اسمبلی کے لئے 59 نئے امیدواروں کا انتخاب بی جے پی کے 30، کانگریس کے 16 ، جے ڈی ایس کے 10اراکین اسمبلی منتخب

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 11:09 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو16 مئی (ایس او  نیوز) کرناٹک کے 15ویں اسمبلی کے لئے جو عام انتخابات ہوئے اس میں 59نئے اراکین اسمبلی کا انتخاب ہوا ہے ۔ پہلی مرتبہ یہ اراکین عوام کی خدمت کریں گے ۔ بی جے پی کے 104 امیدواروں میں سے 30نئے اراکین کا انتخاب ہوا ہے ۔ اسی طرح کانگریس سے 16، جے ڈی ایس سے 10 ، بی ایس پی سے ایک اور دیگر سے 2 اراکین اسمبلی پہلی مرتبہ منتخب ہوئے ہیں ۔ بتایا جارہا ہے کہ سابق وزیر اعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا کے فرزند کو بی جے پی سے ٹکٹ نہ ملنے کے سبب وزیر اعلیٰ سدارامیا کے فرزند ڈاکٹر یتیندرا سدارامیا نے ورونا میں جیت حاصل کی ہے ۔ حیرت انگیز بات یہ ہے کہ جے ڈی ایس کا مضبوط قلعہ مانے جانے والے سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڑا کے آبائی گاؤں ہاسن ضلع میں کئی سالوں کے بعد کنول کھلا ہے ۔ ہاسن سے نوجوان لیڈر پریتم گوڈا نے جیت حاصل کی ہے ۔ رکن پارلیمان کے ایچ منی اپا کی بیٹی روپا ششی دھر نے کامیابی حاصل کی ہے تو دوسری طرف سینئر آئی پی ایس افسر آئی جی پی ہیمنت نمبالکر کی بیوی انجلی نمبالکر نے خانہ پور اور سابق وزیر سرینواس پرساد کے داماد ہرش وردھن ننجن گڈھ حلقہ سے کامیابی حاصل کرکے پہلی مرتبہ ودھان سودھا میں داخل ہورہے ہیں۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کے والک آوٹ اور کافی ہنگامہ آرائی کے درمیان کرناٹکا کے وزیراعلیٰ کماراسوامی نے اپنی اکثریت ثابت کرتے ہوئے فلور ٹیسٹ میں پائی کامیابی

کرناٹک ودھان سبھا میں فلورٹیسٹ کے دوران  کافی ہنگامہ آرائی اور بی جے پی اراکین کے والک آوٹ کے درمیان  کرناٹک کے نو منتخب وزیراعلیٰ کماراسوامی نے  فلور ٹیسٹ میں اپنی اکثریت ثابت کردی۔  کانگریس۔جے ڈی ایس گٹھ بندھن کو 117 ووٹ پڑے۔اس کے ساتھ ہی اب کرناٹک میں سیاسی ڈرامے بازی ...

گوا میں اتحادی جز گووا فارورڈ پارٹی کی دھمکی

بی جے پی کی قیادت والی گووا حکومت کا ایک جز گووا فارورڈ پارٹی نے آج کہا ہے کہ اگر ریاست میں جاری موجودہ کان کنی کے بحران کا حل نہیں ہوا تو وہ اگلے لوک سبھا انتخابات میں زعفرانی پارٹی کی حمایت نہیں کرے گی۔