کنداپور کے 2طلباء ہال ٹکٹ لینے کے بعد حادثاتی طور پر ایک جھیل میں ڈوبنے سے ہلاک

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 23rd April 2018, 9:04 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

کنداپور23؍اپریل (ایس او نیوز) اپنی آنکھوں میں زندگی کے سہانے سپنے سجائے دو نوجوان طلباء جب کالج سے اپنے ہال ٹکٹ لے کر نکلے تھے تو انہیں پتہ نہیں تھا کہ راستے میں موت ان کا انتظار کررہی ہے۔ یہ دردناک کہانی کیرتن (19سال) اور سچن(19سال) نامی دو دوستوں کی ہے جنہوں نے کالج سے نکل کر گھر جانے سے پہلے کوٹیشور مندر کے سامنے واقع جھیل میں نہانے کا فیصلہ کیا اور دونوں ڈوب کر ہلاک ہوگئے۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق یہ دونوں دوست کاگیری گورنمنٹ کالج کوٹیشور کے طالب علم تھے۔ کیرتن بی اے کے سال اول میں تھا اورسچن بی کام کے سال اول میں زیر تعلیم تھا۔کہاجاتا ہے کہ امتحان کی تیاریوں کے لئے کالج میں چھٹیاں چل رہی تھیں۔ کیرتن ، سچن اوران کے ایک اور دوست نے کالج پہنچ کر ہال ٹکٹ حاصل کرنے کے بعدکوٹیشور ٹیمپل جانے کا فیصلہ کیا۔ وہاں جھیل میں تیرنے کے لئے دو دوست پانی میں اترے جبکہ تیسرا دوست کنارے پر بیٹھا رہا۔ جب کافی دیر تک کیرتن اور سچن پانی سے باہر نہیں نکلے تو اس نے آس پاس کے لوگوں کو مطلع کیا۔فائر بریگیڈ عملے نے بڑی تلاشی کے بعد کیرتن کی لاش برآمد کرلی۔ سچن کی لاش کے لئے بڑے پیمانے پر تلاش جاری رہی۔کنداپور پولیس اسٹیشن کے انسپکٹر ہریش اور عملے نے جائے وقوع پر پہنچ کر جائزہ لیا اور معاملہ درج کرلیا۔اس المناک حادثے کی خبر عام ہوتے ہی مندر کی جھیل کے اطراف سینکڑوں لوگ جمع ہوگئے۔

ایک نظر اس پر بھی

سابق وزیراعظم دیوے گوڈا کا بھٹکل دورہ؛ کہا، جمہوریت خطرے میں ہے، اُسے بچانے کے لئے ہر شہری کو آگے آنا ہوگا

اس بار کے انتخابات سب سے زیادہ اہم اس لئے  ہے کہ مودی کے زیر اقتدار ملک کی جمہوریت کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے۔جب سے مودی ملک کے وزیراعظم  بنے ہیں ملک کے سرکاری جمہوری اداروں میں  دخل اندازی سے  عدالت تک محفوظ نہیں ہے، ریزروبینک آف انڈیا  ہو ، انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ ہو، سی بی آئی ...

ہلیال میں جے ڈی ایس لیڈر کے گھر پر انتخابی افسران کا چھاپہ ۔تلاشی کے بعد خالی ہاتھ واپس لوٹے افسران؛ کیا بی جےپی کو شکست کا خوف ہے؟

پارلیمانی انتخابات کے پیش نظر چیک پوسٹس پر تلاشی مہم کے علاوہ ہلیال شہر کے گوداموں، شراب کی دکانوں، موٹر گاڑیوں کی بھی مسلسل تلاشیاں لے رہے ہیں۔

لوک سبھا انتخابات؛ اُترکنڑا میں کیا آنند، آننت کو پچھاڑ پائیں گے ؟ نامدھاری، اقلیت، مراٹھا اور پچھڑی ذات کے ووٹ نہایت فیصلہ کن

اُترکنڑا میں لوک سبھا انتخابات  کے دن جیسے جیسے قریب آتے جارہے ہیں   نامدھاری، مراٹھا، پچھڑی ذات  اور اقلیت ایک دوسرے کے قریب تر آنے کے آثار نظر آرہے ہیں،  اگر ایسا ہوا تو  اس بار کے انتخابات  نہایت فیصلہ کن ثابت ہوسکتےہیں بشرطیکہ اقلیتی ووٹرس  پورے جوش و خروش کے ساتھ  ...

بھٹکل میں بی کے ہری پرساد کا بی جے پی اور مودی پر راست حملہ، کہا؛ پسماندہ طبقات کومزید کمزور کرنے کی سازش رچی جارہی ہے

بی جے پی بھلے ہی اپنے آپ کو اقلیت مخالف پارٹی کے طور پر پیش کرتی ہو، مگر  دیکھا جائے تو یہ پارٹی حقیقتاً پسماندہ طبقات، دلت اور ادیواسیوں کو  مزید  کمزور کرنے کی سازش میں لگی ہوئی ہے اور صرف ایک طبقہ کو برسراقتدار پر لانے میں کوشاں ہے۔ یہ بات  آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی ...

ہلیال میں جے ڈی ایس لیڈر کے گھر پر انتخابی افسران کا چھاپہ ۔تلاشی کے بعد خالی ہاتھ واپس لوٹے افسران؛ کیا بی جےپی کو شکست کا خوف ہے؟

پارلیمانی انتخابات کے پیش نظر چیک پوسٹس پر تلاشی مہم کے علاوہ ہلیال شہر کے گوداموں، شراب کی دکانوں، موٹر گاڑیوں کی بھی مسلسل تلاشیاں لے رہے ہیں۔