آئندہ ایک سال میں ہونگے پارلیمانی انتخابات۔ اننت کمار ہیگڈے مرکز میں رہیں گے یا ریاست میں؟

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 26th May 2018, 8:21 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل 26/جون  (ایس او نیوز) جون ۲۰۱۴ ؁ء میں اپنا پہلا سیشن شروع کرنے والی پارلیمان کی میعادمئی ۲۰۱۹ ؁ء کو ختم ہونے جارہی ہے۔ یعنی اس کا مطلب یہ ہے کہ آئندہ ایک سال کے اندر پارلیمانی انتخابات منعقد ہونگے۔ 

حالات پر خصوصی نظر رکھنے والوں کے علاوہ عام لوگوں کو بھی اس بات احساس ہوگیا ہے کہ ایک میعاد سے دوسری میعاد تک پہنچتے پہنچتے سیاسی ماحول پوری طرح بدل چکا ہے۔سوال یہ اٹھ رہا ہے کہ کیا آئندہ درپیش انتخاب میں حکومت کی ناکامیاں اپنا کوئی رول ادا کریں گی یا پھر جو حالات ہیں، انہیں میں خوش رہنے والا ماحول سامنے آئے گا، اور موجودہ حکومت کو ہی دوبارہ بر سر اقتدار آنے کا موقع دیا جائے گا۔

ضلع شمالی کینر ا  کی اگر بات کی جائے تو یہاں بھی کچھ تبدیلیاں ہونے کے امکانات نظر نہیں آرہے ہیں۔یہاں سب سے بڑا ایک سوال یہ کیا جارہا ہے کہ کیا اس مرتبہ پارلیمانی نشست پر موجودہ وزیر اننت کمار ہیگڈے انتخابی اکھاڑے میں اتریں گے یا پھر وہ ریاستی سطح پر ابھرنے کے لئے نئی حکمت عملی کے تحت اس سے دور رہیں گے۔کیونکہ اکثر لاپتہ رہ کر چھ مہینے میں ایک بار کبھی دہلی اور کبھی سرسی میں دکھائی دینے والے اننت کمار ہیگڈے اچانک ریاستی سیاست میں پچھلے کچھ مہینوں سے سرگرم ہوگئے ہیں۔اب ان کی دوڑ بھاگ صرف ضلع میں نہیں بلکہ ریاست بھر میں دکھائی دینے لگی ہے۔دوسری پارٹی کے لیڈروں کو بی جے پی میں شامل کروانے میں اننت کمار کا بڑا اہم رول صاف نظر آرہا ہے۔پارٹی کی طرف سے بھی اننت کمار ہیگڈے کو پارٹی کا ریاستی نائب صدر بنایا گیا ہے۔

پچھلے چھ مہینوں میں ان کی مشغولیت کو دیکھتے ہوئے انہیں ریاستی وزیراعلیٰ بنائے جانے کی بھی افواہیں اڑنے لگی تھیں۔اور کچھ مواقع پر اننت کمار ہیگڈے نے اپنی تقاریر میں اس بات کا بھی اشارہ کیا ہے کہ وہ اب پارلیمانی انتخاب میں حصہ لینے کا ارادہ نہیں رکھتے ۔پانچ مرتبہ رکن پارلیمان بناکر بھیجا یہی کافی ہے۔اسی پس منظر میں جانکاروں کاکہنا ہے کہ اننت کمار نے ریاستی گدی پر نشانہ سادھ لیا ہے۔اس اندازے کو تقویت دینے والا اشارہ اس بات سے بھی مل جاتا ہے کہ اس مرتبہ ریاستی اسمبلی کے لئے امیدواروں کو منتخب کرنے میں بھی کئی نشستوں پر اننت کمار نے اپنی بات منوائی ہے اور ہائی کمان سے اپنے پسندیدہ امیدوار کو ٹکٹ دلایا ہے۔اس لئے سیاسی پنڈتوں کا ایک حلقہ اننت کمار کو ریاستی سیاست میں قدم جماتے ہوئے دیکھ رہا ہے اور توقع یہ کی جارہی ہے کہ اس مرتبہ پارلیمانی الیکشن میں بی جے پی کی طر ف سے کوئی اور چہرہ میدان میں اترے گا۔

