کاروار: کم عمر بچوں کی شادی کے خلاف قانون کا نفاذ۔، سرکاری افسران دیں گے مذہبی رہنماؤں کو جانکاری

Source: S.O. News Service | By Staff Correspondent | Published on 27th October 2018, 7:17 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

کاروار27؍اکتوبر (ایس او نیوز)کم عمر کے بچوں کی شادی پر جو قانونی پابندی سرکاری طور پر لاگو کی گئی ہے اس سلسلے میں بیداری لانے کے لئے محکمہ بہبودئ خواتین و اطفال کی جانب سے تمام مذاہب کے رہنماؤں جیسے پجاری، پادری اور مولویوں کو جانکاری دینے اور بچوں کی شادی پر روک لگانے کے سلسلے میں بیداری لانے کی مہم چلائی جائے گی۔

واضح رہے کہ سرکاری قانون کے مطابق شادی کے لئے لڑکی عمر 18سال اور لڑکے کی عمر21سال ہونا ضروری ہے۔ اس سے کم عمر میں اگر شادی کی جاتی ہے تو وہ ’بچہ شادی‘(چائلڈ میریج ) میں شمار کی جائے گی۔ایسی شادی قانونی طور پر قابل سزا جرم ہے اور سرکاری افسران کو مداخلت کرتے ہوئے ایسی شادیاں روکنے کے اختیارات حاصل ہیں۔یہ قانون 1929میں ہندوستان میں لاگو کیا گیا تھا۔ وقتاً فوقتاً اس میں ترمیمات بھی ہوتی رہی ہیں۔ مسلم طبقے کو ایک عرصے تک اس قانون کے دائرے سے باہر سمجھا جارہا تھا۔ مگر بعد میں کئی ریاستوں کے ہائی کورٹس میں مسلمانوں کی اپیلیں خارج ہوگئیں اور خواتین اور بچیوں کی فلاح و بہبود کے نقطۂ نظر سے ہر طبقے پر اسے لاگو قرار دیا گیا۔

چونکہ اس قانون کے اطلاق کے بعد بھی کم عمر لڑکے لڑکیوں کی شادیاں مسلسل منعقد ہورہی ہیں اس لئے2016 اس قانون میں ترمیم کرتے ہوئے سزا کے دائرے کو وسیع تر کردیاگیا ہے۔ اب ایسی شادیوں کو انجام دینے والے ہی نہیں بلکہ شادی میں شرکت کرنے والے، دولھا دلہن کے والدین، شادی ہال کرایے پر دینے والے،شادی کی مذہبی رسم انجام دینے والے پجاری؍ پادری؍مولوی یا او رکوئی مذہبی عالم کے علاوہ ایسی شادیوں کا دعوت نامہ چھاپنے والے پرنٹنگ پریس والوں پر بھی مجرمانہ کارروائی کے لئے کیس درج کیے جاسکتے ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ محکمہ بہبودئ خواتین و اطفال نے اس قانون کو سختی سے لاگو کرنے کی سمت قدم بڑھاتے ہوئے شادی کی رسم انجام دینے والے مذہبی رہنماؤں کو اس سلسلے میں جانکاری دینے اور ایسی شادیوں پر روک لگانے میں ان سے تعاون لینے کا فیصلہ کیا ہے۔اس کے لئے ہر تعلقہ میں موجود چائلڈ ڈیولپمنٹ آفیسر کے ذریعے مذہنی رہنماؤں، شادی محل کے مالکوں اورپرنٹنگ پریس والوں کو قانون کی دفعات اور اس کے تحت لاگو ہونے والی سزا کے بارے میں تمام تفصیلات سے آگاہ کرنے کی کارروائی انجام دی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

لوک سبھا انتخابات؛ اُترکنڑا میں کیا آنند، آننت کو پچھاڑ پائیں گے ؟ نامدھاری، اقلیت، مراٹھا اور پچھڑی ذات کے ووٹ نہایت فیصلہ کن

اُترکنڑا میں لوک سبھا انتخابات  کے دن جیسے جیسے قریب آتے جارہے ہیں   نامدھاری، مراٹھا، پچھڑی ذات  اور اقلیت ایک دوسرے کے قریب تر آنے کے آثار نظر آرہے ہیں،  اگر ایسا ہوا تو  اس بار کے انتخابات  نہایت فیصلہ کن ثابت ہوسکتےہیں بشرطیکہ اقلیتی ووٹرس  پورے جوش و خروش کے ساتھ  ...

