جسٹس کرن نے سپریم کورٹ کے حکم کی معطلی کے لئے صدر سے کی درخواست

Source: S.O. News Service | Published on 19th May 2017, 9:05 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،19مئی(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) کلکتہ ہائی کورٹ کے جج سی ایس کرن کی نمائندگی کرنے والے وکلاء نے دعوی کیا ہے کہ عدالت کی توہین کے معاملے میں سپریم کورٹ کی طرف سے جسٹس کرن کو دی گئی 6ماہ قید کی سزا کی معطلی کے لئے صدر سے درخواست کی گئی ہے۔ادھر صدر کے دفتر نے کہا ہے کہ اسے ایسے کسی میمو رنڈم کی معلومات نہیں ہے۔ وکلاء نے کل کہا تھا کہ جسٹس کرن کو چیف جسٹس جے ایس کھیہر کی صدارت والی سات رکنی بنچ کی جانب سے سنائی گئی 6 ماہ قید کی سزا کو معطل کرنے(روک لگانے) کا مطالبہ کرتے ہوئے جسٹس کرن کی جانب سے آئین کے آرٹیکل 72 کے تحت ایک میمورنڈم ای میل کے ذریعے بھیجا گیا ہے۔مذکورہ میمورنڈم جسٹس کرن کے وکیل میتھیوز جے نیڈمپارا اور اے سی فلپ نے تیار کیا تھا۔ اس میں نو مئی کو سنائے گئے فیصلے سے منسلک واقعات کا حوالہ ہے۔وکلاء نے سابق میں یہ دعوی کیا تھا کہ جسٹس کرن نے انہیں سنائی گئی قید کی سزا کے خلاف صدر، وزیر اعظم اور دیگر کو خط بھیجے تھے۔جسٹس کرن نے عدالت میں ایک عرضی لگا کر بھی نو مئی کے حکم کو واپس لینے کی مانگ کی تھی لیکن چیف جسٹس نے اس پر فوری سماعت سے انکار کر دیا۔
 

ایک نظر اس پر بھی

کشمیر میں موبائل انٹرنیٹ سروس معطل

ترال میں سیکورٹی فورسز کے ساتھ تصادم میں سبزار احمد بھٹ کے مارے جانے کے پیش نظر احتیاطی طور پر آج وادی کشمیرمیں موبائل انٹرنیٹ سروس معطل کر دی گئی۔

یوگی حکومت لاء اینڈرآرڈرلاگو کرنے میں بری طرح ناکام،ہرطرف خوف کا ماحول، دلتوں کودبایا جارہا ہے؛ کانگریس نائب صدر کا الزام

کانگریس نائب صدر راہل گاندھی ہفتہ کو نسلی تشدد سے متاثر سہارنپور کے متاثر خاندانوں سے ملنے پہنچے۔یہاں انہوں نے کچھ متاثرہ خاندانوں سے ملاقات کی۔

پانڈیچری کے وزیراعلیٰ کا مویشیوں کی فروخت پرپابندی سے متعلق نوٹیفیکشن واپس لینے کامطالبہ؛ حکومت کوکھانے پینے کی پسندپربندشیں مسلط کرنے کاکوئی حق نہیں

پانڈیچیری کے وزیراعلیٰ وی نارائن سامی نے ذبح کے لئے مویشیوں کی فروخت پرپابندی لگانے کے نوٹیفکیشن جاری کرنے پرمرکزی حکومت کوآڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ حکومت کو لوگوں کے کھانے پینے کی پسندپربندشیں مسلط کرنے کاکوئی حق نہیں ہے۔