ایک نظر اس پر بھی

حلال آمدنی کے نام پر سرمایہ کاروں کو ٹھگنے کا الزام۔ہیرا گولڈ کی چیف نوہیرا شیخ حیدرآباد میں گرفتار۔ سرمایہ کاروں میں تشویش کی لہر

کئی برسوں سے ’ہیرا گولڈ‘ کے نام سے کمپنی چلانے اور حلال آمدنی کا وعدہ کرکے ہزاروں افراد سے سرمایہ کاری کروانے والی عالمہ ڈاکٹر نوہیرا شیخ کو حیدرآباد پولیس نے سرمایہ کاروں کو ٹھگنے الزام میں گرفتار کرلیا ہے۔

کاروار : یکم نومبر کے کنڑا راجیوتسوا پروگرام میں سرکاری افسران اور عملہ کی حاضری لازمی : ضلع ڈی سی

یکم نومبر کو منائےجانے والے ریاستی تہوار ’’کنڑا راجیوتسوا‘‘  ضلعی سطح پر کاروار میں منعقد ہونے والے پروگرام میں کاروار کے تمام سرکاری عملہ لازمی طورپر شریک ہونے کی ڈپٹی کمشنر ایس ایس نکول نے ہدایات جاری کی ہیں۔

بھٹکل میں کل بدھ کو ہوگا تنطیم میڈیا ورکشاپ کا عظیم الشان اختتامی اجلاس؛ بنگلور اور حیدرآباد سے میڈیا ماہرین کریں گے خطاب

مجلس اصلاح و تنظیم بھٹکل کی جانب سے پانچ روزہ ورکشاپ کا اختتامی اجلاس کل بدھ 17/اکتوبر کو  منعقد ہوگا جس میں سنئیر جرنلسٹ اور کرناٹکا کے سابق  وزیراعلیٰ سدرامیا کے خصوصی میڈیا مشیر مسٹر دنیش امین مٹّو مہمان خصوصی کے طور پر تشریف فرما ہوں گے۔

حلال آمدنی کے نام پر سرمایہ کاروں کو ٹھگنے کا الزام۔ہیرا گولڈ کی چیف نوہیرا شیخ حیدرآباد میں گرفتار۔ سرمایہ کاروں میں تشویش کی لہر

کئی برسوں سے ’ہیرا گولڈ‘ کے نام سے کمپنی چلانے اور حلال آمدنی کا وعدہ کرکے ہزاروں افراد سے سرمایہ کاری کروانے والی عالمہ ڈاکٹر نوہیرا شیخ کو حیدرآباد پولیس نے سرمایہ کاروں کو ٹھگنے الزام میں گرفتار کرلیا ہے۔

انتیا کمار سوامی وزیراعلیٰ کمار سوامی سے زیادہ امیر

انیتاکمار سوامی اپنے شوہر وزیراعلیٰ کمار سوامی سے زیادہ امیر ہیں ۔ پیر کو رام نگرم اسمبلی حلقے ضمنی انتخابات کے لئے امید وار ی پرچہ داخل کرتے وقت انہوں نے ڈکلیر کیا کہ ان کے پاس کل 124کروڑ روپئے اثاثہ جات ہیں جن میں ایک ہارلی دیوڈسن بائک اور ویانٹی وین بھی شامل ہیں۔

پانچ حلقوں کے لئے آج نامزدگیوں کی جانچ ہوگی

ریاست کے تین لوک سبھا اور دو اسمبلی حلقوں کے لئے ضمنی انتخابات کے لئے آج نامزدگیو ں کے داخلوں کی تکمیل کے ساتھ ہی تینوں اہم سیاسی جماعتوں کے امیدوار آمنے سامنے آگئے ہیں۔

ملک کے موجودہ حالات اور دینی سرحدوں کی حفاظت ....... بقلم : محمد حارث اکرمی ندوی

   ملک کے موجودہ حالات ملت اسلامیہ ھندیہ کےلیے کچھ نئے حالات نہیں ہیں بلکہ اس سے بھی زیادہ صبر آزما حالات اس ملک اور خاص کر ملت اسلامیہ ھندیہ پر آچکے ہیں . افسوس اس بات پر ہے اتنے سنگین حالات کے باوجود ہم کچھ سبق حاصل نہیں کر رہے ہیں یہ سوچنے کی بات ہے. آج ہمارے سامنے اسلام کی بقا ...

