کاروار: کم عمر بچوں کی شادی کے خلاف قانون کا نفاذ۔، سرکاری افسران دیں گے مذہبی رہنماؤں کو جانکاری

Source: S.O. News Service | By Staff Correspondent | Published on 27th October 2018, 7:17 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

کاروار27؍اکتوبر (ایس او نیوز)کم عمر کے بچوں کی شادی پر جو قانونی پابندی سرکاری طور پر لاگو کی گئی ہے اس سلسلے میں بیداری لانے کے لئے محکمہ بہبودئ خواتین و اطفال کی جانب سے تمام مذاہب کے رہنماؤں جیسے پجاری، پادری اور مولویوں کو جانکاری دینے اور بچوں کی شادی پر روک لگانے کے سلسلے میں بیداری لانے کی مہم چلائی جائے گی۔

واضح رہے کہ سرکاری قانون کے مطابق شادی کے لئے لڑکی عمر 18سال اور لڑکے کی عمر21سال ہونا ضروری ہے۔ اس سے کم عمر میں اگر شادی کی جاتی ہے تو وہ ’بچہ شادی‘(چائلڈ میریج ) میں شمار کی جائے گی۔ایسی شادی قانونی طور پر قابل سزا جرم ہے اور سرکاری افسران کو مداخلت کرتے ہوئے ایسی شادیاں روکنے کے اختیارات حاصل ہیں۔یہ قانون 1929میں ہندوستان میں لاگو کیا گیا تھا۔ وقتاً فوقتاً اس میں ترمیمات بھی ہوتی رہی ہیں۔ مسلم طبقے کو ایک عرصے تک اس قانون کے دائرے سے باہر سمجھا جارہا تھا۔ مگر بعد میں کئی ریاستوں کے ہائی کورٹس میں مسلمانوں کی اپیلیں خارج ہوگئیں اور خواتین اور بچیوں کی فلاح و بہبود کے نقطۂ نظر سے ہر طبقے پر اسے لاگو قرار دیا گیا۔

چونکہ اس قانون کے اطلاق کے بعد بھی کم عمر لڑکے لڑکیوں کی شادیاں مسلسل منعقد ہورہی ہیں اس لئے2016 اس قانون میں ترمیم کرتے ہوئے سزا کے دائرے کو وسیع تر کردیاگیا ہے۔ اب ایسی شادیوں کو انجام دینے والے ہی نہیں بلکہ شادی میں شرکت کرنے والے، دولھا دلہن کے والدین، شادی ہال کرایے پر دینے والے،شادی کی مذہبی رسم انجام دینے والے پجاری؍ پادری؍مولوی یا او رکوئی مذہبی عالم کے علاوہ ایسی شادیوں کا دعوت نامہ چھاپنے والے پرنٹنگ پریس والوں پر بھی مجرمانہ کارروائی کے لئے کیس درج کیے جاسکتے ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ محکمہ بہبودئ خواتین و اطفال نے اس قانون کو سختی سے لاگو کرنے کی سمت قدم بڑھاتے ہوئے شادی کی رسم انجام دینے والے مذہبی رہنماؤں کو اس سلسلے میں جانکاری دینے اور ایسی شادیوں پر روک لگانے میں ان سے تعاون لینے کا فیصلہ کیا ہے۔اس کے لئے ہر تعلقہ میں موجود چائلڈ ڈیولپمنٹ آفیسر کے ذریعے مذہنی رہنماؤں، شادی محل کے مالکوں اورپرنٹنگ پریس والوں کو قانون کی دفعات اور اس کے تحت لاگو ہونے والی سزا کے بارے میں تمام تفصیلات سے آگاہ کرنے کی کارروائی انجام دی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروار بوٹ حادثہ: زندہ بچنے والوں نے کیا حیرت انگیز انکشاف قریب سے گذرنے والی بوٹوں سے لوگ فوٹوز کھینچتے رہے، مدد نہیں کی؛ حادثے کی وجوہات پر ایک نظر

کاروار ساحل سمندر میں پانچ کیلو میٹر کی دوری پر واقع جزیرہ کورم گڑھ پر سالانہ ہندو مذہبی تہوار منانے کے لئے زائرین کو لے جانے والی ایک کشتی ڈوبنے کا جو حادثہ پیش آیا ہے اس کے تعلق سے کچھ حقائق اور کچھ متضاد باتیں سامنے آرہی ہیں۔ سب سے چونکا دینے والی بات یہ ہے کہ کشتی جب  اُلٹ ...

