صرف سو روپے میں پورے جسم کا طبی معائنہ کرنے پرچار۔ ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کے افسران نے جتایا ڈاکٹروں کے نقلی ہونے کاشک

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th August 2018, 8:39 PM | ساحلی خبریں |

کاروار10؍اگست (ایس او نیوز)گرام پنچایت علاقوں میں جاپان سے درآمد کردہ جدید مشین سے صرف ایک سو روپے میں پورے بدن کا طبی معائنہ کرنے کے لئے کیمپ لگانے والے ڈاکٹروں کی ٹولی پر ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کے افسران نے نقلی ڈاکٹر ہونے کا شک ظاہر کیا ہے۔

ایسا ایک میڈیکل چیک اپ کیمپ سرسی تعلقہ کے کانگوڈ پنچایت علاقے میں لگائے جانے کا اشتہار ی پمفلیٹ’وی فار یو‘ ادارے کے نام سے بانٹا گیا تھا اور کانگوڈ گرام پنچایت کے اشتراک سے میڈیکل کیمپ منعقد کرنے کی بات کہی گئی تھی۔ پمفلیٹ میں اس سے قبل یلاپور تعلقہ میں اور سرسی تعلقہ کے دیگر دو پنچایت علاقوں میں کیمپ لگاکر عوام کو فائدہ پہنچانے کا دعویٰ کیا گیا تھا۔اشتہار میں عوام سے کہا گیا تھا کہ جس طبی معائنے پر 10ہزار روپے خرچ آتا ہے ، وہ معائنہ اس کیمپ میں صرف ایک سو روپے میں کیا جائے گا۔خون یا کسی اور چیز کا ٹیسٹ کیے بغیر صرف دو سے تین منٹ میں پورے جسم کا طبی معائنہ کرنے کی بات بھی کہی گئی تھی۔پمفلیٹ کے مطابق ہبلی کے سریش پجاری کو اس کیمپ کا آرگنائزر بتایا گیا تھا۔

مبینہ ڈاکٹروں کے اس اشتہار کوپڑھ کر سیکڑوں لوگ مقررہ مقام پر طبی معائنے کے لئے جمع تو ہوگئے ، مگر تعجب خیز طور پر معائنہ کرنے والی ڈاکٹروں کی ٹیم وہاں پہنچی ہی نہیں۔اس لئے لوگوں کو یوں ہی واپس لوٹ جانا پڑا۔اس اشتہار کے پس منظر میں ڈاکٹروں کی اصلیت جاننے کے لئے ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کے افسران بھی کیمپ والے مقام پر پہنچے تھے، مگرڈاکٹروں کی ٹولی وہاں نہ پہنچنے کی وجہ سے انہیں بھی خالی ہاتھ لوٹنا پڑا۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق اس سے قبل سرسی اور یلاپور کے چند پنچایت علاقوں میں یہ کیمپ منعقد کیے جاچکے ہیں۔ جہاں صرف مریضوں کے فنگر پرنٹس لینے کے بعد ان کے جسمانی اعضاء سے متعلق پانچ صفحات پر مبنی’ میڈیکل رپورٹ‘انہیں تھمادی جاتی ہے۔ کانگوڈ گرام پنچایت کی صدر جلجاکشی ہیگڈے نے بتایا کہ غریب عوام کو فائدہ پہنچانے کی نیت سے گرام پنچایت نے اس ٹولی کے ساتھ اشتراک کا فیصلہ کیا تھا۔جب موقع پر جمع سیکڑوں افراد نے معائنہ کرنے والی ٹیم مقررہ مقام پر نہ پہنچنے کی وجہ سے مایوس ہوگئے تو گرام پنچایت صدر نے اشتہار میں دئے گئے نمبر پر رابطہ کیا تو پہلے تو ’رانگ نمبر‘ کہہ کر فون کاٹا گیا ۔ پھر بعد میں
’اجازت نہ ملنے ‘ کا بہانہ کیا۔ 

تعلقہ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر ونائک کنّی کا کہنا ہے کہ دس ہزار روپے خرچ آنے والاکوئی میڈیکل ٹیسٹ محض 100روپے کے اندر کرنا کسی صورت بھی ممکن نہیں ہے۔ اسسٹنٹ کمشنر راجو موگویر نے بتایا کہ یہ نقلی ڈاکٹروں کی طرف سے عوام کو دھوکا دینے کا معاملہ ہوسکتا ہے۔ اس سلسلے میں مناسب قانونی کارروائی کی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

شرالی قومی شاہراہ توسیع کا دھرنا تیسرے دن بھی جاری :  ضلع انتظامیہ کو  شاہراہ  تعمیر کا اختیار   نہیں : ایڈیشنل ڈی سی

شرالی میں گرام پنچایت کی قیادت میں 45میٹر کی توسیع والی شاہراہ تعمیر  کو لے کر  جاری دھرنے کے تیسرے دن کی دوپہر اترکنڑا ضلع ایڈیشنل ڈی سی ڈاکٹر سریش ہٹنال احتجاجیوں سے ملاقات کرتے  نیشنل ہائی وے اتھارٹی آف انڈیا کے حکم کے بنا ضلع انتظامیہ کچھ کرنا ممکن نہیں ہونے کی وضاحت کی۔ ...

بھٹکل انجمن ڈگری کالج کے زیر اہتمام 19فروری سے سہ روزہ یونیورسٹی سطح کا بیڈمنٹن ٹورنامنٹ انعقاد

کرناٹکا یونیورسٹی دھارواڑسے ملحق   کالجوں کے درمیان  مردوں اور خواتین کا زونل لیول سہ روزہ بیڈمنٹن ٹورنامنٹ 19فروری سے انجمن ڈگری کالج اینڈ پی جی سنٹر بھٹکل کے زیر سرپرستی انعقاد کئے جانےکی اطلاع کالج پرنسپال مشتاق شیخ نے دی۔

پلوامہ میں فوجیوں پر حملہ کے بعد اترکنڑا ضلع آٹویونین نے کیا ایک ہفتہ تک آٹو پر سیاہ پٹی باندھ کرشہید فوجیوں کوشردھانجلی دینے کا فیصلہ

جموں کشمیر کےپلوامہ میں سکیورٹی فورس پر ہوئے دہشت گرد حملے کی کڑی مذمت کرتے ہوئے ضلع کے آٹورکشاپر  اگلے ایک ہفتہ تک سیاہ پٹی باندھ کر شہید فوجیوں کو شردھانجلی دینے کا اترکنڑا ضلع آٹو رکشا یونین کے نائب صدر کرشنا نائک آسارکیری نے جانکاری دی۔