شاہ سلمان کے دورِ حکومت میں سعودی عرب میں تاریخی ڈھا نچہ جاتی اصلاحات

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 3rd June 2018, 11:32 AM | خلیجی خبریں |

ریاض،2جون ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا )شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے 2015میں شاہ عبداللہ کے انتقال کے بعد عنانِ اقتدار سنبھالی تھی۔ان کے زیر قیادت حکومت نے تب سے اب تک بڑے پیمانے پر مرحلہ وار ڈھانچا جاتی اصلاحات پر عمل درآمد کیا ہے۔اس کا مقصد سعودی عرب میں خواہشات پر مبنی ترقیاتی اہداف کا حصول ہے۔شاہ سلمان نے ہفتے کے روز محنت ، اسلامی امور اوراطلاعات و ثقافت کے ورزا کو تبدیل کردیا ہے۔انھوں نے ایک شاہی فرمان کے ذریعے ثقافت کی اطلاعات سے الگ ایک نئی وزارت قائم کردی ہے۔انھوں نے مقدس شہر مکہ کے لیے الگ سے ایک شاہی کمیشن اور ماحول کے تحفظ کے لیے ایک کمیشن کے قیام کا اعلان کیا ہے اور ساحلی شہر جدہ میں واقع تاریخی جگہوں کے تحفظ کے لیے ایک اتھارٹی کے قیام کی منظوری دی ہے۔شاہی فرامین کے تحت داخلہ ، ٹیلی مواصلات ، ٹرانسپورٹ ،توانائی ، صنعت اور معدنیات کی و زارتوں میں متعدد نائبین کا تقرر کیا گیا ہے۔شاہ سلمان نے شاہی کمیشن برائے ینبوع اور جبیل اور شاہ عبداللہ سٹی برائے جوہری اور قابل تجدید توانائی کے نئے سربراہوں کا بھی تقر ر کیا ہے۔تجزیہ نگاروں نے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ سعودی عرب میں انتظامی اصلاحات کا مقصد ریاستی اداروں کو افسر شاہی کی سرخ فیتے کی روایتی پابندیوں اور رکاوٹو ں سے آزاد کرنا ہے کیونکہ ان کی وجہ سے انتظامیہ کی کارکردگی اور فعالیت متاثر ہو رہی ہے۔ان کے بہ قول ڈھانچا جاتی اصلاحات دراصل موثر کارکردگی کے مقصد کے حصول کے لیے ایک مسلسل عمل ہیں۔مختلف اعلیٰ عہدوں پر نئے تقرر اور وزراء سے یہ بھی ظاہر ہوتا ہے کہ مختلف سرکاری محکموں میں اب نجی شعبے کو بھی شریک کار کیا جارہا ہے۔جیسا کہ نجی شعبے سے تعلق رکھنے والی کاروباری شخصیت احمد بن سلیمان الراجحی کو محنت اور سماجی ترقی کی وزرات کا قلم دان سونپا گیا ہے۔انھیں علی بن ناصر الغفیص کی جگہ یہ ذمے داری سونپی گئی ہے۔حکومتی ذرائع کے مطابق سعودی عرب کی 90 فی صد وزارتوں میں انڈر سیکریٹریز تعینات نہیں۔ نئی اصلاحات سے ان وزارتو ں میں اب اعلیٰ تعلیمی اہلیت اور قابلیت کے حامل افراد کے بہ طور انڈر سیکریٹری تقرر کی راہ ہموار ہوگی۔

ایک نظر اس پر بھی

خاشقجی کے قتل میں سعودی ولی عہد کے براہِ راست ملوث ہونے کا کوئی ثبوت نہیں: پومپیو

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے ایک بار پھرباور کرایا ہے کہ سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کا صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے ساتھ براہ راست کوئی تعلق نہیں اور انہیں اس کیس میں ملوث کرنے کا کوئی ٹھوس ثبوت نہیں ملا ہے۔امریکی وزیرخارجہ نے خاشقجی قتل کیس کے حوالے سے سعودی ...

شارجہ میں منکی کمیونٹی کی خوبصورت گیٹ ٹو گیدر تقریب؛ کرناٹک کے وزراء نے کی شرکت؛ منکی میں غریبوں کے لئے چالیس مکانات دینے کا اعلان

منکی کمیونٹی (یو اے ای) کی جانب سےگذشتہ روز شارجہ میں اتحاد و ملن کے نام پر   گیٹ ٹو گیدر کی ایک خوبصورت تقریب منعقد کی گئی جس میں کرناٹک کے وزراء نے بھی شرکت کی اور  منکی کے عوام کی کثیر تعداد ایک پلیٹ فارم پر نظر آنے پر نہایت  خوشی کا اظہار کیا۔ پروگرام میں  بچوں سمیت ...

18بیرونی ممالک میں ملازمت کرنے والوں کویکم جنوری سے لازمی طور پر آن لائن رجسٹریشن کرنا ہوگا

بیرونی ممالک میں ملازمت کرنے والوں کے لئے مرکزی حکومت نے ایک نئی شرط لاگو کردی ہے جس کے مطابق یکم جنوری 2019 ؁ء سے امیگریشن چیک ناٹ ریکوائرڈECNRوالا پاسپورٹ رکھنے والے ملازمین کے لئے لازمی ہوگا کہ وہ اپنا آن لائن رجسٹر کروائیں۔

سابق وزیراعظم دیوے گوڈا کی دبئی آمد پر تہنیتی پروگرام؛ پہلے ملک کے اندرونی مسائل حل کرنے کی طرف توجہ ہونی چاہئے؛ گوڈا نے مودی پر کسا طنز

سابق وزیراعظم  ایچ ڈی دیوے گوڈا کی دبئی آمد کے موقع پر کرناٹکا این آر آئی فورم کی جانب سے دبئی میں گذشتہ روز دیوے گوڈا کے لئے تہنیتی پروگرام کا انعقاد کیا گیا جس میں یہ بات بھی بتائی گئی کہ ریاست کرناٹک سے وزیراعظم منتخب ہونے والے دیوے گوڈا واحد شخص ہیں۔ پروگرام میں شال اوڑھ ...

دمام میں کاسرگوڈ کے ایک شخص کی لاش کی تین سال بعد تدفین

دمام سعودی عربیہ میں تین سال قبل انتقال کرگئے پڑوسی تعلقہ  کاسرگوڈ کیرالہ کے حسینار کنہی (۵۷سال) نامی ایک شخص کی لاش کو تین سال بعد دفنایا گیا۔ بتایا جاتا ہے کہ مرحوم حسینار کنہی کے پاسپورٹ پر درج اس کے  ہندوستانی پتے میں کچھ خامیاں تھیں اور پتہ نامکمل تھا اس لئے سعودی پولیس ...