صرف سو روپے میں پورے جسم کا طبی معائنہ کرنے پرچار۔ ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کے افسران نے جتایا ڈاکٹروں کے نقلی ہونے کاشک

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th August 2018, 8:39 PM | ساحلی خبریں |

کاروار10؍اگست (ایس او نیوز)گرام پنچایت علاقوں میں جاپان سے درآمد کردہ جدید مشین سے صرف ایک سو روپے میں پورے بدن کا طبی معائنہ کرنے کے لئے کیمپ لگانے والے ڈاکٹروں کی ٹولی پر ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کے افسران نے نقلی ڈاکٹر ہونے کا شک ظاہر کیا ہے۔

ایسا ایک میڈیکل چیک اپ کیمپ سرسی تعلقہ کے کانگوڈ پنچایت علاقے میں لگائے جانے کا اشتہار ی پمفلیٹ’وی فار یو‘ ادارے کے نام سے بانٹا گیا تھا اور کانگوڈ گرام پنچایت کے اشتراک سے میڈیکل کیمپ منعقد کرنے کی بات کہی گئی تھی۔ پمفلیٹ میں اس سے قبل یلاپور تعلقہ میں اور سرسی تعلقہ کے دیگر دو پنچایت علاقوں میں کیمپ لگاکر عوام کو فائدہ پہنچانے کا دعویٰ کیا گیا تھا۔اشتہار میں عوام سے کہا گیا تھا کہ جس طبی معائنے پر 10ہزار روپے خرچ آتا ہے ، وہ معائنہ اس کیمپ میں صرف ایک سو روپے میں کیا جائے گا۔خون یا کسی اور چیز کا ٹیسٹ کیے بغیر صرف دو سے تین منٹ میں پورے جسم کا طبی معائنہ کرنے کی بات بھی کہی گئی تھی۔پمفلیٹ کے مطابق ہبلی کے سریش پجاری کو اس کیمپ کا آرگنائزر بتایا گیا تھا۔

مبینہ ڈاکٹروں کے اس اشتہار کوپڑھ کر سیکڑوں لوگ مقررہ مقام پر طبی معائنے کے لئے جمع تو ہوگئے ، مگر تعجب خیز طور پر معائنہ کرنے والی ڈاکٹروں کی ٹیم وہاں پہنچی ہی نہیں۔اس لئے لوگوں کو یوں ہی واپس لوٹ جانا پڑا۔اس اشتہار کے پس منظر میں ڈاکٹروں کی اصلیت جاننے کے لئے ہیلتھ ڈپارٹمنٹ کے افسران بھی کیمپ والے مقام پر پہنچے تھے، مگرڈاکٹروں کی ٹولی وہاں نہ پہنچنے کی وجہ سے انہیں بھی خالی ہاتھ لوٹنا پڑا۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق اس سے قبل سرسی اور یلاپور کے چند پنچایت علاقوں میں یہ کیمپ منعقد کیے جاچکے ہیں۔ جہاں صرف مریضوں کے فنگر پرنٹس لینے کے بعد ان کے جسمانی اعضاء سے متعلق پانچ صفحات پر مبنی’ میڈیکل رپورٹ‘انہیں تھمادی جاتی ہے۔ کانگوڈ گرام پنچایت کی صدر جلجاکشی ہیگڈے نے بتایا کہ غریب عوام کو فائدہ پہنچانے کی نیت سے گرام پنچایت نے اس ٹولی کے ساتھ اشتراک کا فیصلہ کیا تھا۔جب موقع پر جمع سیکڑوں افراد نے معائنہ کرنے والی ٹیم مقررہ مقام پر نہ پہنچنے کی وجہ سے مایوس ہوگئے تو گرام پنچایت صدر نے اشتہار میں دئے گئے نمبر پر رابطہ کیا تو پہلے تو ’رانگ نمبر‘ کہہ کر فون کاٹا گیا ۔ پھر بعد میں
’اجازت نہ ملنے ‘ کا بہانہ کیا۔ 

تعلقہ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر ونائک کنّی کا کہنا ہے کہ دس ہزار روپے خرچ آنے والاکوئی میڈیکل ٹیسٹ محض 100روپے کے اندر کرنا کسی صورت بھی ممکن نہیں ہے۔ اسسٹنٹ کمشنر راجو موگویر نے بتایا کہ یہ نقلی ڈاکٹروں کی طرف سے عوام کو دھوکا دینے کا معاملہ ہوسکتا ہے۔ اس سلسلے میں مناسب قانونی کارروائی کی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

فکرو خبراب نوائطی زبان میں بھی دستیاب؛ بھٹکل جماعت المسلمین قاضی کی دعا کے ساتھ ہوا خوبصورت اجراء

کرناٹک کے ساحل میں واقع شھر بھٹکل اپنی نوعیت کے اعتبار ایک امتیازی شان رکھتا ہے اسکا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ یہاں کے علماء کرام مختلف میدانوں اپنی نوعیت سے دعوتی سرگرمیاں انجام دے رہے ہیں۔ کل رات فکر وخبر ان لائن نے اپنے چوتھے ویب سائٹ نوائطی زبان میں اجرا کیا ۔ جس ...

کاروار : نجومی اور جوتشی سے اپنے مستقبل کو معلوم کرنے کے بجائے اپنی سوچ وفکر کو بدلیں  : کروالی اتسوا میں کرشماتی ماہر ڈاکٹر ہولیکل نٹراج  

دنیا میں فریب،دھوکہ عام بات ہے مگر دھوکہ کے جال میں پھنسنا بڑی بےو قوفی اور غلط بات ہے۔ گھر توڑ کر واستو(توہم پرستی کے چلتے گھر کے دروازے اور کھڑکیوں کے رخ کو متعین کرنےو الا نجوم ) صحیح کرنے کے بجائے اپنی ذہنی سوچ وخیال کو بدل لیجئے۔ کرشموں کا کچا چٹھا نکالنےمیں ماہر ڈاکٹر ...

کاروار : کراولی میاراتھان کا تین زمروں میں مقابلہ : سائمن اور ارچنا اول

اترکنڑا ضلع میں ہرسال منائے والے’ کروالی اتسوا‘کی مناسبت سے اتوار11ڈسمبر 2018 کو ساحل ِ سمندر رابندر ناتھ ٹیگور بیچ پر منعقدہ ’’کروالی رن میاراتھان‘‘(21کلو میٹر) کے مردوں کے زمرے میں سوڈان کے سائمن   اور خواتین کے زمرے  میں میسور کی ارچنا  نے وال مقام حاصل کیا ہے۔