

سویفٹ کا ایرانی بنکوں کو الگ کرنے کا اعلان

عالمی سطح پر رقوم کی ترسیلات کے سب سے بڑے نیٹ ورک "سویفٹ سسٹم" نے امریکا کی جانب سے ایران پر اقتصادی پابندیوں کے اعلان کے بعد ایرانی بنکوں کو مرحلہ وار سسٹم سے الگ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

پہلی عالمی جنگ کی صدی تقریب میں ٹرمپ کی شرکت 

امریکی صدر ڈونالڈ جمعے کی علی الصبح دورۂ یورپ کے لیے روانہ ہو رہے ہیں، جہاں وہ اور درجنوں دیگر عالمی سربراہان ’آرمزٹائس‘ معاہدے کی صد سالہ تقریبات میں شرکت کریں گے، جس کے نتیجے میں پہلی عالمی جنگ کا خاتمہ ہوا۔

ماسکو اجلاس میں ’اعلیٰ امن کونسل‘ غیر سرکاری حیثیت میں شریک ہے: افغان ترجمان

ایسا لگتا ہے کہ حکومتِ افغانستان نے ماسکو میں منعقدہ اجلاس سے اپنے آپ کو دور رکھا ہے، جہاں طالبان وفد پہلی بار کسی بین الاقوامی فورم پر نظر آیا۔حالانکہ ایک ہی روز قبل روسی وزارتِ خارجہ نے اعلان کیا تھا کہ اجلاس میں شرکت کے لیے صدر اشرف غنی اعلیٰ امن کونسل پر مشتمل وفد بھیج رہے ...