آڈیو منظر عام پر آنے کے بعد بھی حکومت گرانے یڈیورپا کی کوشش جاری،باغیوں کو نااہل قرار دینے سدرامیا کی شکایت کے بعد بی جے پی کے حوصلے پست

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 12th February 2019, 10:57 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،12؍جنوری(ایس او نیوز) اراکین اسمبلی کی خریدوفروخت کے متعلق یڈیورپا کے مکالمے پر مشتمل مبینہ آڈیو کے منظر عام پر آنے کے بعد بھی شاید بی جے پی کی عقل ٹھکانے نہیں لگی ہے۔

بتایاجاتاہے کہ مخلوط حکومت کو غیر مستحکم کرنے کے لئے بی جے پی کی کوششیں اب بھی جاری ہیں۔ خاص طور پرسابق وزیراعلیٰ یڈیورپا کی طرف سے ان کوششوں کو اب بھی آگے بڑھایا جارہاہے۔ چار اراکین اسمبلی کو نااہل قرار دینے اسپیکر سے سدرامیا کی شکایت سے پہلے پہلے تک بی جے پی اس بات کی تیاری میں تھی کہ آج یا کل چار برگشتہ کانگریس اراکین اسمبلی رمیش جارکی ہولی، بی ناگیندرا، امیش جادھو اور مہیش کمٹلی کو ممبئی سے بنگلور لاکر انہیں اسمبلی سے مستعفی کروادیا جائے۔ بی جے پی کے ان منصوبوں کی بھنک لگنے کے بعد سدرامیا نے فوراً اپنی شکایت اسپیکر کو سونپ دی۔ اور اس شکایت کے نتیجے میں اب قانونی نکتۂ نظر سے یہ چاروں اراکین اسمبلی اگر استعفیٰ دے بھی دیں تو اسپیکر سدرامیا کی شکایت کی جانچ پوری ہونے تک ان کا استعفیٰ قبول نہیں کریں گے۔اس وجہ سے بی جے پی کو آپریشن کمل کے لئے درکار اراکین کی تعداد بارہ سے بڑھ کر 20تک پہنچ سکتی ہے، اور اتنے اراکین اسمبلی کو بیک وقت نشانہ بنانا بی جے پی کے بس کی بات نہیں ہے۔

کانگریس کے چار برگشتہ اراکین کو بی جے پی نے پچھلے ایک ماہ سے ممبئی کی فائیو اسٹار ہوٹل میں مقیم رکھا ہے۔ صبح سے سیاسی حلقوں میں یہ قیاس کیا جارہاتھاکہ آج ممبئی سے یہ چاروں اراکین اسمبلی بنگلور کا رخ کریں گے اور اسپیکر کو اپنااستعفیٰ سونپ دیں گے تاہم اسمبلی اجلاس کے وقفے کے دوران سدرامیا نے اسپیکر سے رجوع ہوکر چاروں کو نااہل قرار دینے کی جو شکایت پیش کی ، اس کی وجہ سے بی جے پی کے ان منصوبوں پر پانی پھر گیا۔

ایک نظر اس پر بھی

ہندو لیڈر سورج نائک سونی نے اننت کمار ہیگڈے کو کہا،مودی حکومت کا داغدار وزیر؛ اُس کی مخالفت میں کام کرنے کے لئے نوجوانوں کی ٹیم تیار

ضلع شمالی کینرا میں ایک نوجوان ہندو لیڈر کے طور پر اپنی پہچان رکھنے والے کمٹہ کے سورج نائک سونی نے اخباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ’’ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں چل رہی مرکزی حکومت میں اننت کمار ہیگڈے کی حیثیت ایک داغداروزیر کی ہے۔ اور ایسا لگتا ہے کہ انہیں ...

کرناٹک میں نوٹیفکیشن کے پہلے دن 6؍امیداروں کی نامزدگیاں داخل 

ریاست میں لوک سبھا الیکشن کے پہلے مرحلہ میں 14؍سیٹوں پر 18؍اپریل کو ہونے والے الیکشن کے لئے پرچہ نامزدگی کرنے کا آغاز ہوگیا ۔ پہلے دن چار حلقوں میں6؍ امیدواروں کی جانب سے 11؍ مزدگیاں داخل کئیں۔ یہ اطلاع ریاستی الیکشن افسر سنجیو کمار نے دی۔

بنگلورو کے تینوں پارلیمانی حلقوں میں ڈی سی پیز کی زیرنگرانی سخت بندوست لائسنس یافتہ 7؍ہزار ہتھیارات تحویل میں :پولیس کمشنر ٹی۔ سنیل کمار

پولیس کمشنر ٹی۔ سنیل کمار نے بتایا کہ بنگلور سنٹرل ،بنگلور نارتھ اور بنگلور ساؤتھ لوک سبھا حلقوں میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات کے لئے ڈپٹی کمشنر آف پولیس (ڈی سی پی) سطح کے پولیس افسروں کی نگرانی میں پولیس کا سخت بندوبست کیاگیا ہے۔