کرناٹک کے 3450 سرکاری پرائمری اسکول بند کم تعداداور ایک استاد والے اسکولوں کو ضم کردیا جائیگا: این مہیش

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th June 2018, 11:01 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو، 13 جون(ایس او  نیوز) کرناٹک کے جن سرکاری اسکولوں میں بچوں کی تعداد بہت کم ہے اور ان اسکولوں میں صرف ایک ہی استاد خدمت انجام دے رہا ہو تو ایسے اسکولوں کو قریبی اسکولوں میں ضم کردیا جائے گا ۔ وزیر برائے ابتدائی و ثانوی تعلیم این مہیش نے یہ بات بتائی ۔ محکمہ تعلیمات کے اعلیٰ افسروں کی میٹنگ کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ کرناٹک میں تقریباً 3,450 ایسے سرکاری پرائمری اسکول ہیں جہاں بچوں کی تعداد بہت کم ہے اور ان اسکولوں میں صرف ایک استاد پڑھارہا ہے ۔ تعلیمی اورمالی نظریہ سے ان اسکولوں کوضم کردیا جائے گا اور ان اسکولوں کو فراہم کی جانے والی بنیادی سہولت دیگر اسکولوں میں استعمال کی جائے گی ۔ اسکولوں کو ضم کرنے کے بعد وہاں کے طلباء کو اسکول پہنچنے میں آسانی لانے کے لئے ٹرانسپورٹ کا بھی انتظام کیا جائے گا ۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست میں موجود 43,712 سرکاری اسکولوں کے مقابلے 3,372 (تقریباً 15.89 فیصد) لوئر پرائمری اور 78 (تقریباً 7.89 فیصد) ہائی پرائمری سمیت جملہ 3450 اسکولوں میں صرف ایک استاد خدمت انجام دے رہا ہے ۔ ان اسکولوں میں طلباء کی تعداد بھی زیادہ نہیں ہے اس لئے متعلقہ گرام پنچایت کی حدود میں واقع اسکولوں کو بند نہیں کئے جائیں گے بلکہ قریبی اسکولوں میں ضم کردیئے جائیں گے ۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست میں 366اسکول ایسے بھی ہیں جن میں داخلہ صفر ہے ۔ 20,749 اسکولوں میں طلباء کی تعداد 50 سے کم ہے جبکہ یہاں 1,16,861 اساتذہ خدمت انجام دے رہے ہیں ۔ ایسے اسکولوں کو کیا کرنا چاہئے اسکے متعلق غور کیا جارہا ہے ۔کرناٹک میں مقیم پبلک اسکولوں کی کارکردگی کے متعلق رد عمل ظاہر کرتے ہوئے وزیر موصوف نے بتایا کہ پہلی جماعت سے پی یو سی سال دوم تک ایک ہی چھت تلے تعلیم فراہم کرنے والے 176پبلک اسکولس کرناٹک میں موجود ہیں ۔ عنقریب ان اسکولوں کا دورہ کرکے وہاں کی صورتحال کا جائزہ لیا جائے گا ۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ سابقہ حکومت کی طرف سے طالبات کو مفت تعلیمی سہولت فراہم کئے جانے کے متعلق اعلان کردہ اسکیم کو جاری رکھا جائے گا ۔ اس سلسلہ میں وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی نے بھی یقین دہانی کرائی ہے ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ایس ایس ایل سی امتحان میں لڑکوں کے مقابلے لڑکیاں زیادہ کامیاب ہوتی ہیں ۔ اس کے باوجود اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے میں لڑکیاں سب سے پیچھے رہتی ہیں ۔ اس لئے انہیں مفت تعلیمی سہولت فراہم کی جائے گی ۔ ایک دوسرے سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ 16 جون تک جاری رہنے والے ضابطہ اخلاق کی مدت ختم ہونے کے بعد تقریباً 10ہزار اساتذہ کی اسامیاں بھرتی کی جائیں گی ۔ اس کے لئے وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی کی بھی منظوری مل گئی ہے۔ فی الحال 22 ہزار اساتذہ کی قلت ہے۔ ہر سال 4 ہزار اساتذہ کا تقرر کرنا پڑے گا لیکن امسال 8 ہزار اساتذہ کا تقرر کرنے کا فیصلہ ریاستی حکومت کے زیر غور ہے ۔ 

ایک نظر اس پر بھی

صفائی کرنے والی گاڑیوں کے آپریٹروں نے کام روک دیا بقایہ رقم ادا نہ کرنے کا بی بی ایم پی پر الزام

مہادیوپورہ میں مشینوں کے ذریعہ صفائی کا کام کرنے والوں نے اچانک اپنا کام روک دیا ہے ۔ صفائی کی گاڑیاں چلانے والے آپریٹروں کے سینئر سوپروائزر ایم کے پاشاہ نے اپنے ایک بیان میں بتایا کہ بروہت بنگلورو مہانگر پالیکے (بی بی ایم پی) نے گزشتہ 6؍ مہینوں سے ان کے بقایا جات روک رکھے ہیں۔

میٹرو اسمارٹ کارڈاستعمال کرنے والوں کی تعداد میں اضافہ روزانہ 1700؍کارڈ فروخت ہوتے ہیں: بی ایم آرسی ایل

بنگلوروشہر میں میٹرو ٹرین سرویس کا آغاز 8؍ سال قبل ہوا تھا اس کے بعد سے اب تک بنگلور میٹروریل کارپوریشن لمیٹڈ (بی ایم آر سی ایل) نے 14؍ لاکھ اسمارٹ کارڈس فروخت کئے ہیں اور سب سے زیادہ کارڈس حالیہ سالوں میں ہوئے ہیں۔

ہوناور:پریش میستاکی پراسرار موت کے معاملے میں نیا خلاصہ۔ واردات سے پہلے بند کردیا گیا تھا سی سی کیمرہ !

ہوناور میں فرقہ وارانہ کشیدگی کے دوران پریش میستانامی نوجوان کی پراسرار موت کو سنگھ پریوار کی طرف سے فرقہ وارانہ قتل قرار دیا جارہا تھا۔لیکن سی بی آئی کی تحقیقات دوران اس معاملے نے اب ایک نیا رخ لے لیا ہے۔

انتخابات تک ودھان سودھا کو تالالگادیا جائے، ضمنی انتخابات کی طرف حکومت کی مکمل توجہ سے یڈیورپا ناراض

سابق وزیراعلیٰ اور ریاستی بی جے پی صدر بی ایس یڈیورپا نے پانچ حلقوں کے ضمنی ا نتخابات کے لئے وزراء اور حکمران اتحاد کے اراکین اسمبلی کو مکمل طور پر انتخابی مہم میں جھونک دئے جانے پر سخت اعتراض کرتے ہوئے کہا ہے کہ جب تک ضمنی انتخابات نہیں ہوجاتے بہتر ہے کہ وزیراعلیٰ کمار سوامی ...