بھٹکل میں بی کے ہری پرساد کا بی جے پی اور مودی پر راست حملہ، کہا؛ پسماندہ طبقات کومزید کمزور کرنے کی سازش رچی جارہی ہے

بی جے پی بھلے ہی اپنے آپ کو اقلیت مخالف پارٹی کے طور پر پیش کرتی ہو، مگر  دیکھا جائے تو یہ پارٹی حقیقتاً پسماندہ طبقات، دلت اور ادیواسیوں کو  مزید  کمزور کرنے کی سازش میں لگی ہوئی ہے اور صرف ایک طبقہ کو برسراقتدار پر لانے میں کوشاں ہے۔ یہ بات  آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی ...

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو آننت کمار ہیگڈے کو ہرگز ووٹ نہ دیں؛ بھٹکل میں ماہی گیروں سے پرمود مدھوراج کی اپیل

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو  آپ کو چاہئے کہ  ماہی گیروں کی پرواہ نہ کرنے والے بی جے پی اُمیدوار آننت کمار ہیگڈے  کو ہرگز ووٹ  نہ دیں۔ ملپے سے نکلی سات ماہی گیروں پر مشتمل بوٹ لاپتہ ہوکر  پانچ ماہ ہوچکے ہیں مگر مرکزی وزیر آننت کمار ہیگڈے کو ماہی گیروں کی پرواہ ہی نہیں ہے۔ ...

منگلورو میں ایک عجیب سانحہ۔بوتھ کے آخری ووٹر نے ووٹ دینے کے بعد لی آخری سانس

پاجیرو گاؤں کے پانیلا میں ایک شخص نے پولنگ بوتھ میں اپنا ووٹ ڈالنے کے بعد گھر لوٹتے ہی دم توڑ دیا۔پانیلا کے رہنے والے والٹر ڈیسوزا(۴۰سال) گردے کی بیماری میں مبتلا تھاجس کے لئے وہ بہت عرصے سے زیرعلاج تھا۔

لوک سبھا انتخابات: اُترکنڑا ڈپٹی کمشنر نے کمٹہ اوربھٹکل میں پارلیمانی انتخابات کی تیاریوں کا لیا جائزہ

ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے ضلع شمالی کینرا کے حلقے میں واقع کمٹہ اور بھٹکل شہروں میں پارلیمانی الیکشن کے لئے انتظامیہ کی طرف سے کی گئی حتمی تیاریوں کا معائنہ کیا۔

دو مراحل میں ایس پی۔بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘: یوگی

اتر پردیش کے وزیر یوگی آدتیہ ناتھ نے جمعہ کو کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے لئے ووٹنگ کے اختتام پذیر ہو چکے دو مراحل میں ایس پی، بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘ رہی ہیں۔ یوگی نے سنبھل میں ایک جلسہ عام میں کہا کہ ووٹنگ کے دو مرحلے ہو چکے ہیں۔ بی جے پی کو سب سے زیادہ ووٹ ملے ہیں۔ انہوں نے ...

لوک سبھا انتخابات: کیا اُترکنڑا میں انکم ٹیکس کے مزید چھاپے پڑنے والے ہیں؟

پارلیمانی الیکشن کے پس منظر میں محکمہ انکم ٹیکس اور انتخابی نگراں اسکواڈ کی طرف سے مختلف ٹھکانوں پر جو چھاپے مارے جارہے ہیں، اس تعلق سے خبر ملی ہے کہ ضلع شمالی کینرا میں مزیدکئی سیاسی لیڈروں اورتاجروں کے ٹھکانوں پر چھاپے پڑنے والے ہیں۔