وزارت کی توسیع میں تاخیر کانگریس کے لئے پریشانی کا سبب ، توسیع کے ساتھ قلمدانوں کی تبدیلی کے لئے بھی پارٹی کی پہل

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 28th August 2018, 10:53 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،28؍اگست(ایس او نیوز) ریاستی کابینہ میں توسیع میں ہورہی تاخیر کی وجہ سے دن بدن کانگریس میں بڑھتی ہوئی بے چینی اور اس وجہ سے ریاستی حکومت کے استحکام پر اثرات کے امکانات کو دیکھتے ہوئے کانگریس اعلیٰ کمان نے پہل کی ہے کہ جلد از جلد نہ صرف ریاستی کابینہ کی توسیع کی جائے بلکہ چند وزراء کے قلمدانوں کی تبدیلی بھی کردی جائے۔

ذرائع کے مطابق اے آئی سی سی جنرل سکریٹری وینو گوپال یکم اور 2؍ ستمبر کو بنگلور میں قیام کے دوران وزارت نہ ملنے سے ناراض اراکین اسمبلی سے تبادلۂ خیال کریں گے اور تمام کو وزارت نہ دینے کے متعلق پارٹی کی مجبوری سے انہیں آگاہ کرائیں گے، اور ساتھ ہی وزارت کے لئے جن ناموں کو منظوری دی گئی ہے ان پر ایک بار پھر اعلیٰ کمان کی قطعی منظوری کے لئے پہل کریں گے۔

بی جے پی کی طرف سے کسی بھی حال میں اقتدار پر قبضہ کرنے کے لئے جاری کوششوں کے درمیان برگشتہ کانگریس اراکین اسمبلی کو بی جے پی کاشکار ہونے سے فوری طور پر بچانے کے لئے کانگریس اعلیٰ کمان نے طے کیا ہے کہ کابینہ میں ردوبدل جو کافی دنوں سے زیر التواء ہے اس کو مکمل کرلیا جائے اور پارٹی کی تمام چھ خالی وزارتی نشستوں کو پر کردیں۔ اس کے لئے چند نام قطعیت پاچکے ہیں، ایک بار پھر اعلیٰ کمان کی منظوری کے بعد یہ فہرست وزیر اعلیٰ کمار سوامی کو سونپ دی جائے گی۔

بتایاجاتاہے کہ آنے والے لوک سبھا انتخابات کو ذہن میں رکھتے ہوئے پارٹی وزارت کی فہرست تیار کرنے میں لگی ہوئی ہے۔ یہ کوشش کی جارہی ہے کہ وزارت کی تشکیل کے بعد پارٹی میں برگشتگی کو کم کیا جائے اور تمام اراکین اسمبلی سے لوک سبھا انتخابات میں کام لے کر پارٹی کو زیادہ سے زیادہ نشستوں پر کامیابی یقینی بنائی جائے۔ اس دوران یہ بھی کہا جارہا ہے کہ بعض وزراء کے قلمدان تبدیل کئے جائیں گے، ان میں وزیر داخلہ ڈاکٹر جی پرمیشور سے ترقیات بنگلور کا قلمدان لے کر یہ کے جے جارج کے حوالے کیا جائے گا ، جبکہ ڈاکٹر پرمیشور کو وزارت مالگز اری دی جائے گی۔

فی الوقت وزیر مالگزاری آر وی دیش پانڈے کے پاس سے لئے گئے قلمدان کے عوض انہیں جارج کا قلمدان وزارت صنعت دیا جائے گا جس میں وہ برسوں کا م کا تجربہ رکھتے ہیں۔ جبکہ ریاستی وزارت میں رام لنگا ریڈی کو شامل کرکے انہیں داخلہ کا قلمدان دئے جانے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔ دوسری طرف کانگریس کے دیگر اراکین اسمبلی بھی اس بات کے لئے کوشاں ہیں کہ وزارت میں اپنی جگہ پکی کریں۔ اس کے لئے دہلی اور بنگلور میں اپنے اپنے سیاسی آقاؤں کے ذریعے پارٹی قیادت پر دباؤ ڈالا جارہاہے۔

ایک نظر اس پر بھی

مفرورمنصورخان کاایک اورویڈیو 24 گھنٹے میں ہندوستان واپسی کاوعدہ!

لوگوں کو کروڑوں روپئے کا دھوکہ دینے والی پونزی کمپنی آئی ایم اے کے بانی وایم ڈی محمد منصور خان کیا واقعی 24 گھنٹوں میں ہندوستان واپس لوٹ آئیں گے؟ جبکہ اس گھپلے کی جانچ کررہی ایس آئی ٹی نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ منورخان کا پاسپورٹ انٹرپول کے ذریعہ کالعدم قرار دیا گیا ہے -

 کرناٹک میں عوا م کے مینڈیٹ کا مذاق اڑانے والی بی جے پی، کانگریس اور جے ڈی ایس کو عوام سبق سکھائیں: الیاس محمد  تمبے

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI)کے ریاستی صدر الیاس محمد تمبے نے اپنے جاری کردہ اخباری اعلامیہ میں کرناٹک میں ہورہے شرمناک سیاست کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ جے ڈی ایس۔ کانگریس کی مخلوط حکومت اپنی حکومت بچانے کی کوشش کررہی ہے

مخلوط حکومت کوبچانے کی کوششوں کو زبردست جھٹکا؛ لاکھ منانے کے بعد بھی ایم ٹی بی ناگراج ممبئی روانہ،رام لنگاریڈی استعفے کے فیصلے پر قائم،باغی اراکین بھی بضد

کرناٹک کے سیاسی ناٹک میں ہر دن ایک نیا سین سامنے آرہا ہے گذشتہ روزجہاں اسمبلی سے استعفیٰ دینے والے وزیر ایم ٹی بی ناگراج کو منانے کی کوشش دن بھر جاری تھی اور رات میں انہوں نے سابق وزیر اعلیٰ سدارامیا کی وفاداری کی قسمیں کھائی تھیں آج صبح انہوں نے ان ساری قسموں کو فراموش کر کے ...