دارالعلوم اسلامیہ عربیہ تلوجہ میں علمائے شوافع کی جانب سے فقہی سمینار کا انعقاد ؛ علماء فقہائے شوافع نے حقیقتاً حدیث اور فقہ میں بہت نمایاں کام کیاہے: خالد سیف اللہ رحمانی 

بروز سنیچر 19؍ جنوری مجمع الامام الشافعی العالمی کی جانب سے دو روزہ پہلے فقہی سمینار کا آغاز کیا گیا اس سمینار کا افتتاحی جلسہ صبح 10؍ بجے جامعہ دارالعلوم اسلامیہ عربیہ تلوجہ ممبئی میں منعقد کیا گیا

بھٹکل: ریاست کے مشہور سد گنگامٹھ کے شری کمار سوامی جی کی وفات پر رابطہ ملت اترکنڑا کا اظہار تعزیت

ریاست کے قدآور ، معروف سد گنگا مٹھ کے شری کمار سوامی جی کے دارِ فانی سے کوچ کر جانے پر رابطہ ملت اترکنڑا ضلع کے عہدیداران نے اظہار تعزیت کرتے ہوئے کہا ہے کہ سوامی جی ملک کی ایک قوت کی مانند تھے۔

گنگولی کے آراٹے ندی میں غرق ہوکر لاپتہ ہونے والے ماہی گیر کی نعش آج برآمد

یہاں آراٹے ندی میں غرق ہوکر کل رات ایک ماہی گیر لاپتہ ہوگیا تھا، جس کی نعش آج متعلقہ ندی سے برآمد کرلی گئی ہے۔ ماہی گیر کی شناخت آراٹے کڑین باگل کے رہنے والے  کرشنا موگویرا (50) کی حیثیت سے کی گئی ہے۔

کنداپور میں ہوئی چوری کی واردات کے بعد پولس نے گھر میں نوکری کرنے والے میاں بیوی کوکیا گرفتار

کنداور دیہات کے سٹپاڑی کے ایک گھرمیں ہوئی  چوری کے معاملے میں کنداپور دیہی پولس نے فوری کارروائی کرتے ہوئے اسی گھر میں کام کرنےو الے میاں بیوی کو صرف دو دنوں میں ہی گرفتار کر کے معاملے کو حل کرنے میں کامیابی حاصل کرلی  ہے۔

پُتور میں پیک آپ کار کی اومنی سے خطرناک ٹکر؛ ایک کی موت، دو شدید زخمی

ماروتی اومنی اور  پیک آپ کے درمیان ہوئی خطرناک ٹکر کے  نتیجے میں اومنی پر سوار ایک شخص کی موت واقع ہوگئی، جبکہ دوسرا شدید زخمی ہوگیا، حادثے میں پیک آپ کار ڈرائیور کو بھی چوٹیں آئی ہیں ۔ حادثہ منگل صبح مُکوے مسجد کے سامنے   پیش آیا۔

شیرور میں کار کی ٹکر سے بائک سوار کی موت

پڑوسی علاقہ شیرور نیشنل ہائی وے پر ایک کار کی ٹکر میں بائک سوار کی موقع پر ہی موت واقع ہوگئی جس کی شناخت محمد راشد ابن محمد مشتاق (21) کی حیثیت سے کی گئی ہے جو شیرور  بخاری کالونی کا رہنے والا تھا۔

ہائی کمان کہے تو وزارت چھوڑ نے کیلئے بھی تیار : ڈی کے شیو کمار

ریاست میں سیاسی گہما گہمی کا فی تیز ہونے لگی ہے ۔ ایک طرف جہاں کانگریس اور جنتادل( سکیولر) اپنی مخلوط حکومت کو بچانے میں لگے ہیں وہیں بھارتیہ جنتا پارٹی ( بی جے پی ) نے آپریشن کنول کے ذریعہ دیگر پارٹیوں کے اراکین اسمبلی کو خریدکر برسر اقتدار آنے کے حربے جاری رکھے ہیں۔