کنڑا زبان سے ناواقف ہوتو پھر کرناٹکا میں وکالت کیوں کرتے ہو!۔ ایک وکیل کو کرناٹکا ہائی کورٹ کی پھٹکار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th February 2018, 8:23 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 19؍فروری(ایس او نیوز) کرناٹکا ہائی کورٹ میں جب ایک وکیل نے کنڑا زبان میں لکھے گئے دستاویزات پڑھنے میں دقت محسوس کی تو جسٹس روی مولی مٹھ اور جسٹس کے سوم شیکھر کی ڈیویژن بینچ نے پھٹکار سناتے ہوئے کہا کہ جب کنڑا زبان سے واقف نہیں ہوتو پھر کرناٹکا میں وکالت کیوں کرتے ہو۔تم کوفوجداری معاملات میں وکالت نامے داخل کرنا بندکرنا چاہیے۔

ہائی کورٹ کی مذکورہ بینچ نے یہ ریمارکس ایک ایسے معاملے کے دوران سنائے جس میں کیشو نامی شخص نے اسے اپنی بیوی کے قتل کے جرم میں سیشنس کورٹ سے سنائی گئی عمر قید رد کرنے کی کریمنل اپیل داخل کی تھی اور اس اپیل پر فیصلہ آنے تک عمر قید کی سزا معطل کرنے کے احکام جاری کرنے کا مطالبہ کیا تھا ۔ سیشنس کورٹ میں جو معاملہ پیش ہواتھا اس کے مطابق سن 2013میں کیشو نے اپنی بیوی کا قتل کرنے کے بعد خوداپنا گلا کاٹ کر خودکشی کرنے کی کوشش کی تھی۔ اس معاملے کی سماعت کے بعد سیشنس کورٹ نے کیشو کو عمر قید کی سنائی جس کے خلاف ہائی کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹاتے ہوئے ملزم کیشو نے یہ موقف رکھا ہے کہ اس نے اپنی بیوی کاقتل نہیں کیا تھا بلکہ جس شخص کے ساتھ اس کی بیوی کے ناجائز تعلقات تھے اسی نے قتل کیا تھا۔اور سیشنس کورٹ نے جو سزا اسے سنائی ہے وہ غلط ہے۔

اس تعلق سے ہائی کورٹ بیچ نے کیشو کے وکیلوں کو گواہوں کے بیانات پڑھنے کے لئے دئے۔ لیکن ان میں سے ایک وکیل کنڑا میں درج ان بیانات کو پڑھنے میں دشواری محسوس کررہاتھااور بعض الفاظ غلط ڈھنگ سے پڑھنے لگاتو جج نے مداخلت کرتے ہوئے کہا کہ گواہوں کے بیانات کنڑا میں درج ہوتے ہیں اور جب تمہیں کنڑا پڑھنانہیں آتا تو پھر تم کرناٹکا میں وکالت کیوں کرتے ہو؟ اس کے علاوہ کریمنل کیسس میں کسی انسان کی زندگی اور موت کا مسئلہ ہوسکتا ہے ۔ ایسی صورت میں گواہوں کے بیانات کو پڑھے اور سمجھے بغیر تم اپنے مؤکل کو کس طرح انصاف دلاسکتے ہو۔ لہٰذا اگر تمہیں کنڑا زبان معلوم نہیں ہے تو پھر کل سے تم کو کریمنل معاملات میں کسی کی پیروی کے لئے وکالت نامہ داخل نہیں کرنا چاہیے۔

سرکاری وکیل کا موقف سننے کے بعد ہائی کورٹ نے سیشنس کورٹ کی طرف سے دی گئی سزا کو معطل کرکے سماعت اگلی تاریخ کے لئے ملتوی کردی ہے۔
 

ایک نظر اس پر بھی

ملپے سے گم شدہ ماہی گیر کشتی معاملہ میں نیا موڑ: نیوی کے افسران نے مانا کہ جنگی جہاز سے ہواتھا کشتی کا تصادم

مہاراشٹرا میں سندھو درگ کے قریب سمندر میں ماہی گیری کے دوران مچھیروں سمیت لاپتہ ہونے والی کشتی ’سوورنا تریبھوجا‘ کے تعلق سے اب ایک نیا موڑ سامنے آیا ہے اور تحقیقاتی افسران کو یقین ہوگیا ہے کہ اس ماہی گیر کشتی کی ٹکر بحریہ کے ایک جنگی جہاز’آئی این ایس کوچی‘ سے ہوئی اور ماہی ...

کاروار بوٹ حادثہ: زندہ بچنے والوں نے کیا حیرت انگیز انکشاف قریب سے گذرنے والی بوٹوں سے لوگ فوٹوز کھینچتے رہے، مدد نہیں کی؛ حادثے کی وجوہات پر ایک نظر

کاروار ساحل سمندر میں پانچ کیلو میٹر کی دوری پر واقع جزیرہ کورم گڑھ پر سالانہ ہندو مذہبی تہوار منانے کے لئے زائرین کو لے جانے والی ایک کشتی ڈوبنے کا جو حادثہ پیش آیا ہے اس کے تعلق سے کچھ حقائق اور کچھ متضاد باتیں سامنے آرہی ہیں۔ سب سے چونکا دینے والی بات یہ ہے کہ کشتی جب  اُلٹ ...

گرفتاری کے خوف سے رکن اسمبلی جے این گنیش روپوش

بڈدی کے ایگل ٹن ریسارٹ میں ہوسپیٹ کے رکن اسمبلی آنند سنگھ پر حملہ کرنے والے رکن اسمبلی جے این ۔ گنیش کے خلاف بڑدی پولیس تھانہ میں ایف آئی آر داخل کرنے کی خبر کے بعد سے گنیش لاپتہ ہیں ۔

وسویشوریا یونیورسٹی رجسٹرار پر200کروڑ کے گھپلے کا الزام گورنر نے چھان بین کے لئے وظیفہ یاب جج کو مقرر کیا ۔ تعاون کرنے ملزم کو ہدایت

وسویشوریا ٹکنالوجیکل یونیورسٹی (وی ٹی یو) کے رجسٹرار اب مشکل میں پڑگئے ہیں۔ گورنر واجو بھائی روڈا بھائی والا نے جو یونیورسٹی کے چانسلر بھی ہیں،200کروڑ روپئے تک کے گھوٹالے کی چھان بین کا حکم دیا ہے۔

لنگایت طبقہ کے مذہبی رہنما شیوکمارسوامی کی آخری رسومات ادا، اسلامی تعلیمات اوراردو زبان سے بھی تھی واقفیت

یاست کرناٹک کی ایک عظیم شخصیت، لنگا یت طبقہ کے مذہبی رہنما، شیوکمارسوامی جی کی آج آخری رسومات انجام دی گئیں۔ بنگلورو کے قریب واقع ٹمکورشہرمیں شیوکمارسوامی جی کولنگایت رسومات کے مطابق دفنایا گیا۔ سدگنگا مٹھ میں آج اورکل لاکھوں کی تعداد میں لوگوں نے سوامی جی کا آخری ...