پارلیمانی انتخابات سے قبل مسلم سیاسی جماعتوں کا وجود؛ کیا ان جماعتوں سے مسلمانوں کا بھلا ہوگا ؟

لوک سبھا انتخابات یا اسمبلی انتخابات قریب آتے ہی مسلم سیاسی پارٹیاں منظرعام  پرآجاتی ہیں، لیکن انتخابات کےعین وقت پروہ منظرعام سےغائب ہوجاتی ہیں یا پھران کا اپنا سیاسی مطلب حل ہوجاتا ہے۔ اورجو پارٹیاں الیکشن میں حصہ لیتی ہیں ایک دو پارٹیوں کو چھوڑکرکوئی بھی اپنے وجود کو ...

بھٹکل میں سواریوں کی  من چاہی پارکنگ پرمحکمہ پولس نے لگایا روک؛ سواریوں کو کیا جائے گا لاک؛ قانون کی خلاف ورزی پر جرمانہ لازمی

اترکنڑا ضلع میں بھٹکل جتنی تیز رفتاری سے ترقی کی طرف گامزن ہے اس کے ساتھ ساتھ کئی مسائل بھی جنم لے رہے ہیں، ان میں ایک طرف گنجان  ٹرافک  کا مسئلہ بڑھتا ہی جارہا ہے تو  دوسری طرف پارکنگ کی کہانی الگ ہے۔ اس دوران محکمہ پولس نے ٹرافک نظام میں بہتری لانے کے لئے  بیک وقت کئی محاذوں ...

غیر اعلان شدہ ایمرجنسی کا کالا سایہ .... ایڈیٹوریل :وارتا بھارتی ........... ترجمہ: ڈاکٹر محمد حنیف شباب

ہٹلرکے زمانے میں جرمنی کے جو دن تھے وہ بھارت میں لوٹ آئے ہیں۔ انسانی حقوق کے لئے جد وجہد کرنے والے، صحافیوں، شاعروں ادیبوں اور وکیلوں پر فاشسٹ حکومت کی ترچھی نظر پڑ گئی ہے۔ان لوگوں نے کسی کو بھی قتل نہیں کیا ہے۔کسی کی بھی جائداد نہیں لوٹی ہے۔ گائے کاگوشت کھانے کا الزام لگاکر بے ...

اسمبلی الیکشن میں فائدہ اٹھانے کے بعد کیا بی جے پی نے’ پریش میستا‘ کو بھلا دیا؟

اسمبلی الیکشن کے موقع پر ریاست کے ساحلی علاقوں میں بہت ہی زیادہ فرقہ وارانہ تناؤ اور خوف وہراس کا سبب بننے والی پریش میستا کی مشکوک موت کو جسے سنگھ پریوار قتل قرار دے رہا تھا،پورے ۹ مہینے گزر گئے۔ مگرسی بی آئی کو تحقیقات سونپنے کے بعد بھی اب تک اس معاملے کے اصل ملزمین کا پتہ چل ...

گوگل رازداری سے دیکھ رہا ہے آپ کا مستقبل؛ گوگل صرف آپ کا لوکیشن ہی نہیں آپ کے ڈیٹا سےآپ کے مستقبل کا بھی اندازہ لگاتا ہے

ان دنوں، یورپ کے  ایک ملک میں اجتماعی  عصمت دری کی وارداتیں بڑھ گئی تھیں. حکومت فکر مند تھی. حکومت نے ایسے لوگوں کی جانکاری  Google سے مانگی  جو لگاتار اجتماعی  عصمت دری سے متعلق مواد تلاش کررہے تھے. دراصل، حکومت اس طرح ایسے لوگوں کی پہچان  کرنے کی کوشش کر رہی تھی. ایسا اصل ...